محکمہ موسمیات کی پیش گوئی 19سے 26فروری تک ملک بھر میں بارشوں کی نیا سلسلہ شروع ہونے والا ہے     No IMG     وزیراعظم عمران خان کا سعودی عرب میں مقیم پاکستانیوں کیلئے بڑا مطالبہ     No IMG     حکمرانوں کے تمام حلقے کشمیر کے معاملے پر خاموش ہیں, مولانا فضل الرحمان     No IMG     پاکستان, میں 20ارب ڈالرز کی سرمایہ کاری کا پہلا مرحلہ مکمل ہوگیا: سعودی ولی عہد     No IMG     لاہور قلندرز 78 رنز پر ڈھیر     No IMG     ابو ظہبی میں ہتھیاروں کے بین الاقوامی میلے کا آغاز     No IMG     برطانوی ہوائی کمپنی (Flybmi) دیوالیہ، سینکڑوں مسافروں کو پریشانی     No IMG     یورپ میں قانونی طریقے سے داخل ہونے والے افراد کی طرف سے سیاسی پناہ کی درخواستیں دیے جانے کا رجحان بڑھ رہا ہے     No IMG     ٹرین کے ٹائلٹ میں پستول، سینکڑوں مسافر اتار لیے گئے     No IMG     یورپی یونین ,کے پاسپورٹوں کا کاروبار ’ایک خطرناک پیش رفت     No IMG     بھارت نے کشمیری حریت رہنماؤں کو دی گئی سیکیورٹی اورتمام سرکاری سہولتیں واپس لے لی     No IMG     پی ایس ایل کے چھٹے میچ میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے اسلام آباد یونائیٹڈ کو 7وکٹوں سے شکست دےدی     No IMG     وزیرخارجہ کا ایرانی ہم منصب کو ٹیلیفون     No IMG     سعودی ولی عہد کا پاکستان میں تاریخی اور پُرتپاک استقبال     No IMG     پاکستان ,کو زاہدان کے دہشتگردانہ حملے کا جواب دینا ہوگا، ایران     No IMG    

یورپین یونین کا سربراہ اجلاس
تاریخ :   18-09-2018

سالزبرگ ( ورلڈ فاسٹ نیوزفاریو ) مائیگریشن کے حوالے سے یورپین یونین کا سربراہ اجلاس بدھ کے روز آسٹریا کے شہر سالزبرگ میں منعقد ہو رہا ہے۔ تاہم، اس بارے میں یورپین یونین کے رکن ممالک کے درمیان گہرے اختلافات پیدا ہو گئے ہیں۔برسلز تمام سرحدوں پر یورپین یونین کے حفاظتی گارڈ تعینات

کرنے کا خواہشمند ہے، جبکہ ہنگری جیسے چند کلیدی رکن ممالک اپنی سرحدوں پر خود اپنی پولیس تعینات کرنے پر زور دیتے ہیں۔افریقہ کے 60 امیگرنٹس کو بحیرہ ٴروم میں اُن کی کشتی ڈوب جانے سے پہلے ایک ریسکیو آپریشن کے دوران بچا لیا گیا۔بحیرہ ٴروم میں اس سال اس طرح کے کئی واقعات ہو چکے ہیں۔ یورپین یونین کے رکن ممالک میں غیر قانونی طور پر داخل ہونے والے امیگرنٹس کی نصف تعداد اسی راستے کو استعمال کرتی ہے۔ ایسے زیادہ تر تارکین وطن کینیا، مالی اور مراکش سے تعلق رکھتے ہیں۔اگرچہ غیر قانونی تارکین وطن کی یورپ آمد میں ہر سال 40 فیصد کمی دیکھنے میں آئی ہے، امیگریشن یورپین یونین کی پالیسی کے حوالے سے موضوع بحث رہا ہے۔سربراہ اجلاس کے میزبان ملک آسٹریا کے چانسلر سیباشین کرز نے پیر کے روز یورپین یونین کے تمام رکن ممالک پر زور دیا ہے کہ وہ اپنی سرحدوں پر یورپین یونین کی بارڈر ایجنسی کا کردار بڑھائیں۔ اُن کا کہنا ہے کہ بیرونی سرحدوں کو محفوظ بنانے کیلئے یورپی یونین کے کلیدی رکن ممالک کو ہماری مدد اور حمایت کی ضرورت ہے۔ تاہم، رکن ممالک کیلئے بھی لازمی ہے کہ وہ یونین کی حمایت کو قبول کریں۔ماہرین آسٹرین چانسلر کے اس بیان کو اٹلی اور ہنگری جیسے یورپین یونین کے کلیدی رکن ممالک کیلئے ایک انتباہ قرار دیتے ہیں جو مائیگریشن کے بحران کیلئے یورپین یونین کو ذمہ دار ٹھہراتے ہیں۔ہنگری کے وزیر اعظم وکٹر اوربن نے پیر کے روز پارلیمانی ارکان سے خطاب کرتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ ہنگری برسلز کے سربراہ اجلاس میں شریک تمام ممالک کے مقابلے میں اپنی سرحدوں کی حفاظت بہتر انداز میں کر سکتا ہے۔ لہذا، ہنگری اپنی سرحدوں کی حفاظت خود کرنے کے حق سے دستبردار نہیں ہو گا۔’اوپن یورپ‘ نامی پالیسی تجزیاتی گروپ سے وابستہ تجزیہ کار لیو پولڈ ٹروگوٹ کہتے ہیں کہ یورپین یونین کے سربراہ اجلاس کے دوران رکن ممالک کے دو گروپوں آمنے سامنے ہوں گے۔ بقول اُن کے، ان میں سے ایک ترقی پسند ممالک کا گروپ ہے جو یورپ کو کھلا اور آزاد رکھتے ہوئے سیاسی پناہ کے خواہشمند تارکین وکن کی مدد کرنا چاہتے ہیں جبکہ دوسرے گروپ میں سخت مؤقف رکھنے والے وہ ملک شامل ہیں جو یورپ کو تارکین وطن کیلئے مکمل طور پر بند کرتے ہوئے اسے ایک قلعے کی شکل دینا چاہتے ہیں۔برطانیہ کے اصرار پر اس سربراہ اجلاس میں یورپین یونین سے برطانیہ کی علیحدگی پر بھی بحث ہو گی۔

Print Friendly, PDF & Email
وزیراعلیٰ,بلوچستان کا مہاجرین کی شہریت بارے وزیراعظم کے بیان پر تحفظات کا اظہار
وزیراعظم عمران خان کا سعودی عرب میں شاندار استقبال، روضہِ رسولﷺ پر حاضری
Translate News »