شمالی کوریا کا ایٹمی طاقت کے مظاہرے کا عزم     No IMG     عراق کے دارالحکومت بغداد میں خودکش حملے کے نتیجے میں 19 افراد جاں بحق     No IMG     جرمنی کے وزير خارجہ نے اعلان کیا ہے کہ یورپی یونین کے رکن ممالک مشترکہ ایٹمی معاہدے کی حمایت پر متحد اور متفق ہیں۔     No IMG     ایران کو شام میں فوجی بیس بنانے کی اجازت نہیں دیں گے,اسرائیل کے وزير اعظم     No IMG     مقبوضہ کشمیر، یاسین ملک کی مسلسل غیر قانونی نظر بندی کی سخت مذمت کرتے ہوئے عالمی ریڈ کراس کمیٹی سے اپیل     No IMG     سابق وزیراعظم نواز شریف نے چئیرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال کو توہین آمیز پریس ریلیز جاری کرنے پر قانونی نوٹس بھجوا دیا۔     No IMG     قونصل جنرل عائشہ فاروقی نے جیل میں ڈاکٹرعافیہ صدیقی سےملاقات     No IMG     پی ٹی آئی چئیرمین نے بڑا فیصلہ کر لیا ، اب پی ٹی آئی میں شمولت اختیار کرنا آسان نہ ہو گا     No IMG     پاکستان میں تھری اور فور جی صارفین کی تعداد 5 کروڑ46 لاکھ ہو گئی،     No IMG     سابق وزیراعظم نواز شریف نے احتساب عدالت میں اپنے نکالنے کی 4 بڑی وجوہات بتادیں     No IMG     حافظ آباد میں کپڑے کی فیکٹری میں آگ لگ گئی     No IMG     پی ٹی آئی کے اعلیٰ عہدے داروں کی پریم کہانی شروع ہو گئی     No IMG     امريکا نے 5 ايرانی اہلکاروں پر پابندی عائد کر دی     No IMG     موجودہ حکومت نے دہشت گردی ، عسکریت پسندی اور توانائی بحران کو حل کیا ، ملکی معیشت کو مستحکم کردیا, لیفٹیننٹ جنرل (ر) عبدالقیوم     No IMG     پی ٹی آئی گزشتہ 5 سالوں میں خیبرپختونخوا میں ڈلیور کرنے میں بری طرح ناکام ہوئی، مائزہ حمید     No IMG    

ہندوستان میں بے روزگاری کی شرح میں خطرناک حد تک اضافہ
تاریخ :   15-02-2018

ہندوستان(ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو) میں بے روزگاری کی شرح میں خطرناک حد تک اضافہ ہورہا ہے اور معمولی نوکریوں کیلئے اعلیٰ تعلیم یافتہ امیدوار سامنے آرہے ہیں۔ریاست تامل ناڈو میںدرجہ چہارم کی پوسٹوںکے لئے992پی ایچ ڈی ،23ہزار ایم فل اور ڈھائی لاکھ ماسٹر ڈگری ہولڈرزنے درخواستیں دیں جبکہ پولیس کانسٹیبل کی ا?سامیوں کے لئے چار ہزار گریجویٹس اور 500 پوسٹ گریجویٹ نوجوانوں نے درخواستیں دی تھیں۔
ریاست مدھیہ پردیش کی ایک عدالت میں چپڑاسی کی پوسٹ کے لیے انجینئرز ، ایم بی اے اور ڈاکٹر یٹ کی ڈگری رکھنے والوں نے درخواستیں دیں۔ اتر پردیش میں چپڑاسی کی پوسٹ کے لیے 23 لاکھ سے زائد درخواستیں موصول ہوئیں تھیں جن میں 255 پی ایچ ڈی تھے۔ٹائمز آف انڈیا نے اپنے تجزیے میں لکھا کہ آئندہ جب کسی سرکاری دفتر میں جانے کا اتفاق ہوتو اس میں حیران ہونے کی ضرورت نہیں کہ وہاں کا اسٹاف آپ کے ساتھ سائنسی نظریات یا پلوں کی تعمیر پر بحث کرتا نظر آئے۔
بھارت میں معمولی سی سرکاری ملازمت کے لئے بھی اعلیٰ تعلیم یافتہ نوجوان قطار میں نظر آتے ہیں جس کی مثال تامل ناڈو میں درجہ چہارم کی آسامیوں میں سامنے آئی جب کلرک سطح کی مختلف پوسٹیں جن میں ٹائپسٹ،گاﺅں کے انتظامی افسران اور اسٹینوگرافر شامل ہیں،ان کے لئے 20لاکھ درخواستیں موصول ہوئیں جن میں992پی ایچ ڈی ہولڈرز،23ہزار ایم فل ، ڈھائی لاکھ ماسٹرز یا پوسٹ گریجویٹ اورآٹھ لاکھ گریجوایٹ امیدوار تھے۔
تامل ناڈو پبلک سروس کمیشن کی طرف سے ساڑھے نو ہزار آسامیوں کیلئے 11 فروری کو امتحان کا انعقاد کیا گیا۔پبلک سروس کمیشن کا کہنا ہے کہ19لاکھ83ہزار درخواستیں آئیںجن میں سے15لاکھ نے امتحان دیا جبکہ ان آسامیوں کے لئے مطلوبہ تعلیمی شرط صرف میٹرک تھی۔جن آسامیوں کے لئے امتحان منعقد کیا گیا، ان میں494دیہی منتظم افسران،4349جونیئر اسسٹنٹ اور بل کولیکٹرز ، 230? فیلڈسرویرز اور ڈرافٹس مین، 3463 ٹائپسٹ اور815اسٹینوگرافرز ہیں، یہ سب نوکریاں درجہ چہارم کی ہیں جن کی تنخواہ5ہزار روپے سے شروع ہوتی ہے۔
گزشتہ ماہ ریاست مدھیہ پردیش کی ایک ضلعی عدالت میں چپڑاسی کی پوسٹوں کے لیے جنہوں نے درخواستیں دیں ، ان میں انجینئرز ، ایم بی اے اور ڈاکٹر یٹ کی ڈگری رکھنے والے شامل تھے۔ضلع گوالیار کی عدالت میں چپڑاسی کی 57 نوکریوں کے لیے 60 ہزار سے زائد درخواستیں موصول ہوئیں جبکہ اس پوسٹ کے لیے تعلیمی شرط محض آٹھویں پاس تھی اور اس کی تنخواہ ماہانہ ساڑھے سات ہزار روپے ہے۔
ڈیڑھ سال قبل ریاست مہاراشٹر میں قلی کی پانچ پوسٹوں کے لیے ڈھائی ہزار درخواستیں موصول ہوئیں جن میں ایک ہزار گریجویٹس اور دو سو سے زائد پوسٹ گریجویٹس شامل تھے حالانکہ اس کے لیے صرف چوتھا درجہ پاس ہونا ضروری تھا۔اتر پردیش میں چپڑاسی کی 368 پوسٹوں کے لیے 23 لاکھ سے زائد درخواستیں موصول ہوئیں تھیں جن میں 255 پی ایچ ڈی تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*