محکمہ موسمیات کی پیش گوئی 19سے 26فروری تک ملک بھر میں بارشوں کی نیا سلسلہ شروع ہونے والا ہے     No IMG     وزیراعظم عمران خان کا سعودی عرب میں مقیم پاکستانیوں کیلئے بڑا مطالبہ     No IMG     حکمرانوں کے تمام حلقے کشمیر کے معاملے پر خاموش ہیں, مولانا فضل الرحمان     No IMG     پاکستان, میں 20ارب ڈالرز کی سرمایہ کاری کا پہلا مرحلہ مکمل ہوگیا: سعودی ولی عہد     No IMG     لاہور قلندرز 78 رنز پر ڈھیر     No IMG     ابو ظہبی میں ہتھیاروں کے بین الاقوامی میلے کا آغاز     No IMG     برطانوی ہوائی کمپنی (Flybmi) دیوالیہ، سینکڑوں مسافروں کو پریشانی     No IMG     یورپ میں قانونی طریقے سے داخل ہونے والے افراد کی طرف سے سیاسی پناہ کی درخواستیں دیے جانے کا رجحان بڑھ رہا ہے     No IMG     ٹرین کے ٹائلٹ میں پستول، سینکڑوں مسافر اتار لیے گئے     No IMG     یورپی یونین ,کے پاسپورٹوں کا کاروبار ’ایک خطرناک پیش رفت     No IMG     بھارت نے کشمیری حریت رہنماؤں کو دی گئی سیکیورٹی اورتمام سرکاری سہولتیں واپس لے لی     No IMG     پی ایس ایل کے چھٹے میچ میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے اسلام آباد یونائیٹڈ کو 7وکٹوں سے شکست دےدی     No IMG     وزیرخارجہ کا ایرانی ہم منصب کو ٹیلیفون     No IMG     سعودی ولی عہد کا پاکستان میں تاریخی اور پُرتپاک استقبال     No IMG     پاکستان ,کو زاہدان کے دہشتگردانہ حملے کا جواب دینا ہوگا، ایران     No IMG    

کسی سے این آر اوکے لیے رابطہ نہیں کیا اور جس نے این آر او مانگا اس کا نام بتایا جائے,سابق وزیراعظم . نواز شریف
تاریخ :   29-10-2018

اسلام آباد( ورلڈ فاسٹ نیوزفاریو ) سابق وزیراعظم نوازشریف نے کہا کہ ہم میں سے کسی نے این آر اوکے لیے رابطہ نہیں کیا اور جس نے این آر او مانگا اس کا نام بتایا جائے. اسلام آباد میں احتساب عدالت کے باہر صحافیوں سے بات کرتے ہوئے نواز شریف نے کہا کہ سب جانتے ہیں میں کس کیفیت سے گزررہا

ہوں، ہم ابھی تک خود کوسیاست کی جانب نہیں لاپائے ہیں، ہم میں سے کسی نے این آراو کے لیے رابطہ نہیں کیا، ہمیں نام بتایا جائے جس نے این آراو مانگا ہو.
نواز شریف نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان کا بہت احترام کرتا ہوں ، گزشتہ روز ان سے ملاقات میں جو بات ہوئی وہ فی الحال نہیں بتائی جاسکتی، شہباز شریف سے ملنا اور ان سے مشاورت کرنا چاہتا ہوں لیکن عوام ملک میں حالات دیکھ رہے ہیں.سابق وزیر اعظم نے کہا کہ شہبازشریف نے ملک کی ترقی کے لیے دن رات دیکھے بغیرکام کیا، جس کا آج جو نتیجہ مل رہا ہے وہ سب کے سامنے ہے، شہباز شریف سے متعلق آشیانہ کیس سے کچھ نہ ملا تو اب دوسرے کیس بنائے جارہے ہیں جوایک مذاق ہے جب کہ ان پرایک روپے کی چوری کا بھی الزام نہیں ہے.
قبل ازیں سابق وزیر اعظم نواز شریف کے خلاف فلیگ شپ ریفرنس کی سماعت جاری ہے اور نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث استغاثہ کے گواہ واجد ضیا پر جرح کر رہے ہیں. تفصیلات کے مطابق احتساب عدالت کے جج محمد ارشد ملک نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کے خلاف فلیگ شپ ریفرنس کی سماعت کی. نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) کے سربراہ اور استغاثہ کے گواہ واجد ضیا پر جرح کر رہے ہیں.
سابق وزیر اعظم نواز شریف بھی کمرہ عدالت میں موجود ہیں. سماعت میں متحدہ عرب امارات حکام کو لکھا گیا ایم ایل اے عدالتی ریکارڈ کا حصہ بنا دیا گیا. استغاثہ کے گواہ واجد ضیا نے کہا کہ ایم ایل اے میں یو اے ای حکام سے قانونی سوالات پوچھے تھے‘وکیل نے دریافت کیا کہ کیا یہ درست ہے پہلا سوال کوئی قانونی نہیں بلکہ حقائق سے متعلق تھا. واجد ضیا نے کہا کہ جی یہ درست ہے پہلے سوال میں صرف حقائق پوچھے تھے‘دوسرا سوال بھی حقائق سے متعلق تھا‘ قانونی سوالات باہمی قانونی تعاون کے تحت خط و کتابت کے تناظر میں کہے.
خواجہ حارث نے دریافت کیا کہ نیب قوانین کی کس شق کے تحت آپ نے یہ ایم ایل اے بھیجا؟ جس پر نیب پراسیکیوٹر نے اعتراض کرتے ہوئے کہا کہ ایسے سوالات گواہ سے نہیں پوچھے جا سکتے. واجد ضیا نے بتایا کہ حکومت نے جے آئی ٹی کو ایم ایل اے بھیجنے کی اتھارٹی دے رکھی تھی‘ وزارت قانون و انصاف نے ایم ایل اے لکھنے کا اختیار دیا تھا اور سیکشن 21 کے تحت ایم ایل اے لکھنے کا اختیار دیا گیا.
جج نے وکیل سے کہا کہ خواجہ صاحب آپ صرف حقائق سے متعلق سوال پوچھیں تو بہتر ہے‘ کس قانون میں کیا ہے یہ سوالات گواہ سے کیا پوچھنے ہیں. واجد ضیا نے کہا کہ میں نے پہلے سیکشن 21 پڑھا تھا‘ یہ وکیلوں والے سوالات ہیں. نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ قانونی نکات سے متعلق سوالات گواہ سے نہیں پوچھے جا سکتے‘ واجد ضیا ہمارے گواہ ہیں کوئی قانونی ماہر نہیں.
عدالت نے نیب پراسیکیوٹر کا اعتراض منظور کرتے ہوئے خواجہ حارث کو گواہ سے صرف متعلقہ سوالات پوچھنے کی ہدایت کردی. دوسری جانب قومی احتساب بیورو(نیب) نے سابق وزیراعظم نوازشریف ، ان کی صاحبزادی مریم نواز اور داماد کیپٹن (ر) صفدر کے نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) سے نکالنے کی مخالفت کرتے ہوئے موقف اختیارکیا ہے کہ ان کے خلاف ابھی احتساب عدالت میں مقدمات ہیں.
سرکاری ذرائع کے مطابق نیب نے نوازشریف، مریم نواز اورکیپٹن (ر) صفدر کے نام ای سی ایل سے نام نکالنے سے متعلق وزارت داخلہ کواپنے موقف سے آگاہ کردیا ہے. مذکورہ تینوں افراد نے اپنے نام ای سی ایل سے نکالنے کی درخواست دی تھی جس پر وزارت داخلہ نے نیب کوخط لکھ کر رائے طلب کی تھی کیونکہ وزارت بعض مقدمات میں خود فریق ہے. ذرائع کے مطابق نیب وزارت داخلہ کے خط کاجواب دیتے ہوئے کہاکہ 3سزایافتہ افراد کو ابھی احتساب عدالتوں میںٹرائل کا سامنا کرنیکی ضرورت ہے، نام ای سی ایل میں نکالنے سے ان کے ٹرائل میں رکاوٹیں پیدا ہوں گی کیونکہ اگر ملزمان کوباہرجانے کی اجازت دی گئی تو وہ بیرون ملک اپنے قیام کوطوالت دے سکتے ہیں یا پھرکسی ملک میں سیاسی پناہ لے سکتے ہیں.

Print Friendly, PDF & Email
بھارتی حکومت پر رافیل جنگی طیارہ سودے میں بڑے پیمانے پر کرپشن کا الزام
بھارتی ریاست چھتیس گڑھ میں ماؤ نواز باغیوں کے حملے میں 4 اہلکار ہلاک
Translate News »