آرمی چیف سے بحرین نیشنل گارڈ کے کمانڈر کی ملاقات     No IMG     اسرائیل کی جیل میں آگ بھڑک اٹھی، کئی کمرے جھلس گئے     No IMG     اسرائیلی فوج کی گھر گھر تلاشی15 فلسطینی شہری گرفتار     No IMG     وزیر ریلوے شیخ رشید کی نا اہلی کے لیے الیکشن کمیشن میں درخواست دائر     No IMG     فضائی حدود کی بندش، ائیرانڈیا کو کروڑوں کا نقصان     No IMG     دہشت گردی کا کوئی دین اور نسل نہیں ہوتی ,سعودی وزیر خارجہ     No IMG     ایران، عراق اور شامی افواج کے خون نے تینوں ممالک کے درمیان تعلقات کو مزید مضبوط بنایا, بشار الاسد     No IMG     آصف زرداری اور فریال تالپور کی 10 دن کے لیے حفاظتی ضمانت منظور     No IMG     سابق وزیراعلی شہباز شریف کے خلاف ایک اور انکوائری شروع     No IMG     کینیڈین وزیر اعظم جسٹس ٹروڈو نے نیوزی لینڈ میں دہشت گردی کے واقعہ کی مذمت     No IMG     روسی صدر پوتن نے کہا ہے کہ وہ روس میں کرائسٹ چرچ جیسا دہشت گرد حملہ نہیں ہونے دیں گے     No IMG     برطانوی حکام نے نیوزی لینڈ کی مسجدوں میں ہوئی دہشت گردی کی طرز پر برطانیہ میں بھی واقعات پیش آنے کا خدشہ     No IMG     نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ کے پہلے اجلاس کا آغاز تلاوت کلام پاک سے ہوا     No IMG     نیوزی لینڈ مساجد پر دہشت گرد حملے سے متعلق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اپنے بیان پر میڈیا کی تنقید سے برہم     No IMG     نیوزی لینڈ کی قومی فٹسل ٹیم کے گول کیپر عطا الیان بھی کرائسٹ چرچ واقعے میں شہید     No IMG    

ٹلرسن اچانک دورے پر افغانستان میں
تاریخ :   23-10-2017

امریکی  (ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو)  وزیر خارجہ ریکس ٹِلرسن غیر اعلانیہ دورے پر آج پیر کے روز قطری دارالحکومت دوحہ سے کابل پہنچ گئے۔ یہ اُن کے موجودہ دورے کی تیسری منزل ہے۔ وہ کل چوبیس اکتوبر کو پاکستانی دارالحکومت پہنچیں گے۔

کابل میں امریکی سفارت خانے کی جانب سے بھی بتایا گیا کہ وزیر خارجہ بگرام ایئر فیلڈ پر خیریت سے پہنچ گئے ہیں۔ کابل کے نواح میں واقع بگرام ایئر فیلڈ پر اُن کے ہمراہ میڈیا کا ایک مختصر وفد بھی پہنچا۔ امریکی وزیر خارجہ کے دورے کو مخفی اس لیے بھی رکھا گیا کیونکہ وزیر دفاع جیمز میٹس کی آمد پر طالبان کی جانب سے کابل ایئر پورٹ پر ایک راکٹ داغا گیا تھا۔

بگرام کے امریکی فوجی مرکز میں ہی انہوں نے افغان صدر اشرف غنی اور چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ کے علاوہ دوسرے اعلیٰ حکومتی اہلکاروں کے ساتھ ملاقاتیں بھی کیں۔ وہ تقریباً تین گھنٹے تک افغان قیادت کے ساتھ ملاقاتوں میں مصروف رہے۔ ان ملاقاتوں میں توجہ صدر ٹرمپ کی نئی جنوبی ایشیائی پالیسی پر مرکوز رہی۔

ٹِلرسن نے کابل حکومت کے ساتھ ہونے والی اعلیٰ سطحی ملاقاتوں میں افغانستان میں استحکام پیدا کرنے کے امریکی عزم کا اعادہ بھی کیا۔ ان ملاقاتوں کے بعد انہوں نے صدر اشرف غنی اور چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں بھی شرکت کی۔

بگرام ایئر فیلڈ پر مشترکہ پریس کانفرنس میں امریکی وزیر خارجہ نے بتایا کہ وہ کل منگل چوبیس اکتوبر کو پاکستان پہنچ رہے ہیں اور وہاں بھی وہ ٹرمپ انتظامیہ کے موقف کا بھرپور انداز میں اظہار کریں گے۔ ٹِلرسن نے کہا کہ پاکستان سے درخواست کی گئی ہے کہ وہ طالبان اور دوسری انتہا پسند تنظیموں کو حاصل حمایت کو کنٹرول کرتے ہوئے تادیبی اقدامات کرے۔

پریس کانفرنس میں امریکی وزیر خارجہ نے یہ بھی بتایا کہ وہ پاکستان کا دورہ مکمل کرتے ہوئے بھارت جائیں گے۔ ٹِلرسن کے مطابق وہ بھارت پہنچ کر نئی دہلی حکومت سے درخواست کریں گے کہ افغانستان کے لیے اقتصادی اور ترقیاتی امداد کو مزید وسعت دی جائے۔

اس پریس کانفرنس میں انہوں نے واضح کیا کہ پاکستان سے متعلق امریکی پالیسی کا انحصار اس بات پر ہے کہ وہ عسکری تنظیموں کے خلاف کیا اقدامات کرتا ہے اور افغانستان میں مصالحتی عمل کو تقویت دینے والے مواقع کیسے پیدا کرتا ہے۔ انہوں نے یہ بھی واضح کیا کہ یہ نئی پالیسی ایک مستحکم پاکستان سے بھی نتھی کی گئی ہے۔

یہ امر اہم ہے کہ امریکی صدر ٹرمپ نے اپنی نئی افغان پالیسی میں اسلام آباد حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ طالبان اور دیگر انتہا پسند گروپوں کے ٹھکانوں کو ختم کرے اور بصورت دیگر نتائج بھگتنے کے لیے تیار رہے۔

Print Friendly, PDF & Email
اسرائیل کو تین آبدوزوں کی فروخت، جرمن
شارجہ , پاکستان کے ہاتھوں سری لنکا کا وائٹ واش مکمل

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »