چیف جسٹس کے اعزاز میں فُل کورٹ ریفرنس کاایک جج نے بائیکاٹ کردیا، جانتے ہیں وہ معزز جج کون ہیں ؟     No IMG     الیکشن کمیشن آف پاکستان نے گوشوارے جمع نہ کروانے پر 322 ارکان کی رکنیت معطل     No IMG     حکومت کا غیر قانونی موبائل فونز ضبط کرنے کا فیصلہ     No IMG     امریکہ نے پریس ٹی وی کی اینکر پرسن کو بغیر کسی جرم کے گرفتار کرلیا     No IMG     سندھ میں آئینی تبدیلی لائیں گے، فواد چودھری     No IMG     کسی کی خواہش پرسابق آصف زرداری کو گرفتار نہیں کرسکتے، نیب     No IMG     نئے پاکستان میں تبدیلی آگئی تبدیلی آگئی، اب لاہور ایئرپورٹ پر شراب دستیاب ہوگی     No IMG     برطانوی وزیراعظم ٹریزامےکیخلاف تحریکِ عدم اعتماد ناکام ہوگئی     No IMG     وزیراعظم کی رہائش گاہ پر وفاقی کابینہ کا ہنگامی اجلاس طلب     No IMG     گاڑیوں کی درآمد پر ٹیکس اب غیر ملکی کرنسی میں ادا کرنا ہوگا, وزیر خزانہ     No IMG     تائيوان, کے معاملے ميں مداخلت برداشت نہيں کی جائے گی, چين     No IMG     امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ترکی کی معیشت کو تباہ کرنے کے بیان سے یوٹرن لیتے ہوئے کہا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان معاشی ترقی کے وسیع مواقع ہی     No IMG     وزیراعظم سے سابق امریکی سفیر کیمرون منٹر کی ملاقات     No IMG     آپ لوگ کام نہیں کر سکتے چیف جسٹس نے اسد عمرکو دو ٹوک الفاظ میں کیا کہہ ڈالا     No IMG     شادی والے گھر میں آگ لگنے سے دلہن سمیت 4 خواتین جاں بحق     No IMG    

وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے ٹیکس ادا نہ کرنے والوں کے لیے ایمنسٹی اسکیم کا اعلان کر دیا
تاریخ :   05-04-2018

اسلام آباد:  ( ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو )وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے ٹیکس ادا نہ کرنے والوں کے لیے ایمنسٹی اسکیم کا اعلان کر دیا۔ اسلام آباد میں نیوز کانفرنس کرتے ہوئے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ ملک بھر میں صرف 7 لاکھ لوگ ٹیکس ادا کرتے ہیں، ملک میں ٹیکس نیٹ ورک کو بڑھانے لیے ڈرافٹ تیار کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے اور شہریوں کا شناختی کارڈ نمبر ہی ان انکم ٹیکس نمبر ہو گا۔ وزیراعظم نے 5 نکاتی ٹیکس اصلاحات کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ جن لوگوں کے اثاثے بیرون ملک ہیں وہ دو فیصد فیصد جرمانہ اد کر کے ٹیکس ایمنسٹی سے استفادہ حاصل کر سکتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ جن لوگوں کے اثاثے بیرون ملک ہیں وہ دو فیصد جرمانہ ادا کر کے ایمنسٹی اسکیم سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں اور ڈالر اکاؤنٹ پر 5 فیصد ٹیکس ادا کر کے اسے رکھا جا سکتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ انکم ٹیکس کی شرح کو کم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے، ٹیکس ایمنسٹی کا مقصد زیادہ سے زیادہ لوگوں کو ٹیکس نیٹ میں لانا ہے۔ وزیراعظم نے بتایا کہ ایک لاکھ ماہانہ آمدنی والوں پر کوئی ٹیکس نہیں ہو گا، 12 لاکھ سالانہ آمدنی والوں کو ٹیکس سے استثنیٰ حاصل ہو گا جب کہ 12 سے 24 لاکھ روپے سالانہ آمدن والوں پر 5 فیصد ٹیکس عائد ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ 24 سے 48 لاکھ سالانہ آمدن والوں کو 10 فیصد ٹیکس ادا کرنا ہو گا جب کہ 48 لاکھ سے زائد سالانہ آمدن پر 15 فیصد ٹیکس عائد ہو گا۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ ایمنسٹی اسکیم کسی ایک پاکستانی کے لیے نہیں بلکہ ہر اس شخص کے لیے ہے جو پاکستان کا شناختی کارڈ رکھتا ہے

تاہم ٹیکس ایمنسٹی اسکیم سے سیاسی لوگ اور ان کے زیر کفالت افراد فائدہ نہیں اٹھا سکیں گے۔ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ آف شور کمپنی اثاثہ ہے اسے بھی ظاہر کرنا چاہیے۔ انہوں نے بتایا کہ ایمنسٹی اسکیم کو صدارتی حکم نامے کے ذریعے متعارف کرایا جا رہا ہے اور آج سے لیکر 30 جون تک اس اسکیم سے فائدہ اٹھایا جا سکتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ جو لوگ ٹیکس ادا نہیں کریں گے ان کے خلاف ڈیٹا بیس استعمال کیا جائے گا اور ٹیکس نادہندہان کے خلاف کارروائی بھی ہو گی۔ جیو نیوز کے پروگرام جرگہ کے اینکر پرسن سلیم صافی کی جانب سے دورہ امریکا میں جامہ تلاشی سے متعلق سوال پر وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے وضاحت کی کہ امریکی نائب صدر سے ملاقات ایک نجی دورہ تھا جس میں پاکستان کا مؤقف کھل کر بیان کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ گزشتہ 40 سال سے امریکا کا سفر کر رہا ہوں اور میں نے سابق امریکی صدر بل کلنٹن کو بھی سیکیورٹی چیکنگ سے گزرتے دیکھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں وزیراعظم ہوں یا نہ ہوں لیکن ہر شخص کو سیکیورٹی سے گزرنا چاہیے، اس سے میری عزت پر کوئی حرف نہیں آیا بلکہ دوسرے ممالک کے قوانین کا احترام کریں گے تو آپ کی عزت میں اضافہ ہو گا۔ سلیم صافی کے دوسرے سوال کے جواب میں وزیراعظم کا کہنا تھا کہ اس اسکیم کا اثر بجٹ پر بھی پڑے گا اور اگر ہمیں یہ اسکیم متعارف کرانے میں تاخیر ہوئی ہے تو اس پر معذرت خواہ ہوں۔ چیف جسٹس سے ملاقات کے حوالے سے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ چیف جسٹس آف پاکستان سے ملکی معاملات پر مشاورت کے لیے ٹائم مانگا تھا۔ انہوں نے مزید بتایا کہ چیف جسٹس سے ملاقات میں کوئی ذاتی بات نہیں کی بلکہ صرف ملکی معاملات پر بات کی۔ سینیٹ انتخابات کے حوالے سے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ میرے پاس اطلاعات ہیں کہ سینیٹ انتخابات میں پیسہ چلا اور چیئرمین سینیٹ کے الیکشن میں بھی پیسہ چلا، جس سے ایوان کا وقار مجروح ہوا۔ وزیراعظم نے کہا کہ کسی کو اچھا لگے یا برا لگے میں اس برائی کے خلاف بات کروں گا اور اس مسئلے کا سب سے آسان حل یہ ہے کہ نومنتخب سینیٹرز بیان حلفی دے دیں کہ انہوں نے ایم پی ایز کو پیسہ نہیں دیا۔ ان کا کہنا تھا کہ چیئرمین سینیٹ اور عمران خان بھی بیان حلفی دیدیں کہ انہیں نہیں معلوم کہ سینیٹ الیکشن میں پیسے کا استعمال ہوا تو ہم یقین کر لیں گے۔ چیئرمین سینیٹ کی جانب سے ایوان میں طلب کرنے کے حوالے سے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ چیئرمین سینیٹ کو مجھے بلانے کا اختیار حاصل نہیں ہے۔ نواز شریف سے متعلق پوچھے گئے سوال پر وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ میں نے چار مرتبہ انہیں ووٹ دیا ہے اور وہ میرے سیاسی لیڈر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک کا وزیراعظم میں ہوں اور مجھے آج تک نواز شریف نے فون کر کے کسی قسم کی ہدایت نہیں دی اور نہ ہی میں کوئی ہدایت لیتا ہوں۔ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے بتایا کہ لوڈ شیڈنگ صرف ان علاقوں میں ہو رہی ہے جہاں بجلی کی چوری ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان پہلے دنیا میں فرنس آئل کا دوسرا بڑا خریدار تھا لیکن گزشتہ 4 ماہ سے ہم نے فرنس آئل نہیں خریدا اور جیسے جیسے ہمارے پاس نئے پاور پلانٹس آتے رہیں گے، بجلی کے مسائل میں بھی کمی آتی جائے گی۔ ایمنسٹی اسکیم سے متعلق فوج اور عدلیہ سمیت تمام اسٹیک ہولڈرز کو اعتماد میں لینے سے متعلق سوال پر وزیراعظم نے کہا کہ ’کسی اسٹیک ہولڈر سے اس اسکیم کی مخالفت نظر نہیں آئے گی، اگر کوئی مخالفت کرے تو آپ مجھے بتایئے گا‘۔

Print Friendly, PDF & Email
جھنگ پولیس خدمت سنٹر حقیقی معنوں میں عوام کی خدمت کر رہی ہے
بھارت سے ایشیا کپ کی میزبانی واپس لے لی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »