دنیا بھر میں آج ہندو برادری اپنا مذہبی تہوار ہولی منا رہی ہے     No IMG     افغانستان کے صوبے ہرات میں سیلاب سے 13 افراد کے جاں بحق ہونے سے ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 63 ہوگئی     No IMG     لیبیا میں پناہ گزینوں کو لے جانے والی کشتی ڈوب گئی جس کے نتیجے میں 9 افراد ہلاک     No IMG     اسرائیلی دہشت گردی، غرب اردن میں مزید3 فلسطینیوں کو شہید کردیا     No IMG     پیپلز پارٹی کےچیئرمین نے 3 وفاقی وزرا کو فارغ کرنے کا مطالبہ کردیا     No IMG     وزیراعظم عمران خان کی ہولی کے تہوار پر ہندو برادی کو مبارک باد     No IMG     سابق وزیراعظم نوازشریف نے ای سی ایل سے نام نکالنے کی درخواست دائر کردی     No IMG     سمجھوتہ ایکسپریس کیس کا فیصلہ 12 سال بعد بھی تاخیر کا شکار     No IMG     وزیر اعظم آئین کے آرٹیکل 214 کی شق دو اے پر عمل کرنے میں ناکام     No IMG     روس کے وزیر دفاع سرگئی شویگو نے شام کے صدر بشار اسد سے ملاقات     No IMG     بھارت اور پاکستان متنازع معاملات مذاکرات کے مذاکرات کے ذریعے حل کریں,چین     No IMG     بریگزیٹ پرٹریزامے کی حکمت عملی انتہائی کمزورہے، ٹرمپ     No IMG     امریکی وزیر خارجہ مائیک پمپئو کی کویت کے بادشاہ سے ملاقات     No IMG     نیوزی لینڈ میں جمعہ کو سرکاری ریڈیو اور ٹی وی سے براہ راست اذان نشر ہوگی,جیسنڈا آرڈرن     No IMG     جھوٹی گواہی دینے پر کاروائی کی جائے گی،عدالتیں جھوٹے گواہ کے خلاف کسی قسم کی لچک نہ دکھائیں,۔چیف جسٹس آف پاکستان     No IMG    

وزیراعظم آزاد کشمیر کو اڈیالہ جیل کے باہر روک دیا گیا
تاریخ :   09-08-2018

راولپنڈی( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو ) سابق وزیراعظم نواز شریف ، ان کی صاحبزادی مریم نواز اور داماد کیپٹن (ر) صفدر اڈیالہ جیلمیں اپنی سزا کاٹ رہے ہیں۔ جیل انتظامیہ نے ان سے ملاقات کے لیے جمعرات کا دن مختص کر رکھا ہے۔ آج بھی نواز شریف اور مریم نواز سے ملاقات کے لیے آنے والوں کا تانتا بندھا ہوا ہے۔ سابق وزیراعظم نواز شریف سے ملاقات کے لیے محمود خان اچکزئی اور غلام احمد بلور بھی اڈیالہ جیل پہنچے۔نواز شریف اور مریم نواز سے ملاقات کے لیے سیاسی رہنماؤں کی اڈیالہ جیل آمد کا سلسلہ جاری ہے۔ وزیر اعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر بھی نواز شریف سے ملاقات کے لیے اڈیالہ جیل پہنچے لیکن انہیں اندر جانے سے روک دیا گیا۔ جیل انتظامیہ کی جانب سے داخلے کی اجازت نہ ملنے پر وزیراعظم آزاد کشمیر نواز شریف سے ملاقات کیے بغیر ہی واپس روانہ ہوگئے۔

دوسری جانب نواز شریف سے ملاقات کے لیے برجیس طاہر ، طارق فضل چودھری ، عابد شیر علی اور مریم اورنگزیب سمیت مسلم لیگ ن کے دیگر رہنماؤں نے بھی اڈیالہ جیل کا دورہ کیا۔ مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف بھی آج نواز شریف سے ملاقات کریں گے اور سیاسی منظر نامے پر پارٹی قائد کی ہدایات لیں گے۔ اڈیالہ جیل میں آج نواز شریف اور مریم نواز کے اہل خانہ کی آمد کا بھی متوقع ہے۔یاد رہے کہ ایون فیلڈ ریفرنس کیس میں سابق وزیر اعظم نواز شریف ، ان کی صاحبزادی مریم نواز اور داماد کیپٹن (ر) صفدر اڈیالہ جیل میں سزا کاٹ رہے ہیں۔ گذشتہ جمعرات کو سابق وزیراعظم نواز شریف اور ان کی صاحبزادی مریم نواز سے اڈیالہ جیل میں ملاقات کرنے کے بعد سابق چئیرمین پیمرا نے بتایا تھا کہ میریمریم نواز سے جیل میں ملاقات ہوئی ۔ مریم نواز نے مجھے بتایا کہ قیدِ تنہائی کا وقت 7×10 کے سیل میں نماز، تلاوت، وظیفہ اور کتابیں پڑھتے گزرتا ہے۔انہوں نے کہا کہ آج کل اوریانہ فلاچی کی کتاب “انٹرویو ود ہسٹری” پڑھ رہی ہوں۔ مجھے کوئی شکوہ نہیں، کوئی پچھتاوا نہیں۔ اگر مجھے 100 زندگیاں بھی ملیں تو ایسی ہی زندگی گزاروں گی اور یہی سب کروں گی۔ میں نے ان سے سوال کیا کہ آپ سب سے زیادہ کیا مِس کرتی ہیں؟ جس پر انہوں نے جواب دیا کہ میں سب سے زیادہ اپنی نواسی سیرینا کو مس کرتی ہوں۔ابصار عالم کا کہنا تھا کہ مریم نوازنے بتایا کہ مجھے روزانہ دو اخبار ملتے ہیں۔لوہے کے پلنگ پر ایک گدا اور ایک جیل کی چادر ہے، باتھ روم سیل کے اندر ہی ہے۔ صبح 5 بجے سلاخوں والا دروازہ کُھلتا ہے اور شام کو 7 بجے تالا لگا دیا جاتا ہے۔ کسی سے یا کسی کو بات کرنے کی اجازت نہیں ہے۔ انہوں نے اپنے ٹویٹر پیغامات میں نواز شریف سے ملاقات کا احوال بھی لکھا اور کہا کہ میں نےنواز شریف سے سوال کیا کہ قید تنہائی میں 24 گھنٹے میں سب سے پُرسکون لمحات کونسے ہیں؟ جس پر میاں صاحب نے جواب دیا کہ سارے کے سارے لمحات پُر سکون ہیں۔نواز شریف نے مجھے بتایا کہ میں اسپتال سے زبردستی واپس جیل آیا ۔۔نواز شریف نے بتایا کہ مجھے پہلی رات بیرک کے فرش پر سُلایا گیا۔ اب ایک لوہے کی چارپائی اور ایک گدا ہے۔ میرا 8×10 کا سیل ہے۔ جس کے دروازے کی جگہ لوہے کی سلاخیں ہیں۔ جسے شام کو7 بجےسے صبح 5 بجے تک بند کر دیا جاتا ہے۔ ڈاکٹر بھی اکیلا نہیں مل سکتا۔ تین یا چار لوگ اس کے ساتھ ہوتے ہیں۔ابصار عالم کا کہنا تھا کہ جیل میں میاں صاحب برصغیر کی تاریخ اور اسلامی تاریخ پر کتابیں پڑھ رہے ہیں۔ میاں صاحب بہت پُرسکون تھے اور انہیں تمام معاملات کی خبر تھی ۔ انہوں نے پارٹی کے لوگوں کو سیاسی اشوز پر مشورے بھی دئے اور ڈان اخبار کی خبر کا حوالہ بھی دیا۔ ابصار عالم نے بتایا کہ میاں صاحب جب کمرے میں آئے تو تھوڑے ڈسٹرب لگ رہے تھے۔ لیکن تھوڑی دیر میں مکمل اطمینان ان کے چہرے پہ لوٹ آیا۔ بوسکی رنگ کا شلوارقمیض پہنا ہوا تھا اورسوٹ کی تہہ کے نشانات ان کے لباس پر واضح تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف،، مریم نواز اور کیپٹن (ر) صفدر میں سے مریم نواز سب سے زیادہ حوصلے میں تھیں۔ملاقات کے دوران سارا وقت ان کے چہرے پر ایک مُسکراہٹ رہی۔

Print Friendly, PDF & Email
دُبئی:پاکستانی‘ اماراتی اور بھارتی شہریوں کی مشترکہ ڈکیتی سیلزمین سے دو لاکھ بیس ہزار اماراتی درہم لُوٹ لیے
بھارتی فوج کی درندگی رکنے کا نام نہیں لے رہی مزید 4 کشمیری نوجوانوں کو شہید کردیا
Translate News »