آرمی چیف سے بحرین نیشنل گارڈ کے کمانڈر کی ملاقات     No IMG     اسرائیل کی جیل میں آگ بھڑک اٹھی، کئی کمرے جھلس گئے     No IMG     اسرائیلی فوج کی گھر گھر تلاشی15 فلسطینی شہری گرفتار     No IMG     وزیر ریلوے شیخ رشید کی نا اہلی کے لیے الیکشن کمیشن میں درخواست دائر     No IMG     فضائی حدود کی بندش، ائیرانڈیا کو کروڑوں کا نقصان     No IMG     دہشت گردی کا کوئی دین اور نسل نہیں ہوتی ,سعودی وزیر خارجہ     No IMG     ایران، عراق اور شامی افواج کے خون نے تینوں ممالک کے درمیان تعلقات کو مزید مضبوط بنایا, بشار الاسد     No IMG     آصف زرداری اور فریال تالپور کی 10 دن کے لیے حفاظتی ضمانت منظور     No IMG     سابق وزیراعلی شہباز شریف کے خلاف ایک اور انکوائری شروع     No IMG     کینیڈین وزیر اعظم جسٹس ٹروڈو نے نیوزی لینڈ میں دہشت گردی کے واقعہ کی مذمت     No IMG     روسی صدر پوتن نے کہا ہے کہ وہ روس میں کرائسٹ چرچ جیسا دہشت گرد حملہ نہیں ہونے دیں گے     No IMG     برطانوی حکام نے نیوزی لینڈ کی مسجدوں میں ہوئی دہشت گردی کی طرز پر برطانیہ میں بھی واقعات پیش آنے کا خدشہ     No IMG     نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ کے پہلے اجلاس کا آغاز تلاوت کلام پاک سے ہوا     No IMG     نیوزی لینڈ مساجد پر دہشت گرد حملے سے متعلق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اپنے بیان پر میڈیا کی تنقید سے برہم     No IMG     نیوزی لینڈ کی قومی فٹسل ٹیم کے گول کیپر عطا الیان بھی کرائسٹ چرچ واقعے میں شہید     No IMG    

منیلا آسیان کانفرنس،امریکی صدر ٹرمپ اور بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی پیر کو ہونے والی ملاقات توجہ کا اصل مرکز ہے۔
تاریخ :   12-11-2017

منیلا (ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو) میں آسیان سربراہ کانفرنس میں عالمی رہنما یوں تو دنیا اور بالخصوص جنوب مشرقی ایشیا کی صورت حال پر غور کریں گے تاہم امریکی صدر ٹرمپ اور بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی پیر کو ہونے والی ملاقات توجہ کا اصل مرکز ہے۔

جنوب مشرقی ایشیا کے دس اہم ملکوں کا گروپ آسیان کی یہ  سربراہ کانفرنس ایسے وقت پر ہو رہی ہے جب متنازعہ بحیرہ جنوبی چین کے حوالے سے بیجنگ حکومت نے جارحانہ موقف اختیار کیا ہوا ہے اور شمالی کوریا نے حالیہ مہینوں میں کئی میزائل تجربات کیے ہیں۔ اس اجلاس میں ان دونوں موضوعات پر شدید بحث کی امید ہے۔ تجارت اور سرمایہ کاری کے علاوہ بحری سلامتی، دہشت گردی، ہتھیاروں کے پھیلاؤ کو روکنے اور مہاجرت جیسے امور بھی کانفرنس میں زیر بحث آئیں گے۔

تاہم سب سے زیادہ اہمیت امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی پیر کو ہونے والی ملاقات کو دی جا رہی ہے۔ دونوں رہنماؤں کے درمیان تقریباً ایک گھنٹے تک بات چیت ہو گی۔گزشتہ پانچ ماہ کے دوران ان دونوں کی یہ دوسری ملاقات ہے۔ ٹرمپ نے حال ہی میں بھارت کی شاندار ترقی کے لیے مودی اور ان کی حکومت کی تعریف کی تھی۔ بھارت سمجھتا ہے کہ ٹرمپ انتظامیہ کی جنوب ایشیا کے حوالے سے نئی پالیسی میں ایک طرف انڈو پیسیفک کی وکالت کی گئی ہے جبکہ دوسری جانب پاکستان اور چین سے نمٹنے کی مودی حکومت کی خارجہ پالیسی کی تائید بھی کی گئی ہے۔ یہاں حکومتی ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم مودی اور صدر ٹرمپ خطے میں سلامتی کے منظر نامے سمیت مختلف امور پر بات کریں گے۔

رمپ او رمودی کی اس ملاقات کو کئی لحاظ سے اہم قرار دیا جارہا ہے۔ اس کی ایک وجہ یہ ہے کہ امریکی صدر نے حال ہی میں چین کے دورے کے دوران چین کے بیلٹ اور روڈ منصوبے(بی آر آئی) میں تعاون فراہم کرنے کا اعلان کیا تھا۔ جب کہ بھارت چین کے اس منصوبہ کو خطے کی ترقی میں شفافیت اور مساوات کے منافی قرار دیتا ہے۔ دوسری اہم وجہ یہ ہے کہ دونوں رہنماؤں کی میٹنگ سے قبل بھارت نے امریکا، جاپان اور آسٹریلیا پر مشتمل چہار فریقی اجلاس کی تجویز پیش کرکے ماحول کو گرم کردیا ہے۔ آسیان کانفرنس کے دوران ہی یہ چہار فریقی میٹنگ بھی ہو گی۔ چین نے گزشتہ ہفتے اس مجوزہ ملاقات پر سخت ردعمل کا اظہار کیا تھا۔ چینی وزارت خارجہ کے بیان میں کہا گیا تھا، ’’ہمیں امید ہے کہ یہ ملاقات کسی تیسرے فریق کے مفادات کو نشانہ بنائے یا نقصان پہنچائے بغیر علاقے میں امن، خیر سگالی اور خوشحالی کو تحفظ اور فروغ دی گی۔‘‘بھارتی وزارت خارجہ کے ایک اہلکار کا کہنا ہے کہ اس میٹنگ کا مقصد چاروں ملکوں کے رہنماؤں کے درمیان اتحاد کے احساس کو فروغ دینا ہے۔ یہ میٹنگ گوکہ چین کی جانب سے خطے میں کیے جانے والے حالیہ اقدامات کے پس منظر اور اس حوالے سے بھی اہم ہے کہ اس موقع پر  چاروں رہنما ایک دوسرے سے مل کر اپنے اپنے خیالات پیش کر سکیں گے۔

مجوزہ چہار فریقی میٹنگ کے حوالے سے بھارتی وزارت خارجہ کے ایک بیان میں کہا گیا، ’’بھارت، آسٹریلیا، جاپان اور امریکا کی وزارت خارجہ کے افسران کی ایک ملاقات منیلا میں ہوئی جس میں بھارت بحرالکاہل خطے یا (انڈو پیسیفک) میں مشترکہ مفادات کے حوالے سے مختلف امور پر صلاح و مشورہ کیا گیا۔ شرکاء ایک ایسے پر امن، مستحکم اور خوشحال بھارت بحرالکاہل پر متفق تھے جو خصوصی طور پرخطے کے تمام ملکوں اور عمومی طور پر دنیا کے طویل مدتی مفادات کو پورا کرتا ہو۔ شرکاء نے دہشت گردی اور ہتھیاروں کے پھیلاؤ جیسے مشترکہ چیلنجز پر بھی تبادلہ خیال کیا۔‘‘

آسیان کانفرنس کے دوران وزیر اعظم مودی اور ان کے چینی ہم منصب لی کی چیانگ کے درمیان ملاقات بھی متوقع ہے۔ وزیر اعظم مودی منیلا میں اپنے تین روزہ قیام کے دوران پندرہویں بھارت آسیان اور بارہویں مشرقی ایشیا کانفرنس کے علاوہ آسیان کے قیام کی پچاسویں سالگرہ کی تقریبات میں بھی شرکت کریں گے۔کسی بھارتی وزیر اعظم کا منیلا کا 36 برسوں کے وقفے کے بعد یہ پہلا دورہ ہے۔

آسیان اور بھارت کی مشترکہ آبادی 1.85بلین ہے جو دنیا کی مجموعی آبادی کا ایک چوتھائی ہے۔ دونوں کے درمیان2015\16 میں 65.04 بلین ڈالر کی تجارت ہوئی تھی، جو عالمی مارکیٹ کا 10.12 فیصد ہے۔ آسیان میں انڈونیشیا، ملائشیا، فلپائن، سنگاپور، تھائی لینڈ، برونائی، کمبوڈیا، لاؤس، میانمار اور ویت نام شامل ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
یونان پہنچنے کی کوشش، نوّے مہاجرین اسمگلر سمیت پکڑے گئے, یونانی پولیس
اپنے خلاف لگائے گئے تمام الزامات کا آخری حد تک دفاع کروں گا, سابق وزیراعظم محمد نواز شریف

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »