سعودی عرب نے سعودی صحافی جمال خاشقجی کے قتل سے متعلق امریکی سینیٹ کی قرارداد کو مسترد کردیا     No IMG     سابق سینیٹر اور پیپلز پارٹی کے رہنما فیصل رضا عابدی پر انسداد دہشت گردی کی عدالت نے فردجرم عائد کر دی     No IMG     مقبوضہ کشمیر میں نوجوانوں کی شہادت پراحتجاجی مارچ     No IMG     چیف جسٹس آف پاکستان کا دورہ تُرکی ,تُرک کمپنی نے ڈیمز فنڈ میں عطیہ دے دیا     No IMG     وینزویلا سے تعلق رکھنے والی 25 سالہ نوجوان لڑکی نے ملکہ حسن کا ٹائٹل جیت لیا     No IMG     حزب اللہ کی ايک اور سرنگ دريافت ,اسرائیلی فوج کا دعوی     No IMG     عوام اپنے مسائل کے حل کیلیے وزیر اعظم کمپلینٹ پورٹل کا استعمال کریں،وزیراعظم     No IMG     سابق صدر آصف زرداری نے پنجاب کی بجلی بند کرنے کی دھمکی دے دی     No IMG     رشوت کا سب سے بڑا ناسور پٹواری ہیں, چیف جسٹس     No IMG     فرانسیسی پولیس نے پیلے رنگ جیکٹس والے مظاہرین پر شدید تشدد     No IMG     اسلام آباد تھانہ سہالہ میں شدید فائرنگ, بدنام زمانہ شیرپنجاب جاں بحق     No IMG     اگر گرفتار ہوا تو کیا ہوگا کیونکہ جیل تو میرا دوسرا گھر ہے, آصف علی زرداری     No IMG     امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ کا نیا وزیر داخلہ مقرر کرنے کا اعلان     No IMG     اٹلی میں ہزاروں مظاہرین نے مہاجر مخالف قوانین کے خلاف مظاہرہ     No IMG     پاکستانیوں کے دل پر آرمی پبلک سکول (اے پی ایس ) پشاور میں لگنے والے زخم کو چار سال مکمل ہوگئے     No IMG    

غزہ اقوام متحدہ ایجنسی کے فلسطینی ملازمین کی جبری برطرفیوں کے خلاف ہڑتال
تاریخ :   24-09-2018

غزہ ( ورلڈ فاسٹ نیوزفاریو ) غزہ میں اقوام متحد ہ کے تحت فلسطینی مہاجرین کی امدادی ایجنسی اُنرو ا کے ہزاروں ملازمین نے جبری برطرفیوں اور امریکی امداد کی کٹوتی کے خلاف ہڑتال کردی ہے۔

اُنروا کے ملازمین کی لیبر یونین کی اپیل پر غزہ میں سوموار کو ایک روزہ ہڑتال کے دوران میں ڈھائی سو سے زیادہ اسکولوں کے علاوہ طبی اور امدادی تقسیم کے مراکز بھی بند ہیں۔ غزہ شہر میں اُنروا کے ہیڈ کوارٹرز کے باہر اس کے ملازمین نے احتجاجی مظاہرہ کیا ہے۔
لیبر یونین نے برطرف کیے گئے ملازمین کی بحالی کا مطالبہ کیا ہے ۔اس کے لیڈروں کا کہنا ہے کہ وہ اپنے مطالبات کے حق میں ہڑتال کے علاوہ مزید اقدامات بھی کرسکتے ہیں۔یونین کی ڈپٹی چئیرمین امل البطش نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’ہڑتال اُنروا کی انتظامیہ کی جانب سے ملازمین کے مطالبات پر کان نہ دھرنے کے ردعمل میں کی جارہی ہے۔اس کو ملازمین کے مسائل کے حل میں کوئی دلچسپی نہیں ہے‘‘۔
اُنروا کے ترجمان کرس گونیس نے مزدور یونین کی اس ہڑتال پر افسوس کا اظہا ر کیا ہے اور کہا ہے کہ ’’ ہمیں ایسے کسی اقدام پر افسوس ہے جس سے مہاجرین کو ایجنسی کی جانب سے مہیا کی جانے والی خدمات پر منفی اثرات مرتب ہو سکتے ہوں۔بالخصوص غزہ ایسی جگہ پر جہاں ایک عشرے سے ناکا بندی جاری ہے اور اس سے مہاجرین نے کافی مصائب جھیلے ہیں‘‘۔
اُنروا کا کہنا ہے کہ ٹرمپ انتظامیہ کی جانب سے مالی امداد میں کٹوتی کے بعد اسامیوں اور خدمات میں تحدید ناگزیر ہوچکی ہے۔ امریکا فلسطینی مہاجرین کو بنیادی شہری سہولیات مہیا کرنے کی ذمے دار اس ایجنسی کو 35 کروڑ ڈالرز سالانہ امداد کی شکل میں دے رہا تھا لیکن صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اس سال کے اوائل سے یہ تمام کی تمام رقم بند کرنے کا فیصلہ کیا تھا اور اس رقم کو اب اسرائیل کی امداد یا دوسرے منصوبوں کے لیے مختص کردیا ہے۔
امریکی صدر کے فیصلے کے بعد اقوام متحدہ کی امدادی ایجنسی مالی مشکلات سے دوچار ہوگئی ہے اور اس نے غزہ اور مغربی کنارے میں ڈھائی سو اسامیاں ختم کرنے اور پانچ سو سے زیادہ کل وقتی ملازمین کو جزوقتی قرار دینے کا اعلان کردیا ہے۔
واضح رہے کہ اُنروا گذشتہ کئی عشروں سے پچاس لاکھ سے زیادہ فلسطینی مہاجرین کو خوراک کی شکل میں امداد مہیا کر رہی ہے اور تیس لاکھ کے لگ بھگ فلسطینیوں کو تعلیم اور صحت سمیت مختلف شہری خدمات مہیا کررہی ہے۔غزہ کی پٹی میں مقیم قریباً 80 فی صد فلسطینی اس ایجنسی کی امداد کے اہل ہیں ۔
اسرائیل کے محاصرہ زدہ اس فلسطینی علاقے میں اُنروا کے ملازمین کی تعداد قریباً تیرہ ہزار ہے۔ان کا کہنا ہے کہ اگر انھیں بے روزگار کرنے کا سلسلہ جاری رہا تو ان کے اہلِ خانہ نانِ جویں کو ترس جائیں گے اور انھیں جان کے لالے پڑ جائیں گے۔غزہ کی پٹی میں اُنروا کے تحت اسکولوں میں دو لاکھ سے زیادہ فلسطینی بچے زیر تعلیم ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
لیبیا کے دارالحکومت طرابلس میں پانچ لاکھ بچے خطرے سے دوچار
چین کے مالیاتی حکام نے فضائی آلودگی کی وجہ سے 158 کمپنیوں کے خلاف کارروائی
Translate News »