پاک فوج نے ایک آپریشن میں 4 مغوی ایرانی فوجیوں کو بازیاب کرالیا     No IMG     دنیا بھر میں آج ہندو برادری اپنا مذہبی تہوار ہولی منا رہی ہے     No IMG     افغانستان کے صوبے ہرات میں سیلاب سے 13 افراد کے جاں بحق ہونے سے ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 63 ہوگئی     No IMG     لیبیا میں پناہ گزینوں کو لے جانے والی کشتی ڈوب گئی جس کے نتیجے میں 9 افراد ہلاک     No IMG     اسرائیلی دہشت گردی، غرب اردن میں مزید3 فلسطینیوں کو شہید کردیا     No IMG     پیپلز پارٹی کےچیئرمین نے 3 وفاقی وزرا کو فارغ کرنے کا مطالبہ کردیا     No IMG     وزیراعظم عمران خان کی ہولی کے تہوار پر ہندو برادی کو مبارک باد     No IMG     سابق وزیراعظم نوازشریف نے ای سی ایل سے نام نکالنے کی درخواست دائر کردی     No IMG     سمجھوتہ ایکسپریس کیس کا فیصلہ 12 سال بعد بھی تاخیر کا شکار     No IMG     وزیر اعظم آئین کے آرٹیکل 214 کی شق دو اے پر عمل کرنے میں ناکام     No IMG     روس کے وزیر دفاع سرگئی شویگو نے شام کے صدر بشار اسد سے ملاقات     No IMG     بھارت اور پاکستان متنازع معاملات مذاکرات کے مذاکرات کے ذریعے حل کریں,چین     No IMG     بریگزیٹ پرٹریزامے کی حکمت عملی انتہائی کمزورہے، ٹرمپ     No IMG     امریکی وزیر خارجہ مائیک پمپئو کی کویت کے بادشاہ سے ملاقات     No IMG     نیوزی لینڈ میں جمعہ کو سرکاری ریڈیو اور ٹی وی سے براہ راست اذان نشر ہوگی,جیسنڈا آرڈرن     No IMG    

عالمی برادری پاکستان پر دباؤ میں مزید اضافہ کرے۔امریکا
تاریخ :   18-01-2018

اقوام متحدہ (ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو) کے سلامتی کونسل کے دورہٴ افغانستان سے واپسی کے بعد اقوام متحدہ میں امریکی سفیر نے کابل حکومت کے اس مطالبے کی تائید کی ہے کہ عالمی طاقتوں کو پاکستان پر دباؤ بڑھانا چاہیے۔

گزشتہ دنوں اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل کے چودہ رکنی وفد نے کابل میں افغان رہنماؤں سے ایک ایسے وقت ملاقات کی جب کابل حکومت طالبان سے امن مذاکرات کر کے ملک میں قیام امن کی کوششوں میں ہے۔ اس عالمی ادارے میں امریکی سفیر نکی ہیلی بھی افغانستان کا دورہ کرنے والے وفد کا حصہ تھیں۔دورے کے بعد یو این ہیڈ کواٹرز میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے نکی ہیلی کا کہنا تھا کہ افغان حکومت ’کو پورا یقین ہے کہ طالبان مذاکرات کی میز پر آنے کے لیے آمادہ ہو جائیں گے‘۔ طالبان کے ساتھ یہ ممکنہ مذاکرات اگرچہ افغان حکومت ہی کی قیادت میں ہونا ہیں لیکن سکیورٹی کونسل کے وفد سے ملاقات کے دوران افغان رہنماؤں نے ان سے یہ درخواست بھی کی کہ وہ اسلام آباد کو بھی ساتھ ملانے کے لیے کابل حکومت کی مدد کریں۔

افغان رہنماؤں کی پاکستان کے بارے میں ہونے والی گفتگو کے حوالےسے نکی ہیلی کا کہنا تھا، ’’انہوں نے وفد کے ارکان سے کہا کہ پاکستان کو مذاکرات کی میز پر آنے اور اپنا رویہ تبدیل کرنے کے لیے عالمی برادری اسلام آباد پر دباؤ میں مزید اضافہ کرے۔‘‘

نکی ہیلی کا کہنا تھا کہ کابل حکام ملک میں امن اور استحکام کے لیے بھرپور کوششیں کر رہے ہیں اور ’وہ اس ضمن میں دس قدم آگے جاتے ہیں اور پاکستان کے ساتھ انہیں محسوس ہوتا ہے کہ وہ مسلسل پیچھے ہٹ رہا ہے‘۔ نکی ہیلی نے مزیدکہا، ’’جب تک پاکستان اپنے ہاں دہشت گردوں کی مدد کرتا رہے گا، افغانستان کے عوام خود کو محفوظ نہیں سمجھیں گے۔‘‘

نکی ہیلی نے تاہم اس ضمن میں یہ نہیں بتایا کہ پاکستان پر دباؤ بڑھانے کے لیے ممکنہ طور پر کیا اقدامات کیے جا سکتے ہیں تاہم کسی ملک پر دباؤ بڑھانے کے لیے سکیورٹی کونسل عام طور پر پابندیاں عائد کرتی ہے۔

امریکا، افغانستان اور کئی دیگر ممالک پاکستان پر دہشت گردی کو فروغ دینے کے الزامات عائد کرتے رہتے ہیں لیکن پاکستان ایسے الزامات کی سختی سے تردید کرتا ہے۔ حال ہی میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی ہدایت پر پاکستان کو فراہم کی جانے والی عسکری امداد روکنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

امریکی حکام کے مطابق پاکستانی خفیہ ادارے افغانستان میں بڑھتے ہوئے بھارتی اثر و رسوخ کا مقابلہ کرنے کے لیے طالبان کے مختلف گروہوں کو عسکری تربیت کے علاوہ مالی امداد بھی فراہم کر رہے ہیں۔

 

Print Friendly, PDF & Email
بھارت کا طویل رینج والے بین البراعظمی میزائل کا کامیاب تجربہ
سابق صدرآصف علی زرداری نے کہا ہے کہ پارلیمنٹ عوام کا نمائندہ ادارہ ہے اسے گالی نہیں دی جاسکتی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »