الیکشن2018میں پاک فوج کواہم ذمہ داری سونپ دی گئی     No IMG     ڈپٹی کمشنر گلگت سمیع اللہ فاروق نے کہا کہ گلگت شہر میں گوشت کی قلت دور کرنے کیلئے پہلی گوشت سپلائی کرنے والی کمپنی میٹ مارٹ کا افتتاح     No IMG     افغانستان میں سرگرم دہشت گرد تنظیم طالبان نے رمضان المبارک میں جنگ بندی کی اپیل مسترد     No IMG     بھارتی وزیر اعظم نے کشمیر میں کشن گنگا ڈیم کا افتتاح کردیا     No IMG     یورپی یونین کی ایران کومشترکہ ایٹمی معاہدےکو جاری رکھنے کے لیے تیار     No IMG     بھارتی وزیر اعظم کا دورہ کشمیر مظالم پر پردہ ڈالنے اور عالمی رائے عامہ کو گمراہ کرنے کی کوشش ہے، یاسین ملک     No IMG     نریندر مودی کا مقبوضہ کشمیر کا دورہ ایک فوجی آپریشن سے زیادہ کچھ نہیں تھا، کل جماعتی حریت کانفرنس ، سید علی گیلانی     No IMG     مسلم لیگ فنکشنل کی خاتون رکن نصرت سحر عباسی نے طیش میں آکر ڈپٹی اسپیکر شہلا رضا کو جوتا دکھا دیا     No IMG     لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ شاہد عزیز کے بیٹے نے والد کی موت کی خبروں کی تردید کر دی     No IMG     بھارت نے پاکستان میں تعینات رہنے والی اپنی ہی سفارت کار کو ’جاسوس‘ قرار دے دیا     No IMG     جڑانوالہ تحصیل چیرمین پرائس و کوالٹی کنٹرولر این اے 102 نے بھرپور الیکشن کمپین مھم جاری     No IMG     جڑانوالہ کا قدیمی ریلوے اسٹیشن انتظامیہ کی عدم توجہی کی بهینت چڑه گیا     No IMG     نوشہرہ ورکاں ملک محمد اکبر ولد محمد رمضان نے پیسوں کے  لین دین کے تنازعہ سے تنگ آکر زہریلی گولیاں کھا کر خود کشی کر لی     No IMG     شہبازشریف سرجیکل ٹاوربند رکھنےپرعوام سےمعافی مانگیں,چودھری پرویزالٰہی     No IMG     ترکی کے شہر استنبول میں اسلامی سربراہی کانفرنس میں اس عزم کا اعادہ کیا گیا ہے کہ بیت المقدس کی تاریخی اورقانونی حیثیت کےتحفظ کے لیے ہرممکن اقدامات اٹھائے جائیں گے۔     No IMG    

شیل کمپنیزکوتوڑتے ہتھوڑا نہ ٹوٹ جائے،کیوں نہ ملک کے 100بڑے لوگوں کوعدالت بلالیں
تاریخ :   20-03-2018

اسلام آباد( ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو)سپریم کورٹ میں پاکستانیوں کے غیرملکی اکاونٹس سے متعلق کیس میں چیف جسٹس نے کہا کہ شیل کمپنیزکوتوڑتے ہتھوڑا نہ ٹوٹ جائے،اب چارٹرڈ اکاﺅنٹنٹ ہی رقم واپس لانے میں ہماری مدد کریں گے،کیوں نہ ملک کے 100بڑے لوگوں کوعدالت بلالیں؟سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں تین رکنی بینچ پاکستانیوں کے غیرملکی اکاﺅنٹس سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔دوران سماعت جسٹس عمرعطابندیال نے ریمارکس دیئے کہ ہمارے ملک کی کرنسی گر رہی ہے، غیرقانونی چینل سے لوگ پیسہ باہرمنتقل کرکے قانونی طریقے سے واپس لے آتے ہیں،اوپن مارکیٹ میں ڈالرخرید کر سب کچھ پاک کرلیاجاتاہے۔جسٹس اعجازالاحسن نے کہا کہ منی چینجرکواچھی پرسنٹیج دیں تووہ زرمبادلہ کابندوبست کردیتاہے۔اسپین،ملائشیا ،دوبئی،امریکہ اور فرانس میں لوگوں نے املاک خرید رکھی ہیں،جن لوگوں نے یہ گتھیاں بنائی ہیں وہی انہیں سلجھائیں گے،یہ سب کی ذمہ داری ہے کہ قوم کا پیسہ واپس لایا جائے،شیل کمپنوں کو توڑتے ہتھوڑا نہ ٹوٹ جائے،اب چارٹرڈ اکاﺅنٹنٹ ہی رقم واپس لانے میں ہماری مدد کریں گے،ہم نے پاکستان سے بھاگ کر نہیں جانا ،ہمارے بچوں کا ہم پر حق ہے بچوں کو ایسا ملک دے کر جائیں جہاں وہ خوش و خرم رہیں،کیوں نہ ملک کے 100بڑے لوگوں کوعدالت بلالیں ؟ان لوگوں کوبلاکرپوچھ لیں اپنی بیرون ملک اثاثوں کی تفصیل دیں ،ممکن ہے بڑے لوگ ہماری بات مان کرتفصیلات دے دیں، کتنے لوگ ملک چھوڑ کرچلے جائیں گے ؟اپنے بچوں کوبہترین پاکستان دیناہے۔جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیئے کہ بھارتی سپریم کورٹ نے حکومت کو بیرون ملک اکاﺅنٹس کی تفصیلات لینے کاحکم دیاہے۔گورنراسٹیٹ بینک نے کہا کہ بیرون ملک اثاثوں کی تصدیق ہوجائے گی لیکن وقت لگے گا،پوری دنیامیں ڈیکلئیرڈ اثاثوں کے گرد گھیراتنگ کیاجارہاہے۔چیف جسٹس نے کہا کہ گھیراتنگ کرنے سے آپ کی کیامراد ہے ؟یہاں پاکستان میں کیسے گھیراتنگ ہوگا ؟گورنراسٹیٹ بینک نے کہا کہ پورے ملک میں کرنسی کی آزادانہ نقل و حرکت ہو رہی ہے، فارن کرنسی سے متعلق قوانین میں ترمیم کی ضرورت ہے، قانون فارن کرنسی ایکسچینج چلانے والوں کے لیے بڑا نرم ہے، پیسے کی منتقلی کے حوالے سے لیگل ریجیم کی ضرورت ہے۔چیف جسٹس نے بیرون ملک سے رقم واپس لانے کے لیے ورکنگ گروپ تشکیل دینے کاعندیہ دے دیا اور کہا کہ ورکنگ گروپ منی لامڈرنگ اور رقم لانے سے متعلق تجاویز دے گا ،ورکنگ گروپ کی تجاویز پارلیمنٹ کے سامنے رکھیں گے،معاملہ پارلیمنٹ کے سامنے رکھنے کے بعد ہم بری الذمہ ہوں گے ،ایساخوف پیدانہیں کرناچاہتے جوہماری معشیت کے لیے نقصان دہ ہو۔جسٹس اعجاز الاحسن نے استفسار کیا کہ کیا پاکستان کے اکاﺅنٹس سے متعلق سوئس حکام سے معلومات مانگی ہے؟گورنر اسٹیٹ بینک نے کہا کہ معلوم نہیں کہ سوئس حکام کے پاس معلومات ہیں یا نہیں۔جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ حکومت سوئس حکام سے معلومات مانگے تو ہو سکتی ہیں۔چارٹرڈ اکاﺅنٹنٹ نے کہا کہ بیرون ملک تین اقسام کے اثاثے منتقل ہوئے، عوام کے بیرون ملک پیسے پر کوئی رعایت نہیں ہونی چاہیے، بیرون ملک منتقل پیسے کی ایک قسم وہ بھی ہے جس پر ٹیکس نہیں دیا گیا،ایسا پیسہ بھی منتقل ہوا جس پر ٹیکس ادا کیا گیا، بیرون ملک آف شور ٹرسٹ بنا کر بنا کر اثاثہ رکھا جاتا ہے، دیانت دار لوگوں کے لیے فارن کرنسی اکاﺅنٹس بند نہیں کر سکتے، ٹیکس ادا نہ کرنے والوں کو فارن کرنسی اکاﺅنٹ سے رقم منتقل کرنے کی اجازت نہیں ہونی چاہیے، کرپشن اور مجرمانہ فعل کی رقم بیرون ملک نہیں جانی چاہیے، 2001میں نان ریذیڈنٹ کو 182دن کی رعایت دے دی گئی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*