پاک فوج نے ایک آپریشن میں 4 مغوی ایرانی فوجیوں کو بازیاب کرالیا     No IMG     دنیا بھر میں آج ہندو برادری اپنا مذہبی تہوار ہولی منا رہی ہے     No IMG     افغانستان کے صوبے ہرات میں سیلاب سے 13 افراد کے جاں بحق ہونے سے ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 63 ہوگئی     No IMG     لیبیا میں پناہ گزینوں کو لے جانے والی کشتی ڈوب گئی جس کے نتیجے میں 9 افراد ہلاک     No IMG     اسرائیلی دہشت گردی، غرب اردن میں مزید3 فلسطینیوں کو شہید کردیا     No IMG     پیپلز پارٹی کےچیئرمین نے 3 وفاقی وزرا کو فارغ کرنے کا مطالبہ کردیا     No IMG     وزیراعظم عمران خان کی ہولی کے تہوار پر ہندو برادی کو مبارک باد     No IMG     سابق وزیراعظم نوازشریف نے ای سی ایل سے نام نکالنے کی درخواست دائر کردی     No IMG     سمجھوتہ ایکسپریس کیس کا فیصلہ 12 سال بعد بھی تاخیر کا شکار     No IMG     وزیر اعظم آئین کے آرٹیکل 214 کی شق دو اے پر عمل کرنے میں ناکام     No IMG     روس کے وزیر دفاع سرگئی شویگو نے شام کے صدر بشار اسد سے ملاقات     No IMG     بھارت اور پاکستان متنازع معاملات مذاکرات کے مذاکرات کے ذریعے حل کریں,چین     No IMG     بریگزیٹ پرٹریزامے کی حکمت عملی انتہائی کمزورہے، ٹرمپ     No IMG     امریکی وزیر خارجہ مائیک پمپئو کی کویت کے بادشاہ سے ملاقات     No IMG     نیوزی لینڈ میں جمعہ کو سرکاری ریڈیو اور ٹی وی سے براہ راست اذان نشر ہوگی,جیسنڈا آرڈرن     No IMG    

سینیٹ انتخابات: تحریک انصاف اورمسلم لیگ (ق) کے درمیان معاہد ہ طے پاگیا‘
تاریخ :   13-02-2018

لاہور(ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو) پنجاب اسمبلی میں سینیٹ انتخابات کی نشستوں کے لیے پاکستان تحریک انصاف اور پاکستان مسلم لیگ (ق) ایک معاہد ہ طے پاگیا ہے جبکہ پاکستان پیپلز پارٹی اپوزیشن جماعتوں سے ہاتھ ملانے میں شک و شبہات کا شکار ہے۔دونوں جماعتوں کے درمیان معاہدے کے حوالے سے ذرائع نے بتایا ہے کہ تحریک انصاف اور مسلم لیگ (ق) اس بات پر راضی ہوئی ہیں کہ جنرل نشستوں پر ایک دوسرے کے امیدواروں کو ووٹ دینا دوسرے درجے پر ترجیح ہوگی جبکہ خواتین کی نشست پر مسلم لیگ (ق) اس بات پر راضی ہوئی ہے کہ تحریک انصاف کی امیدوار عندلیب عباس کو ووٹ دینا پہلی ترجیح ہوگی۔تحریک انصاف کی جانب سے پنجاب میں سینیٹ کی جنرل نشست پر سابق گورنر چوہدری سرور جبکہ مسلم لیگ (ق) کی جانب سے سینیٹر کامل علی آغا نامزد کیے گئے ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ تحریک انصاف اور مسلم لیگ (ق) کی قیادت اس بات پر راضی ہوئی کہ ایک دوسرے کے امیدواروں کے مقابلے میں اپنے امیدواروں کو واپس نہیں لیںگے بلکہ ایک دوسرے کی حمایت میں ووٹ دینے کو دوسری ترجیح رکھیں گے۔اس کے ساتھ ساتھ دونوں جماعتوں اور پیپلز پارٹی کے درمیان معاہدے میں ناکامی رہی اور پیپلز پارٹی نے سابق وزیر اعلیٰ میاں منظور وٹو کے داماد شہزاد علی خان کو اس نشست کے لیے نامزد کیا ہے۔اس بارے میں کامل علی آغا نے بتایا کہ اگرچہ تینوں اپوزیشن کی جماعتیں جنرل نشست کے لیے متفقہ امیدوار لانے پر راضی نہیں تھی، تاہم مسلم لیگ (ق) اور تحریک انصاف آپس میں کچھ مفاہمت تک پہنچیں ہیں، کس سے دونوں جماعتوں کو پنجاب میں فائدہ ہوگا۔انہوں نے کہا کہ دو آزاد امیدواروں اور جماعت اسلامی کے ایک امیدوار کا ووٹ بھی (ق) لیگ کے امیدوار کی حمایت میں ہی ہوگا جبکہ پیپلز پارٹی کو بھی اس بات پر راضی کرنے پر زور دیا جارہا ہے کہ وہ مسلم لیگ (ق) کے حق میں اپنا امیدوار دستبردار کردے یا پھر پی پی پی کے ایم پی ایز کی دوسری ترجیح ان کے امیدوار کو ووٹ دینا ہو۔کامل علی آغا نے بتایا کہ حکمران جماعتوں کے مختلف ایم پی ایزسے بھی ان کا رابطہ ہے اور کافی تعداد میں پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رکن اسمبلی نے پہلی اور دوسری ترجیح پر ووٹ دینے کا وعدہ کیا ہے، جو ان کی قیادت کے لیے کافی حیران کن ثابت ہوگا۔دوسری جانب پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے سیکرٹری جنرل چوہدری منظور کا کہنا ہے کہ دونوں اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے متفقہ امیدوار لانے میں دلچسپی ظاہر نہ کرنے کے بعد اس بات کا قوی امکان ہے کہ ان کے امیدوار شہزاد خان جنرل نشست پر اکیلے مقابلہ کریں گے۔انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کا دیگر اپوزیشن جماعتوں کے لیے رویہ کافی سخت ہے اور ہم حیران ہیں کہ آئندہ انتخا بات کے بعد یہ جماعت اتحادی حکومت بنانے کے لیے کس طرح دیگر سیاسی قوتوں کو ساتھ رکھے گی۔ادھر پنجاب اسمبلی میں تحریک اںصاف کے اپوزیشن لیڈر میاں محمود الرشید نے امید ظاہر کی ہے کہ ان کے امیدوار چوہدری سرور سینیٹ انتخابات میں اچھی کارکردگی دکھائیں گے، ہم دیگر اپوزیشن جماعتوں سے رابطے میں ہیں اور امید ہے کہ انتخاب کے دن دو آزاد رکن صوبائی اسمبلی ہماری حمایت کریں گے۔چوہدری منظور کا کہنا ہے کہ پنجاب اسمبلی میں تحریک انصاف کے 31، مسلم لیگ (ق) اور پیپلز پارٹی کے 8، 8 امیدوار ہیں جبکہ دو آزاد امیدوار اور ایک جماعت اسلامی کے ووٹ سے اپوزیشن کے پہلے ترجیحی ووٹ 50 تک ہوجائیں گے، تاہم جنرل نشست میں اپوزیشن کو ایک سیٹ حاصل کرنے کے لیے پہلی ترجیح پر 53 ووٹ کی ضرورت ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
سپریم کورٹ نے 62ون ایف کیس کا فیصلہ محفوط کر لیا
سرگودھا شہر میں گاڑیوں کا داخلہ بند

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »