ساہیوال میں گاڑی پر فائرنگ کے واقعے میں ملوث سی ٹی ڈی اہلکاروں کو حراست میں لے لیا     No IMG     لیبیا کے قریب مہاجرین کی کشتی ڈوبنے سے 117 افراد لاپتا     No IMG     صومالیہ ,میں امریکی جنگی طیاروں کے حملے میں 52 شدت پسند ہلاک     No IMG     پولیس کی درندگی نے شادی والے گھر میں صف ماتم بچھادی     No IMG     پیپلز پارٹی کے رہنما قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کے چیئر مین سینیٹر رحمان ملک نے اسلام آباد میں بڑھتی ہوئی ڈکیتیوں، موٹرکار و موٹر سائیکل چوریوں کا نوٹس اور آئی جی اسلام آباد سے رپورٹ طلب کرلی     No IMG     بھارت میں سوائن فلو سے 40 افراد ہلاک اور ایک ہزار 36 افراد متاثر     No IMG     سابق آرمی چیف راحیل شریف کو این او سی جاری     No IMG     چوہدری برادران کے ساتھ معاملات حل ہوگئے ہیں,صوبائی وزیر اطلاعات     No IMG     پولیس کے محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) کی فائرنگ سے 2 خواتین سمیت 4 افراد ہلاک اور 3 بچے زخمی     No IMG     مقبوضہ کشمیر میں ٹرک پر برفانی تودہ گرنے سے 5 افراد ہلاک     No IMG     سوڈان ,میں حکومت کے خلاف مظاہرے، ڈاکٹر سمیت 3افراد جاں بحق     No IMG     حکومت کو کسی قسم کا کوئی خطرہ ہے، پاکستان کے اچھے دن شروع ہوگئے ہیں, فواد چوہدری     No IMG     گیس لیکج سے 2 دھماکے ،3 افراد جاں بحق ،4 زخمی     No IMG     برطانوی وزیر اعظم مے کے یورپی رہنماؤں سے رابطے     No IMG     پیپلزپارٹی ک رہنماؤں کا حکومت کو اینٹ کا جواب پتھر سے دینے کا فیصلہ     No IMG    

سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے کہا ہے کہ ایران کی طرف سے یمنی ملیشیا گروہوں کو راکٹ سپلائی،
تاریخ :   07-11-2017

سعودی (ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو) ولی عہد محمد بن سلمان نے کہا ہے کہ ایران کی طرف سے یمنی ملیشیا گروہوں کو راکٹ سپلائی، سعودی عرب کے خلاف ’براہ راست عسکری جارحیت‘ ہے۔ ایران ایسے الزامات مسترد کرتا ہے کہ وہ حوثی باغیوں کو عسکری مدد فراہم کر رہا ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے سعودی سرکاری نیوز ایجنسی SPA کے حوالے سے سات نومبر بروز منگل بتایا ہے کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے ایران پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ ریاض حکومت کے خلاف ’براہ راست جارحیت‘ کا مرتکب ہو رہا ہے۔

محمد بن سلمان نے کہا کہ یمن میں فعال ایران نواز حوثی باغیوں کو راکٹ کی سپلائی ’سعودی عرب کے خلاف جنگ‘ کے زمرے میں آ سکتی ہے۔ سعودی عرب کے ولی عہد اور وزیر دفاع محمد بن سلمان نے برطانوی وزیر خارجہ بورس جانسن سے ٹیلی فون میں گفتگو میں ان خیالات کا اظہار کیا۔

یمن کے دارالحکومت صنعاء سمیت ملک کے بڑے حصے پر قابض حوثی باغیوں نے ہفتہ چار نومبر کو سعودی دارالحکومت ریاض کی طرف ایک بیلسٹک میزائل فائر کیا تھا، جس سعودی فضائیہ نے ہوا میں ہی تباہ کر دیا تھا۔

سعودی عرب الزام عائد کرتا ہے کہ یمن کی خانہ جنگی میں تہران حکومت حوثی باغیوں کو عسکری مدد فراہم کر رہی ہے۔ تاہم ایران ان الزامات کو مسترد کرتا ہے۔

ریاض پر بیلسٹک میزائل فائر کرنے کے واقعے پر امریکا نے بھی ایران کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ واشنگٹن اور ریاض نے اس حملے پر ایران کی مذمت کرتے ہوئے اسے ’تباہ کن اور اشتعال انگیزی‘ قرار دیا تاہم تہران نے واضح کیا ہے کہ اس واقعے میں ایران ملوث نہیں ہے۔

سعودی وزیر خارجہ عادل الجبیر کے مطابق یمن میں حوثی باغیوں کے زیر قبضہ علاقوں سے یہ بیلسٹک میزائل لبنانی جنگجو گروہ حزب اللہ نے فائر کیا تھا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہ ’ایک ایرانی میزائل‘ تھا۔

میزائل حملے کے بعد سعودی عرب نے اعلان کیا ہے کہ وہ یمن سے متصل تمام تر ہوائی، زمینی اور بحری راستے بند کر رہا ہے۔ اس پیشرفت سے شورش زدہ ملک یمن میں انسانی بحران کی صورتحال مزید ابتر ہو سکتی ہے۔

یمن میں سن دو ہزار پندرہ سے جاری اس بحران کی وجہ سے نہ صرف ملکی بنیادی ڈھانچہ تباہ ہو چکا ہے بلکہ کم خوراکی اور حفظان صحت کی سہولیات کی عدم دستیابی سے شہری آبادی بری طرح متاثر ہو رہی ہے۔ اسی دوران یمن میں ہیضے کی وباء بھی پھیل چکی ہے۔ اقوام متحدہ کے اعدادوشمار کے مطابق خانہ جنگی کے شکار ملک یمن میں تقریبا نو لاکھ افراد ہیضے سے متاثر ہو چکے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
کابل اور اسلام آباد کے تعلقات کشیدہ ہونے کا خدشہ,سیاسی مبصرین
شامی جنگ دیرالزور میں ختم نہیں ہوئی,شامی صدر بشارالاسد

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »