وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر سے پاک برطانیہ اور پاکستان سکاٹ لینڈ بزنس کونسل کے وفد کی ملاقات     No IMG     حکومت کو شدید مشکلات کا سامنا آئی ایم ایف نے بیل آوٹ پیکج کیلئے اپنی شرائط سخت کردیں     No IMG     آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا آرمی سروس کور سینٹر نوشہرہ کا دورہ     No IMG     جاپانی وزیراعظم شینزو آبے آسٹریلیا پہنچ گئے     No IMG     کیلیفورنیا ,کی جنگلاتی آگ ، ہلاکتوں کی تعداد 63 ہو گئی     No IMG     برطانوی وزیراعظم کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک اگلے ہفتے پیش ہو سکتی ہے     No IMG     ملائیشین ہائی کمشنر اکرام بن محمد ابراہیم کی وزیراعظم عمران خان سے ملاقات     No IMG     امریکی بلیک میلنگ کا مقصد حماس کی قیادت کو نشانہ بنانا ہے     No IMG     زمبابوے بس میں گیس سیلنڈر پھٹنے سے 42 افراد ہلاک جبکہ متعدد افراد زخمی ہوگئے     No IMG     زلفی بخاری کیس: ’دوستی پر معاملات نہیں چلیں گے‘ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار     No IMG     غزہ پرحملے, اسرائیل کو 40 گھنٹوں میں 33 ملین ڈالر کا نقصان     No IMG     تنخواہیں واپس لے لیں سپریم کورٹ کاحکم آتے ہی افسران سیدھے ہو گئے     No IMG     پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان ابوظہبی ٹیسٹ کا پہلا دن باؤلرز کے نام     No IMG     چودھری پرویز الٰہی اپنے ہی جال میں پھنس گئے     No IMG     ق لیگ نے پاکستان تحریک انصاف کیخلاف بغاوت کردی     No IMG    

سابق وزیراعظم نواز شریف کی اہلیہ بیگم کلثوم نواز لندن میں انتقال کر گئیں
تاریخ :   11-09-2018

لندن( ورلڈ فاسٹ نیوزفاریو ) سابق وزیراعظم نواز شریف کی اہلیہ بیگم کلثوم نواز ہارلے سٹریٹ کلینک لندن میں انتقال کر گئی ہیں۔ اس بارے میں سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے ان کے انتقال کی تصدیق کرتے ہوئے تایا کہ کلثوم نواز کی میت کو پاکستان لایا جائے گا۔ بیگم

کلثوم نواز کینسر کے مرض کیلئے لندن میں زیرعلاج تھیں۔ ان کی تدفین جاتی امراء رائیونڈ میں کی جائے گی۔شہباز شریف کا کہنا تھا کہ کلثوم نواز کی وفات شریف خاندان کیلئے بڑا دھچکا ہے۔ نواز شریف نے ہر مشکل وقت میں اہلیہ سے مشاورت کی۔ مرحومہ نے گھر بھی سنبھالا، آزمائش پڑی تو چاردیواری سے باہر نکلیں۔ انہوں نے کہا کہ بیگم کلثوم نواز مشکل حالات میں باہر نکلیں اور ڈکٹیٹر شپ کو چیلنج کیا۔ وزیراعظم عمران خان نے کلثوم نواز کے انتقال پر دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت اہلخانہ کو قانون کے مطابق تمام سہولیات دے گی۔ عمران خان نے برطانیہ میں پاکستانی ہائی کمیشن کو سہولیات کی فراہمی میں معاونت کی ہدایت کر دی۔آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی طرف سے بھی ڈی جی آئی ایس پی آر مجیرجنرل آصف غفور نے سماجی رابطے کی سائیٹ ٹوئٹر پر تعزیتی بیان جاری کیا جس میں آرمی چیف نے مرحومہ کے بلند درجات کی دعا کی اور لواحقین سے اظہار افسوس کیا ہے۔پاکستان پیپلز پارٹی کے چئیرمین بلاول بھٹو زرداری اور شریک چئیرمین آصف علی زرداری نے بیگم کلثوم نواز کے انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بیگم کلثوم نواز ایک بہادر خاتون تھیں۔ انہوں نے جمہوریت کے لئے جدوجہد کی۔ بیگم کلثوم نواز نے یکم جولائی 1950ء کو اندورن لاہور کے کشمیری گھرانے میں حفیظ بٹ کے ہاں آنکھ کھولی۔ ابتدائی تعلیم مدرستہ البنات سے حاصل کی جبکہ میٹرک لیڈی گریفن اسکول سے کیا۔ انہوں نے ایف ایس سی اسلامیہ کالج سے کیا اور اسلامیہ کالج سے ہی 1970ء میں بی ایس سی کی ڈگری حاصل کی۔ ادب سے گہرا لگاؤ ہونے کے باعث انہوں نے 1972ء میں فارمین کرسچیئن کالج سے اردو لٹریچر میں بی اے کی ڈگری بھی حاصل کی۔ انہوں نے اردو شاعری میں جامعہ پنجاب سے ایم اے کیا۔ کلثوم نواز نے پی ایچ ڈی کی ڈگری بھی حاصل کر رکھی ہے۔ 2 اپریل 1971ء کو بیگم کلثوم اورنواز شریف نے زندگی کے نئے سفر کا آغاز کیا۔ نوازشریف اور بیگم کلثوم نواز کے دو بیٹے حسن اور حسین نواز اور دو بیٹیاں مریم نواز اور اسماء نواز ہیں۔نوازشریف کے پہلی مرتبہ 6 نومبر 1990ء کو وزیراعظم کا منصب سنبھالنے پر بیگم کلثوم نواز کو خاتون اول بننے کا اعزاز حاصل ہوا جو 18 جولائی 1993ء تک برقرار رہا۔ وہ 17 فروری 1997ء کو دوسری مرتبہ خاتون اول بنیں۔ 12 اکتوبر 1999ء کو فوجی آمر جنرل پرویز مشرف نے وزیر اعظم نواز شریف کا تختہ الٹ دیا اور انہیں بھیج دیا گیا۔امور خانہ داری نمٹانے والی خاتون بیگم کلثوم نواز کو تنہا اپنے شوہر کے حق میں آواز اٹھانا پڑی۔ انہوں نے نہ صرف شوہر کی رہائی کیلئے عدالت سے رجوع کیا بلکہ مسلم لیگ (ن) کی ڈوبتی کشتی کو بھی سہارا دیا۔ انہوں 1999ء میں مسلم لیگ (ن) کی پارٹی کی قیادت سنبھالی اور لیگی کارکنوں کو متحرک کیا ۔ وہ 2002ء میں پارٹی قیادت سے الگ ہو گئیں۔اس دوران لاہور میں ایک اجتجاج کے دوران گاڑی میں بیٹھی کلثوم نواز کی گاڑی کو پولیس نے لفٹر سے اٹھوا لیا لیکن کلثوم نواز نے اس دور میں بھرپور انداز میں پارٹی کی قیادت سنبھالی۔جون 2013ء میں انہیں تیسری مرتبہ خاتون اول ہونے کا اعزاز حاصل ہوا جو صرف 28 جولائی 2017ء تک ہی رہ سکا۔ سپریم کورٹ کے حکم پر نوازشریف کو نہ صرف وزارت عظمیٰ سے ہاتھ دھونا پڑا بلکہ انہیں این اے 120 سے ڈی سیٹ کردیا گیا۔ضمنی الیکشن کا شیڈول جاری ہوا تو مسلم لیگ (ن) نے نوازشریف کی اہلیہ کو میدان میں اتار دیا۔ بیگم کلثوم نواز علیل ہونے کے باعث 17 اگست کو لندن روانہ ہوئیں جہاں لندن کے بہترین ڈاکٹرز کی ایک ٹیم ان کا علاج کر رہی تھی۔ دوران علالت ہی الیکشن میں ان کی کامیابی کا اعلان کیا گیا جس پر مسلم لیگ ن کے حلقوں کی جانب سے بے پناہ خوشی کا اظہار کیا گیا۔ مگر وہ قومی اسمبلی کی رکنیت کا حلف لینے سے قاصر رہیں۔بیگم کلثوم نواز طویل علالت کے دوران بے ہوشی کی حالت میں رہیں۔ اس دوران ان کی بیٹی مریم نواز ، بیٹے حسین نواز اور حسن نواز بھی ہسپتال میں مسلسل موجود رہے اور ان کی تیمارداری میں مصروف تھے۔ اس دوران انہیں ایک دو بار ہوش بھی آیا اور انہوں نے ہسپتال میں موجود اپنے اہلخانہ سے بات چیت بھی کی جس کے بعد امید کی جا رہی تھی کہ ان کی حالت بہتر ہوجائے گی۔ لیکن ایسا نہ ہوسکا اور وہ اسی علالت کے دوران خالق حقیقی سے جا ملیں۔نواز شریف اور مریم نواز کی وطن واپسی کے بعد کلثوم نواز کے ساتھ ان کا رابطہ اس طرح نہ رہ سکا کیونکہ شدید علالت کے باعث وہ وینٹی لیٹر پر تھیں اور ٹیلی فون پر بات کرنے کے قابل بھی نہ تھیں۔ اسی حالت میں وہ انتقال کر گئیں۔

Print Friendly, PDF & Email
آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا بیگم کلثوم نواز کے انتقال پر اظہار افسوس
کشمیر میں بھارتی فوج کی فائرنگ سے مزید 3 نوجوان شہید
Translate News »