امریکی صدر شیر کی دم کے ساتھ کھیلنا ترک کردے ۔ مزاحمت یا تسلیم کے علاوہ کوئي اور راستہ نہیں۔     No IMG     افریقی ملک مراکش کی عدالت نے ایک بچی کی اجتماعی عصمت ریزی کے گھناؤنے واقعے کی اعلیٰ سطحی تحقیقات شروع     No IMG     دوست کو چاقو کے وارسے قتل کرنے والی حسینا کو سزائے موت     No IMG     بہاولپور جلسے میں کم تعداد پر عمران خان برہم لیکن پارٹی عہدیداران نے ایسی بات بتادی کہ کپتان کیساتھ جہانگیر ترین بھی حیران پریشان     No IMG     اکرام گنڈا پور کے قافلے پر خود کش حملہ، ڈرائیور شہید، تحریک انصاف کے امیدوار اور 2 پولیس اہلکاروں سمیت 6 افراد زخمی     No IMG     پاکستان اچھا کھیلاہم بہت براکھیلے،زمبابوین کھلاڑی کا اعتراف     No IMG     پاکستان سمیت دنیا بھر میں28 جولائی کو مکمل چاند گرہن ہوگا     No IMG     حنیف عباسی کا فیصلہ انصاف کے اصولوں پر مبنی نہیں , شہباز شریف     No IMG     سعودی عرب غیر ملکی ٹرک ڈرائیوروں پر پابندی سے ماہانہ 200ملین ریال کا نقصان ہوگا     No IMG     امریکہ میں کال سینٹر اسکینڈل میں ملوث 21 بھارتی شہریوں کو20 سال تک کی سزا     No IMG     اسرائیی حکومت نے القدس میں سرنگ کی مزید کھدائی کی منظوری دے دی     No IMG     ویتنام کے شمالی علاقوں میں سمندری طوفان سے 20 افراد ہلاک اور14 زخمی ہوگئے     No IMG     شیخ رشید کا کہنا ہے کہ حنیف عباسی کو عمر قید کی سزا ملنے سے اب این اے 60 راولپنڈی کا الیکشن یکطرفہ ہو جائے گا     No IMG     حنیف عباسی نے انسداد منشیات عدالت کی جانب سے دی گئی عمرقید کو ہائیکورٹ میں چیلنج کرنے کا اعلان     No IMG     اسرائیل کے مجرمانہ حملوں میں 4 فلسطینی شہری شہید     No IMG    

روہنگیا مسلمانوں پر کوئی ظلم نہیں کیا اورنہ ہی خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی کے واقعات میں ملوث ہیں۔ : برمی فوج
تاریخ :   14-11-2017

میانمار (ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو) کی فوج نے کہا ہے کہ اس نے مغربی ریاست راکھین میں آباد روہنگیا مسلمانوں پر کوئی مظالم نہیں ڈھائے اور نہ ہی اس کے اہلکار مسلمانوں کے قتل اور خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی کے واقعات میں ملوث ہیں۔

تاہم میانمار کی فوج نے راکھین میں مبینہ شدت پسندوں کے خلاف کی جانے والی فوجی کارروائی کے انچارج جنرل کا تبادلہ کردیا ہے جس کی کوئی وجہ نہیں بتائی گئی۔

میجر جنرل موانگ موانگ سو برمی فوج کے مغربی کمانڈ کے سربراہ تھے جو راکھین میں کی جانے والی کارروائیوں کی نگرانی کر رہے تھے۔

اگست کے اواخر میں شروع ہونے والی ان کارروائیوں کے نتیجے میں اب تک چھ لاکھ سے زائد روہنگیا مسلمان راکھین سے ہجرت کرکے پڑوسی ملک بنگلہ دیش میں پناہ لے چکے ہیں۔

میانمار کی فوج کے شعبہ تعلقاتِ عامہ کے نائب سربراہ میجر جنرل آئے لوئن نے خبر رساں ادارے ‘رائٹرز’ کو بتایا ہے کہ جنرل موانگ سو کے تبادلے کی کوئی وجہ نہیں بتائی گئی اور انہیں تاحال کوئی اور عہدہ بھی نہیں دیا گیا ہے۔

جنرل موانگ سو کے تبادلے کا حکم جمعے کو جاری کیا گیا اور ان کی جگہ بریگیڈیئر جنرل سو ٹنٹ نائنگ کو مغربی کمانڈ کا نیا سربراہ مقرر کردیا گیا ہے۔

میانمار کی فوج نے پیر کو راکھین میں پیش آنے والے مبینہ مظالم سے متعلق محکمہ جاتی تحقیقات کی ایک رپورٹ بھی جاری کی ہے جس میں سکیورٹی فورسز کے اہلکاروں کو روہنگیا مسلمانوں کے خلاف کسی بھی کارروائی سے بری الذمہ قرار دیا گیا ہے۔

برمی فوج کے سربراہ سینئر جنرل مِن انگ ہلینگ کے فیس بک بیج پر جاری کی جانے والی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ تحقیقات کے دوران برمی سکیورٹی فورسز کے روہنگیا مسلمانوں کے خلاف کسی کارروائی میں ملوث ہونے کے کوئی ثبوت نہیں ملے۔

رپورٹ کے مطابق تحقیقات کے دوران روہنگیا مسلمانوں کے 54 دیہات کے 2817 رہائشیوں سے انٹرویوز کیے گئے جنہوں نے کہا کہ بری فوجیوں نے نہ تو “معصوم دیہاتیوں” پر کوئی فائرنگ کی اور نہ ہی وہ خواتین کے خلاف کسی قسم کے جنسی جرائم میں ملوث ہوئے

رپورٹ کے مطابق تمام دیہاتیوں نے کسی قسم کی مار پیٹ، لوٹ مار اور مساجد اور گھروں کا آگ لگانے کی کارروائیوں کے الزامات کی بھی تردید کی۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ برمی فوج نے روہنگیا جنگجووں کے خلاف صرف چھوٹے ہتھیار استعمال کیے اور فوجیوں کی جانب سے “طاقت کے بے محابا استعمال” کا کوئی ثبوت نہیں ملا۔

برمی فوج نے یہ رپورٹ امریکی وزیرِ خارجہ ریکس ٹلرسن کے دورۂ میانمار سے دو روز قبل جاری کی ہے۔

سیکریٹری ٹلرسن بدھ کو میانمار پہنچ رہے ہیں جہاں توقع ہے کہ وہ برمی فوج کی راکھین میں کارروائیوں سے متعلق امریکہ کے سخت موقف کا اعادہ کریں گے۔

امریکی کانگریس کے کئی ارکان روہنگیا مسلمانوں پر مظالم کے ردِ عمل میں میانمار کے فوجی رہنماؤں پر سفری پابندیاں اور میانمار پر معاشی قدغنیں عائد کرنے کی حمایت کر رہے ہیں۔

میانمار کی حکومت اقوامِ متحدہ کی اس ٹیم کو بھی روہنگیا مسلمانوں کے علاقے کا دورہ کرنے کی اجازت نہیں دے رہی جسے اکتوبر 2016ء میں علاقے میں کی جانے والی فوجی کارروائی کے دوران انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے الزامات کی تحقیقات کا ہدف دیا گیا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*