گجرانوالہ میں یوم پاکستان کی تقریب میں سکول کی دیوار گرنے سے 6 افراد جاں بحق     No IMG     79 واں یوم پاکستان: وفاقی دارالحکومت میں مسلح افواج کی شاندار پریڈ     No IMG     پاک فوج نے ایک آپریشن میں 4 مغوی ایرانی فوجیوں کو بازیاب کرالیا     No IMG     دنیا بھر میں آج ہندو برادری اپنا مذہبی تہوار ہولی منا رہی ہے     No IMG     افغانستان کے صوبے ہرات میں سیلاب سے 13 افراد کے جاں بحق ہونے سے ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 63 ہوگئی     No IMG     لیبیا میں پناہ گزینوں کو لے جانے والی کشتی ڈوب گئی جس کے نتیجے میں 9 افراد ہلاک     No IMG     اسرائیلی دہشت گردی، غرب اردن میں مزید3 فلسطینیوں کو شہید کردیا     No IMG     پیپلز پارٹی کےچیئرمین نے 3 وفاقی وزرا کو فارغ کرنے کا مطالبہ کردیا     No IMG     وزیراعظم عمران خان کی ہولی کے تہوار پر ہندو برادی کو مبارک باد     No IMG     سابق وزیراعظم نوازشریف نے ای سی ایل سے نام نکالنے کی درخواست دائر کردی     No IMG     سمجھوتہ ایکسپریس کیس کا فیصلہ 12 سال بعد بھی تاخیر کا شکار     No IMG     وزیر اعظم آئین کے آرٹیکل 214 کی شق دو اے پر عمل کرنے میں ناکام     No IMG     روس کے وزیر دفاع سرگئی شویگو نے شام کے صدر بشار اسد سے ملاقات     No IMG     بھارت اور پاکستان متنازع معاملات مذاکرات کے مذاکرات کے ذریعے حل کریں,چین     No IMG     بریگزیٹ پرٹریزامے کی حکمت عملی انتہائی کمزورہے، ٹرمپ     No IMG    

روس نے آئیندہ ماہ سوویت یونین کے خاتمے کے بعد سے اب تک کی سب سے بڑی فوجی مشقیں منعقد کرنے کا اعلان
تاریخ :   28-08-2018

ماسکو( ورلڈ فاسٹ نیوزفاریو ) روس نے آئیندہ ماہ سوویت یونین کے خاتمے کے بعد سے اب تک کی سب سے بڑی فوجی مشقیں منعقد کرنے کا اعلان کیا ہے۔روس کے وزیر دفاع سرگی شوئیگو نے آج منگل کے روز ان مشقوں کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ ان میں چین اور منگولیا کی فوجیں بھی حصہ لیں گی۔

واسٹوک 2018 سے موسوم یہ مشقیں روسی افواج کے مرکزی اور مشرقی علاقوں میں منعقد ہوں گی جن میں تین لاکھ فوجی، ایک ہزار جہاز، دو روسی بحری بیڑے اور اُن سے ملحقہ تمام ہوائی یونٹ شریک ہوں گے۔یہ بڑے پیمانے کی فوجی مشقیں ایسے وقت منعقد ہو رہی ہیں جب مغربی ممالک اور روس کے درمیان شدید کشیدگی پائی جاتی ہے اور روس اپنی مغربی سرحد سے متصل علاقوں میں نیٹو فوجوں کے اجتماع پر تنقید کرتا رہا ہے۔نیٹو کا کہنا ہے کہ اُس نے یہ فوجی اجتماع 2014 میں یوکرین کے شہر کرائمیا پر قبضہ کرنے کے اقدام کے بعد ممکنہ روسی جارحیت کی روک تھام کی خاطر کیا ہے۔11 سے 15 ستمبر تک منعقد ہونے والی مجوزہ روسی فوجی مشقوں سے ممکنہ طور پر جاپان کی پریشانی میں بھی اضافہ ہو سکتا ہے۔ جاپان پہلے ہی مشرق بعید میں روسی فوجوں کے اجتماع پر پریشانی کا اظہار کر چکا ہے۔ روس نے رد عمل میں کہا تھا کہ اُس کا یہ اقدام جاپان کی طرف سے امریکی ساخت کے ایجز میزائل نظام کی تنصیب کے جواب میں کیا گیا ہے۔روسی فوجی مشقوں کے دوران ہی جاپانی وزیر اعظم شنزو آبے روسی شہر ولادی واسٹک میں ایک فورم میں شرکت کریں گے۔اُدھر جاپانی وزارت خارجہ کے ایک اہلکار کا کہنا ہے کہ جاپان روس اور چین کے درمیان فوجی تعاون کی بدلتی ہوئی صورت حال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔روسی وزیر دفاع شائیگو نے روسی شہر خاکیشیا کے دورے کے دوران میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ آئیندہ ماہ ہونے والی فوجی مشقیں 1981 میں سوویت فوجی مشقوں زاپیڈ۔81 کے بعد سے سب سے بڑی فوجی مشقیں ہوں گی۔

Print Friendly, PDF & Email
سعودی عرب,خواتین جہاز اڑنے کی تربیت حاصل کریں گی
سابق وزیر داخلہ چوہدری نثار کا بیرون ملک قیام کرنے کا فیصلہ
Translate News »