وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر سے پاک برطانیہ اور پاکستان سکاٹ لینڈ بزنس کونسل کے وفد کی ملاقات     No IMG     حکومت کو شدید مشکلات کا سامنا آئی ایم ایف نے بیل آوٹ پیکج کیلئے اپنی شرائط سخت کردیں     No IMG     آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا آرمی سروس کور سینٹر نوشہرہ کا دورہ     No IMG     جاپانی وزیراعظم شینزو آبے آسٹریلیا پہنچ گئے     No IMG     کیلیفورنیا ,کی جنگلاتی آگ ، ہلاکتوں کی تعداد 63 ہو گئی     No IMG     برطانوی وزیراعظم کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک اگلے ہفتے پیش ہو سکتی ہے     No IMG     ملائیشین ہائی کمشنر اکرام بن محمد ابراہیم کی وزیراعظم عمران خان سے ملاقات     No IMG     امریکی بلیک میلنگ کا مقصد حماس کی قیادت کو نشانہ بنانا ہے     No IMG     زمبابوے بس میں گیس سیلنڈر پھٹنے سے 42 افراد ہلاک جبکہ متعدد افراد زخمی ہوگئے     No IMG     زلفی بخاری کیس: ’دوستی پر معاملات نہیں چلیں گے‘ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار     No IMG     غزہ پرحملے, اسرائیل کو 40 گھنٹوں میں 33 ملین ڈالر کا نقصان     No IMG     تنخواہیں واپس لے لیں سپریم کورٹ کاحکم آتے ہی افسران سیدھے ہو گئے     No IMG     پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان ابوظہبی ٹیسٹ کا پہلا دن باؤلرز کے نام     No IMG     چودھری پرویز الٰہی اپنے ہی جال میں پھنس گئے     No IMG     ق لیگ نے پاکستان تحریک انصاف کیخلاف بغاوت کردی     No IMG    

جرمنی میں ملک بدری کے ليے شناختی دستاويز پيش نہ کرنے پر سزا
تاریخ :   02-04-2018

جرمنی (ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو)  ميں پينسٹھ ہزار افراد کو اس ليے ملک بدر نہ کيا جا سکا کيونکہ ان کی پاس شناختی دستاويزات نہيں تھے تاہم نئے قوانين کے مطابق دستاويزات کے حصول ميں عدم تعاون کی صورت ميں پناہ گزينوں کو سزا کا سامنا ہو گا۔

جرمنی ميں مقيم جان او نامی نائجيريا کے ايک تارک وطن کو سن 2014 ميں خط موصول ہوا کہ ان کی پناہ کی درخواست مسترد ہو گئی ہے۔ اس وقت جان  جرمنی ميں تين سال گزار چکے تھے۔ اس پيش رفت کے بعد اميگريشن حکام ان کو ملک بدر کرنا چاہتے تھے تاہم شناختی دستاويزات کی عدم موجودگی اس عمل ميں رکاوٹ ثابت ہوئی۔ جان او کا کہنا ہے کہ ان کا پاسپورٹ چوری ہو چکا تھا۔ شناختی دستاويزات کی عدم موجودگی کی صورت ميں کسی بھی ناکام درخواست گزار کو اس کے ملک واپس روانہ کرنا نا ممکن ہے۔

جان او کے وکيل لوتھر پينزر نے ڈوئچے ويلے کو بتايا کہ جان کی جرمنی ميں قيام کی اجازت ميں ہر ماہ ايک مہينے کی توسيع کی جاتی ہے۔ جان کو ہر ماہ اميگريشن حکام کے دفتر جانا پڑتا ہے اور اپنے اجازت نامے ميں توسيع کرانی پڑتی ہے۔ ليکن پناہ کی درخواست نا منظور ہوجانے کے باوجود، کسی نہ کسی طرح جرمنی ميں قيام کرنے والوں ميں جان او تنہا نہيں۔ اس وقت بھی ہزاروں تارکين وطن ايسے ہيں، جو شناختی دستاويز کی عدم موجودگی، طبی بنيادوں يا پھر ديگر وجوہات کی بنا پر ملک بدری سے بچے ہوئے ہیں۔

جرمن وزارت داخلہ کے مطابق پچھلے سال پينسٹھ ہزار ناکام درخواست گزاروں کو قيام کی عارضی اجازت صرف اس ليے دی گئی کيوں کہ انہيں ملک بدر کرنے کے ليے لازمی شناختی دستاويزات دستياب نہيں تھے۔ اس سے پچھلے سال يعنی سن 2016 ميں يہ تعداد اس کے نصف سے بھی کم تھی۔ جرمن پوليس يونين کے چيئرمين ارنسٹ والتھر کا کہنا ہے کہ اس تعداد ميں اضافہ سن 2015  اور سن 2016 ميں بڑی تعداد ميں مہاجرين کی آمد سے جڑا ہے۔ جرمنی ميں ملک بدری کی ذمہ داری وفاقی جرمن پوليس کے سپرد ہے۔ والتھر نے ڈی ڈبليو کو بتايا، ’’اس کا تعلق اس امر سے بھی ہے کہ ملک بدری سے بچنے کے ليے متعدد افراد اپنی شناخت چھپانے لگے ہيں۔

جرمن پوليس يونين کے چيئرمين نے مزید بتايا کہ مہاجرين کی شناخت کے تعين کے ليے ان کے ليے متبادل پاسپورٹس کا حصول ناگزير ہے۔ والتھر کے بقول اس ضمن ميں حکام مختلف ممالک کے حکام کے ساتھ رابطے ميں رہتے ہيں ليکن يہ عمل پيچيدہ ہوتا ہے اور اس ميں وقت بھی کافی لگ جاتا ہے۔ وزارت داخلہ کی ايک اندرونی رپورٹ کے مطابق متعلقہ بھارتی اداروں سے متبادل پاسپورٹ کے حصول کا عمل انتہائی مشکل اور نہ ہونے کے برابر ہے، پاکستان سے اس ميں تاخير لگتی ہے اور لبنان سے متبادل پاسپورٹ ساز و نادر ہی ملتے ہيں۔

اس صورتحال کو تبديل کرنے کے ليے ان دنوں وزارت داخلہ تارکين وطن کے آبائی ممالک پر زور ڈال رہی ہے۔ اس سلسلے ميں تعاون نہ کرنے والے ممالک کی ترقياتی امداد ميں کٹوتی بھی چند حلقوں ميں زير غور ہے۔ تاہم قوی امکانات يہ ہيں کہ جرمن وزارت برائے اقتصادی تعاون و ترقی مالی معاونت کا راستہ اختيار کرے گی۔ جرمن وزير برائے اقتصادی تعاون و ترقی گيئرڈ مولر نے اعلان کيا ہے کہ عراق، نائجيريا، افغانستان اور پاکستان جيسے ملکوں ميں ملک بدر کيے گئے نوجوانوں کو روزگار کے مواقع فراہم کرنے اور ان کی ٹريننگ پر سالانہ پانچ سو ملين يورو خرچ کيے جائيں گے۔

 

Print Friendly, PDF & Email
افغانستان کے شمالی صوبے قندوز میں مدرسے پر فضائی حملہ، درجنوں ہلاکتیں
جڑانوالہ سابق وزیر اعظم نواز شریف پر اچھالا جانے والا جوتا دس لاکھ روپےمیں خریدنے کا اعلان

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »