آشیانہ ہاؤسنگ اسکینڈل میں اپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی شہباز شریف پر فرد جُرم عائد کر دی گئی     No IMG     محکمہ موسمیات کی پیش گوئی 19سے 26فروری تک ملک بھر میں بارشوں کی نیا سلسلہ شروع ہونے والا ہے     No IMG     وزیراعظم عمران خان کا سعودی عرب میں مقیم پاکستانیوں کیلئے بڑا مطالبہ     No IMG     حکمرانوں کے تمام حلقے کشمیر کے معاملے پر خاموش ہیں, مولانا فضل الرحمان     No IMG     پاکستان, میں 20ارب ڈالرز کی سرمایہ کاری کا پہلا مرحلہ مکمل ہوگیا: سعودی ولی عہد     No IMG     لاہور قلندرز 78 رنز پر ڈھیر     No IMG     ابو ظہبی میں ہتھیاروں کے بین الاقوامی میلے کا آغاز     No IMG     برطانوی ہوائی کمپنی (Flybmi) دیوالیہ، سینکڑوں مسافروں کو پریشانی     No IMG     یورپ میں قانونی طریقے سے داخل ہونے والے افراد کی طرف سے سیاسی پناہ کی درخواستیں دیے جانے کا رجحان بڑھ رہا ہے     No IMG     ٹرین کے ٹائلٹ میں پستول، سینکڑوں مسافر اتار لیے گئے     No IMG     یورپی یونین ,کے پاسپورٹوں کا کاروبار ’ایک خطرناک پیش رفت     No IMG     بھارت نے کشمیری حریت رہنماؤں کو دی گئی سیکیورٹی اورتمام سرکاری سہولتیں واپس لے لی     No IMG     پی ایس ایل کے چھٹے میچ میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے اسلام آباد یونائیٹڈ کو 7وکٹوں سے شکست دےدی     No IMG     وزیرخارجہ کا ایرانی ہم منصب کو ٹیلیفون     No IMG     سعودی ولی عہد کا پاکستان میں تاریخی اور پُرتپاک استقبال     No IMG    

بھارت کی سپریم کورٹ کے چار موجودہ ججوں نے چیف جسٹس آف انڈیا دیپک مشرا کے خلاف محاذ کھول دیا
تاریخ :   12-01-2018

نئی دہلی (ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو)بھارت کی سپریم کورٹ کے چار موجودہ ججوں نے چیف جسٹس آف انڈیا دیپک مشرا کے خلاف محاذ کھول دیا ہے اور ان کے خلاف عملاً بغاوت کر دی ہے۔

چاروں ججوں نے غیر معمولی قدم اٹھاتے ہوئے جمعے کو نئی دہلی میں ایک نیوز کانفرنس کی جس میں چیف جسٹس کے طریقۂ کار پر اپنی ناراضی کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اگر سپریم کورٹ کو نہیں بچایا گیا تو ملک سے جمہوریت ختم ہو جائے گی۔

چیف جسٹس کے بعد سپریم کورٹ کے سب سے سینئر جج جسٹس چیلا میشورم نے دیگر ججوں رنجن گوگوئی، مدن لوکور اور کورین جوزف کے ساتھ صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کسی بھی ملک کے قانون کے لیے آج کا دن بہت بڑا ہے۔ یہ بہت بڑا واقعہ ہے کیونکہ ہمیں میڈیا سے بات کرنے کے لیے مجبور ہونا پڑا۔

انھوں نے کہا کہ ہم نے پریس کانفرنس اس لیے کی تاکہ کوئی یہ نہ کہہ سکے کہ ہم نے اپنی روح گروی رکھ دی ہے۔

ان چاروں جج حضرات نے چیف جسٹس کے طریقۂ کار کی مخالفت کرتے ہوئے چار ماہ قبل انھیں ایک مکتوب لکھا تھا جس میں انتہائی اہم مقدمات کو ان لوگوں سے لے کر جونیئر ججوں کے حوالے کرنے پر ناپسندیدگی ظاہر کی گئی تھی۔

پریس کانفرنس کے دوران ججوں کا کہنا تھا کہ انھیں سہراب الدین جعلی مقابلے کی تحقیقات کرنے والے جسٹس بی ایچ لویا کی پراسرار موت کے معاملے کو ایک جونیئر بینچ کے سپرد کرنے پر بھی تحفظات ہیں۔

ججوں نے کہا کہ جسٹس لویا کی موت کے بارے میں دائر مفادِ عامہ کی عذرداری کو سماعت کے لیے پہلے چار بینچوں کے بجائے کورٹ نمبر دس کے سپرد کیا گیا۔

ججوں نے یہ بھی کہا کہ انہوں نے اپنی گزارشات کے ساتھ جسٹس دیپک مشرا سے ملاقات کی تھی مگر وہ قائل نہیں ہوئے۔ لہٰذا ان کے بقول ہمارے پاس اس کے سوا کوئی چارہ نہیں تھا کہ ہم میڈیا کے توسط سے قوم سے مخاطب ہوں۔

ججوں نے کہا کہ انہوں نے اصلاحی قدم اٹھانے کی کئی بار کوشش کی مگر بد قسمتی سے وہ ناکام رہے۔ انھوں نے زور دے کر کہا کہ سپریم کورٹ میں ایڈمنسٹریشن ٹھیک نہیں چل رہی ہے۔

جج حضرات نے کہا کہ چیف جسٹس مساوی حیثیت کے ججوں میں اول ہیں اور اس کے علاوہ کچھ نہیں۔ اگر عدلیہ غیر جانبدار نہیں رہے گی تو ملک سے جمہوریت کا خاتمہ ہو جائے گا۔

انھوں نے یہ بھی کہا کہ وہ عدلیہ میں بدعنوانیوں کو اجاگر کرنا چاہتے ہیں مگر چیف جسٹس اس ضمن میں کچھ نہیں کر رہے ہیں۔

جب ان ججوں سے پوچھا گیا کہ کیا چیف جسٹس کو ان کے منصب سے برطرف کر دیا جانا چاہیے؟ تو انھوں نے کہا کہ قوم کو ان کے مواخذے کے بارے میں فیصلہ کرنے دیا جائے۔

چاروں ججوں نے بیک آواز کہا کہ عدلیہ میں بہت سی ناپسندیدہ باتیں ہو رہی ہیں۔

نیوز کانفرنس سے چند منٹ قبل سپریم کورٹ کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا تھا کہ جسٹس لویا کی پراسرار موت ایک سنگین معاملہ ہے اور عدالت نے مہاراشٹر حکومت سے کہا ہے کہ وہ اس معاملے سے متعلق تمام دستاویزات پیر کو عدالت میں پیش کرے۔

جسٹس لویا گجرات کے سہراب الدین جعلی مقابلے کی سماعت کر رہے تھے جس میں بی جے پی کے صدر امت شاہ کلیدی ملزم ہیں اور وہ اس معاملے میں جیل بھی کاٹ چکے ہیں۔

جج کے اہلِ خانہ نے ان کی پراسرار موت پر سوال اٹھایا تھا اور ان کی ایک بہن نے الزام لگایا تھا کہ انھیں کروڑوں روپے کی پیشکش کی گئی تھی۔

وہ کئی ججوں کے ساتھ ایک شادی میں گئے ہوئے تھے جہاں رات کو پراسرار طور پر ان کی موت واقع ہو گئی تھی۔ اس معاملے پر کافی ہنگامہ ہوا تھا اور سپریم کورٹ سے از خود نوٹس لے کر کارروائی کرنے کی اپیلیں کی گئی تھیں لیکن عدالت نے کوئی قدم نہیں اٹھایا تھا۔

جج حضرات نے جو مکتوب لکھا ہے اس میں انھوں نے کہا ہے کہ چیف جسٹس مقدمات کی تقسیم میں قوانین کی پابندی نہیں کر رہے ہیں۔ وہ اہم معاملوں کو جو سپریم کورٹ کی یکجہتی کو متاثر کرتے ہوں اپنی پسند کے بینچوں کے حوالے کر دیتے ہیں جس سے عدلیہ کا وقار مجروح ہو رہا ہے۔

جمعے کو ہونے والی ججوں کی پریس کانفرنس میں کئی سینئر وکلا نے بھی شرکت کی جن میں سابق اٹارنی جنرل سولی سوراب جی بھی شامل تھے۔ بعض سابق ججوں نے بھی پریس کانفرنس کرنے والے جج حضرات کے اس اقدام کی حمایت کی ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
ایران ,کے مختلف شہروں میں نظام کے خلاف احتجاجی تحریک کا سلسلہ جاری 8000 افراد گرفتار
بچوں کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے والے ایک گروہ کے آٹھ ارکان کو گرفتار کر لیا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »