چودھری پرویزالٰہی سے فردوس عاشق اعوان کی ملاقات     No IMG     یوکرین کے مزاحیہ اداکار ملک کے صدر منتخب     No IMG     وزیروں کو نکالنے سے سلیکٹڈ وزیراعظم کی نااہلی نہیں چھپے گی, بلاول بھٹو زرداری     No IMG     ایران کے صدر حسن روحانی نے تہران میں سعد آباد محل میں پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کا باقاعدہ اور سرکاری طور پر استقبال     No IMG     بھارت اور چین کے مابین پیر کے روز بیجنگ میں باہمی فیصلہ کن مذاکرات کا آغاز     No IMG     بھارتی وزیر اعظم,ہمارا پائلٹ واپس نہ کیا جاتا تو اگلی رات خون خرابے کی ہوتی     No IMG     ملکی سیاسی پارٹیاں ووٹ تو غریبوں ،محنت کشوں کے نام پر لیتی ہیں مگر تحفظ جاگیرداروں اور مافیاز کو دیتی ہیں ,جواد احمد     No IMG     افغان سپریم کورٹ نے صدر کے انتخاب تک صدر اشرف غنی کی مدت صدارت میں توسیع کردی     No IMG     آزاد کشمیر میں منڈا بانڈی کے مقام پر ایک جیپ کھائی میں گرنے سے 5 افراد ہلاک     No IMG     مصرمیں صدرکےاختیارات میں اضافے کےلیے ہونےوالے تین روزہ ریفرنڈم میں ووٹ ڈالنےکا سلسلہ جاری ہے     No IMG     لاہور میں 3 منزلہ خستہ حال گھر زمین بوس ہونے کے نتیجے میں خاتون سمیت 6 افراد جاں بحق جبکہ 4 افراد زخمی     No IMG     وزیراعظم عمران خان ایران کے پہلے سرکاری دورے پر تہران پہنچ گئے     No IMG     سری لنکا میں کل ہونے والے آٹھ بم دھماکوں کے نتیجے میں 300 افراد ہلاک اور 500 زخمی     No IMG     وزیراعظم عمران خان نے مکران کوسٹل ہائی وے پر دہشت گردی کی سخت مذمت کرتے ہوئے حکام سے واقعے پر رپورٹ طلب کر لی     No IMG     افغانستان اور افغان طالبان کے درمیان مذاکرات ایک مرتبہ پھر کھٹائی میں پڑتے دکھائی دے رہے ہیں     No IMG    

بھارت میں صدی کا بدترین سیلاب سینکڑوں افراد ہلاک اور لاکھوں بے گھر
تاریخ :   19-08-2018

کیرالا ( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو ) جنوبی بھارتی ریاست کیرالا میں گزشتہ ایک صدی کے دوران آنے والے بدترین سیلاب کے باعث اب تک سینکڑوں افراد ہلاک اور لاکھوں بے گھر ہو چکے ہیں۔ بے گھر سیلاب زدگان کے لیے چار ہزار عارضی رہائشی کیمپ قائم کیے جا چکے ہیں۔

کیرالا کے شہر چینگانور سے اتوار انیس اگست کو ملنے والی نیوز ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس کی رپورٹوں کے مطابق حکام نے آج بتایا کہ اب تک یہ سیلاب 350 سے زائد شہریوں کی ہلاکت کی وجہ بن چکے ہیں۔ اس کے علاوہ اپنے گھروں اور رہائشی علاقوں کے پوری طرح زیر آب آ جانے کے نتیجے میں بے گھر ہو جانے والے شہریوں کی تعداد بھی آٹھ لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے۔
کیرالا میں قدرتی آفات سے نمٹنے کے محکمے کے اعلیٰ اہلکار پی ایچ کوریان نے بتایا، ’’ہزاروں کی تعداد میں امدادی کارکن متاثرین کی مدد کرنے میں مصروف ہیں۔ چاروں طرف سے پانی میں گھرے ہوئے علاقوں میں سینکڑوں کشتیوں اور دو درجن کے قریب ہیلی کاپٹروں کی مدد سے متاظرین تک ہنگامی امدادی سامان پہنچایا جا رہا ہے۔‘‘
کوریان نے نیوز ایجنسی اے پی کو بتایا کہ اب بھی قریب 10 ہزار افراد ایسے ہیں، جو ہر طرف سے پانی میں گھرے ہوئے ہیں اور اپنے گھروں یا مکانات کی چھتوں پر مدد کے انتطار میں ہیں۔ انہوں نے کہا، ’’ہم ان تقریاﹰ دس ہزار متاثرین کو بھی کل پیر کے دن تک ریسکیو کر لیں گے۔‘‘

کیرالا ہی میں ریاستی حکومت کے دیگر اہلکاروں کے مطابق آٹھ لاکھ بے گھر شہریوں کے لیے چار ہزار کے قریب عارضی رہائشی کیمپ قائم کیے جا چکے ہیں اور امید ہے کہ ان کی مدد کا کام آئندہ دنوں میں زیادہ تیز رفتاری سے کیا جا سکے گا کیونکہ اب بارشیں کچھ کم ہو گئی ہیں۔ لیکن بیس اگست کے دن متاثرین کی مدد کا کام ایک بار پھر اس لیے مشکلات کا شکار ہو سکتا ہے کہ بھارت میں مون سون کے موسم کے عروج پر موسمیاتی ماہرین نے پیر کے روز پوری ساحلی ریاست کیرالا میں نئے سرے سے شدید بارشوں کی پیش گوئی کی ہے۔
ادھر پریس ٹرسٹ آف انڈیا نے بتایا ہے کہ کیرالا کی ہمسایہ بھارتی ریاستوں مدھیہ پردیش اور مہاراشٹر سے کم از کم دو ریل گاڑیاں بہت سا امدادی سامان لے کر کیرالا کے لیے روانہ ہو چکی ہیں۔ بھارتی ریلوے کے ایک مرکزی اعلیٰ افسر کے مطابق ان ریل گاڑیوں کے ذریعے کیرالا کے سیلابی متاثرین کے لیے ہنگامی امدادی سامان اور اشیائے خوراک کے علاوہ پینے کا قریب 1.5 ملین لٹر صاف پانی بھی بھیجا جا رہا ہے۔
کیرالا میں یہ سیلاب ان مسلسل شدید بارشوں کے بعد آئے تھے، جو ملک کے کئی حصوں میں آٹھ اگست کو شروع ہوئی تھیں۔ یہ سیلاب اتنے شدید تھے کہ گزشتہ ایک صدی کے دوران کم از کم کیرالا میں اس کی کوئی مثال نہیں ملتی۔ ان سیلابوں کے دوران زیادہ تر ہلاکتیں لینڈ سلائیڈنگ، مکانات کے منہدم ہو جانے اور بنیادی ڈھانچے کو پہنچنے والے شدید نقصان کے نتیجے میں ہوئی تھیں۔
سیلاب کی تباہ کاریوں کے نتیجے میں کیرالا میں اب تک بہت سے پل بھی منہدم ہو چکے ہیں جبکہ مجموعی طور پر 10 ہزار کلومیٹر سے زیادہ طویل روڈ نیٹ ورک کو بھی بری طرح نقصان پہنچا ہے۔ سیلاب ہی کی وجہ سے گزشتہ منگل کے دن سے ریاست کے بڑے ہوائی اڈوں میں شمار ہونے والا کوچی شہر کا ایئر پورٹ بھی بند ہے، جو شاید 26 اگست کو دوبارہ کھولا جا سکے گا۔

Print Friendly, PDF & Email
فلسطین:یہودی انتہا پسندوں کی آج مسجد اقصیٰ میں تلمودی نماز کی ادائی کی دعوت
آسٹریا کی وزیر خارجہ کی شادی، روسی صدر کا رقص
Translate News »