آرمی چیف سے بحرین نیشنل گارڈ کے کمانڈر کی ملاقات     No IMG     اسرائیل کی جیل میں آگ بھڑک اٹھی، کئی کمرے جھلس گئے     No IMG     اسرائیلی فوج کی گھر گھر تلاشی15 فلسطینی شہری گرفتار     No IMG     وزیر ریلوے شیخ رشید کی نا اہلی کے لیے الیکشن کمیشن میں درخواست دائر     No IMG     فضائی حدود کی بندش، ائیرانڈیا کو کروڑوں کا نقصان     No IMG     دہشت گردی کا کوئی دین اور نسل نہیں ہوتی ,سعودی وزیر خارجہ     No IMG     ایران، عراق اور شامی افواج کے خون نے تینوں ممالک کے درمیان تعلقات کو مزید مضبوط بنایا, بشار الاسد     No IMG     آصف زرداری اور فریال تالپور کی 10 دن کے لیے حفاظتی ضمانت منظور     No IMG     سابق وزیراعلی شہباز شریف کے خلاف ایک اور انکوائری شروع     No IMG     کینیڈین وزیر اعظم جسٹس ٹروڈو نے نیوزی لینڈ میں دہشت گردی کے واقعہ کی مذمت     No IMG     روسی صدر پوتن نے کہا ہے کہ وہ روس میں کرائسٹ چرچ جیسا دہشت گرد حملہ نہیں ہونے دیں گے     No IMG     برطانوی حکام نے نیوزی لینڈ کی مسجدوں میں ہوئی دہشت گردی کی طرز پر برطانیہ میں بھی واقعات پیش آنے کا خدشہ     No IMG     نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ کے پہلے اجلاس کا آغاز تلاوت کلام پاک سے ہوا     No IMG     نیوزی لینڈ مساجد پر دہشت گرد حملے سے متعلق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اپنے بیان پر میڈیا کی تنقید سے برہم     No IMG     نیوزی لینڈ کی قومی فٹسل ٹیم کے گول کیپر عطا الیان بھی کرائسٹ چرچ واقعے میں شہید     No IMG    

بھارت مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپ میں 4 شہری ہلاک اور درجنوں زخمی ہو گئے
تاریخ :   02-04-2018

ممبئی( ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو ) بھارت میں اقلیتوں کا قانون ختم کرنے کے عدالتی فیصلے کے خلاف ہنگامے پھوٹ پڑے جس کے نتیجے میں 4 افراد ہلاک اور سیکڑوں زخمی ہوگئے۔دلت تنظیموں کی جانب سے سپریم کورٹ کے فیصلے کے خلاف ’بھارت بند‘ ہڑتال کے دوران کئی شہروں میں حالات کشیدہ ہوگئے۔ کاروبار، تعلیمی ادارے اور ٹرانسپورٹ مکمل طور پر بند ہے۔ مشتعل افراد سڑکوں پر نکل آئے اور جلاؤ گھیراؤ پتھراؤ شروع کردیا۔ میرٹھ میں ایک تھانے اور کئی گاڑیوں کو جلا دیا گیا، پٹنا میں مختلف مقامات پر ٹرینیں روکی گئیں۔

گوالیار شہر میں بگڑتی صورت حال کو قابو میں رکھنے کے لیے انٹرنیٹ، موبائل اور ٹی وی نشریات پر پابندی کے علاوہ شہر میں کرفیو نافذ کردیا گیا جب فوج کو بھی ہائی الرٹ کردیا گیا۔بھارتی سپریم کورٹ کی جانب سے اقلیتوں کو مظالم سے بچانے کے لیے بنائے گئے ایکٹ (1989 Prevention of Atrocities)کے تحت کی گئی گرفتاریوں اور مقدمات کے اندراج پر پابندی عائد کرنے کے بعد بھارت میں نچلی ذات تصور کیے جانے والی دلت قوم میں بے چینی اور غم و غصے کی لہر دوڑ گئی ہے۔ دلتوں کی نمائندگی کرنے والی تقریباً تمام ہی جماعتوں نے عدالتی فیصلے کے خلاف صوبے بھر میں احتجاج کا اعلان کر رکھا ہے۔

بھارتی حکومت نےسپریم کورٹ کے فیصلے کے خلاف نظر ثانی کی درخواست دائر کردی ہے۔اتر پردیش کے سیاحیت مقام گوالیار میں جاری احتجاج کے دوران حالات کشیدہ ہو گئے ہیں جن سے نمٹنے کے لیے صوبائی حکومت نے نہ صرف یہ کے انٹرنیٹ، موبائل اور ٹی وی نشریات بند کردی ہیں بلکہ شہر میں کرفیو نافذ کردیا ہے۔

اب تک کی موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق گوالیار میں مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپ میں 4 شہری ہلاک اور درجنوں زخمی ہو گئے ہیں۔دوسری جانب وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ کے فیصلے پر نظر ثانی کے لیے پٹیشن دائر کردی گئی ہے جس کے بعد مظاہرین کو پُر امن طور پر منتشر ہو جانا چاہیے تھا لیکن اب بھی لدھیانہ سمیت پنجاب کے دیگر علاقوں میں پُر تشدد ہنگاموں کا سلسلہ جاری ہے جس کے دوران 15 بسوں کو نذر آتش کردیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ 20 مارچ کو بھارتی سپریم کورٹ نے اقلیتوں کے تحفظ کو یقینی بنانے لیے نافذ کیے گئے ایکٹ 1989 کے تحت خودکار گرفتاریوں اور مقدمات کے اندراج پر پابندی عائد کردی تھی۔ دلت سمیت اقلیتی برادریوں نے اس پابندی کے خلاف ملک گیر احتجاج کا اعلان کیا تھا۔

Print Friendly, PDF & Email
جڑانوالہ کی تمام تاجر تنظیوں منگل کو شٹر ڈاؤن ہڑتال کرنے کا اعلان
وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف سے ماڈل ٹاؤن میں چوہدری نثار کی ملاقات

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »