محکمہ موسمیات کی پیش گوئی 19سے 26فروری تک ملک بھر میں بارشوں کی نیا سلسلہ شروع ہونے والا ہے     No IMG     وزیراعظم عمران خان کا سعودی عرب میں مقیم پاکستانیوں کیلئے بڑا مطالبہ     No IMG     حکمرانوں کے تمام حلقے کشمیر کے معاملے پر خاموش ہیں, مولانا فضل الرحمان     No IMG     پاکستان, میں 20ارب ڈالرز کی سرمایہ کاری کا پہلا مرحلہ مکمل ہوگیا: سعودی ولی عہد     No IMG     لاہور قلندرز 78 رنز پر ڈھیر     No IMG     ابو ظہبی میں ہتھیاروں کے بین الاقوامی میلے کا آغاز     No IMG     برطانوی ہوائی کمپنی (Flybmi) دیوالیہ، سینکڑوں مسافروں کو پریشانی     No IMG     یورپ میں قانونی طریقے سے داخل ہونے والے افراد کی طرف سے سیاسی پناہ کی درخواستیں دیے جانے کا رجحان بڑھ رہا ہے     No IMG     ٹرین کے ٹائلٹ میں پستول، سینکڑوں مسافر اتار لیے گئے     No IMG     یورپی یونین ,کے پاسپورٹوں کا کاروبار ’ایک خطرناک پیش رفت     No IMG     بھارت نے کشمیری حریت رہنماؤں کو دی گئی سیکیورٹی اورتمام سرکاری سہولتیں واپس لے لی     No IMG     پی ایس ایل کے چھٹے میچ میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے اسلام آباد یونائیٹڈ کو 7وکٹوں سے شکست دےدی     No IMG     وزیرخارجہ کا ایرانی ہم منصب کو ٹیلیفون     No IMG     سعودی ولی عہد کا پاکستان میں تاریخی اور پُرتپاک استقبال     No IMG     پاکستان ,کو زاہدان کے دہشتگردانہ حملے کا جواب دینا ہوگا، ایران     No IMG    

بھارتی جاسوس ,دہشتگرد کلبھوشن یادیو کی بیوی نے جوتے میں کیا چھپا رکھا تھا
تاریخ :   26-12-2017

اسلام آباد۔ (ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو) دفتر خارجہ نے سزا یافتہ جاسوس کلبھوشن یادیو کی اس کی ماں اور اہلیہ کے ساتھ اسلام آباد میں ملاقات کے حوالے سے بھارت کی تنقید کو سختی سے مسترد کردیا ہے اور کہا ہے کہ بھارتی جاسوس کی بیوی کے جوتے میں کچھ تھا اور اس کو سکیورٹی کی بنیاد پر ضبط کر لیا گیا تھا۔

دفتر خارجہ کے ترجمان ڈاکٹر محمد فیصل نے منگل کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’ یادیو کی بیوی چیتن کل کے جوتے میں کچھ تھا اور اب اس کی تحقیقات کی جارہی ہے‘‘۔

انھوں نے مزید کہا کہ چیتن کل کو متبادل جوتا مہیا کردیا گیا تھا اور اس کے زیورات بھی ملاقات کے بعد لوٹا دیے گئے تھے۔ اس خاتون نے بھی اس کی تصدیق کی ہے کہ اس کو جوتے کے سوا سب کچھ واپس کر دیا گیا ہے۔

ڈاکٹر فیصل بھارتی حکومت کے ان الزامات کا جواب دے رہے تھے کہ یادیو کی ماں اور اہلیہ کی ملاقات کے دوران میں ثقافتی اور مذہبی حساسیت کو ملحوظ نہیں رکھا گیا تھا۔سکیورٹی کے پیشگی حفاظتی اقدامات کے تحت ان کی بے توقیری کی گئی تھی۔

بھارت کی خارجہ امور کی وزارت نے یہ شکایت کی تھی کہ ’’ کلبھوشن کی بیوی کا منگل سوترا ، چوڑیاں اور بندی تک اُتار لی گئی تھی اور پورا لباس تبدیل کرنے پر مجبور کیا گیا تھا حالانکہ اس کی ضرورت نہیں تھی‘‘۔

لیکن دفتر خارجہ نے اس دعوے کی تردید کی ہے اور کہا ہے کہ ’’ اگر بھارت کو فی الواقع کوئی سنجیدہ تشویش لاحق تھی تو مہمان یا بھارت کے ڈپٹی ہائی کمشنر کو اس ملاقات کے فوری بعد میڈیا کے سامنے اس کا اظہار کرنا چاہیے تھا‘‘۔

ڈاکٹر محمد فیصل نے اپنے بیان میں مزید کہا ہے کہ ’’ پاکستان الفاظ کی بے مقصد جنگ میں الجھنا نہیں چاہتا ہے۔یہ ایک حقیقت ہے کہ یادیو کی والدہ اونتی نے میڈیا کے لیے جاری کردہ بیان میں پاکستان کا شکریہ ادا کیا تھا اور اپنے بیٹے سے ملاقات کو انسانی جذبہ خیر سگالی کا مظہر قرار دیا تھا۔اس کے سوا کسی اور چیز ضرورت نہیں تھی‘‘۔

بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو سے اس کی والدہ اور بیوی کی دفتر خارجہ، اسلام آباد میں سوموار کے روز قریباً چالیس منٹ تک ملاقات ہوئی تھی۔ان کے درمیان شیشے کی دیوار حائل تھی ۔ انھوں نے انٹرکام کے ذریعے ایک دوسرے سے بات چیت کی تھی۔اس موقع پر بھارت کے ڈپٹی ہائی کمشنر جے پی سنگھ بھی موجود تھے۔

اونتی اور چیتن کل یادیو نے پاکستان سے واپسی کے بعد نئی دہلی میں بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج سے تین گھنٹے تک طویل ملاقات کی تھی اور انھوں نے مس سوراج کو یادیو سے اپنی بات چیت کے بارے میں آگاہ کیا تھا۔اس کے بعد بھارتی وزارت برائے امور خارجہ کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ان کی خوف وہراس کے ماحول میں ملاقات ہوئی تھی اور انھیں ایک دوسرے سے کھل کر بات چیت کا موقع نہیں دیا گیا حتیٰ کہ جب یادیو کی والدہ نے اس سے مادری زبان میں بات کرنے کی کوشش کی تو انھیں روک دیا گیا تھا۔

یاد رہے کہ بھارتی خفیہ ایجنسی را کے جاسوس کلبھوشن سدھیر یادیو کو ایک فوجی عدالت نے پاکستان میں تخریب کاری اور دہشت گردی کی سرگرمیوں میں ملوّث ہونے کے الزامات میں قصور وار قرار دے کر سزائے موت سنائی تھی۔اس نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے رحم کی اپیل کی تھی کہ اس کو سنائی گئی سزائے موت معاف کردی جائے ۔

اس نے ایک ویڈیو بیان میں اقرار کیا تھا کہ بھارت کی خفیہ ایجنسی ریسرچ اینڈ اینالسیس ونگ ( را) نے اس کے ذریعے پاکستان میں دہشت گردی کی مختلف سرگرمیوں کو اسپانسر کیا تھا۔اس نے خاص طور پر بلوچ علاحدگی پسندوں کو تشدد پر اکسایا تھا اور بلوچستان میں ہزارہ شیعہ کمیونٹی پر فرقہ ورانہ بنیاد پر دہشت گردی کے حملوں میں بھی اسی کا ہاتھ کارفرما تھا۔

یادیو کے مطابق را کے ایک اور ایجنٹ انیل کمار نے ہزارہ اور شیعہ شہریوں اور بالخصوص افغانستان ،پاکستان اور ایران کے درمیان سفر کرنے والے شیعہ زائرین پر متشدد حملوں کی پشت پناہی کی تھی۔اس علاقے میں دہشت گردی کی کارروائیوں کا مقصد عدم استحکام پیدا کرنا اور پاکستان کے عوام کے ذہنوں میں خوف پیدا کرنا تھا۔مسٹر یادیو کے بہ قول کراچی میں سپرنٹنڈینٹ پولیس ( ایس پی) چودھری اسلم کے قتل میں بھی را ملوث تھی۔

اس نے بتایا تھا کہ بلوچستان میں پاک فوج کے ایک ذیلی ادارے فرنٹیئر ورکس آرگنائزیشن ( ایف ڈبلیو او) کے ورکروں پر حملوں ،کوئٹہ ،تربت اور بلوچستان کے مختلف شہروں میں بلوچ قوم پرستوں کے بارودی سرنگوں یا دھماکا خیز مواد کے ذریعے حملوں میں براہ راست را کا ہاتھ کارفرما تھا

Print Friendly, PDF & Email
برطانیہ کے قریب روس کی بحری سرگرمیوں میں اضافہ
سابق وزیراعظم میاں محمد نواز شریف نے کہا ہے کہ اب وقت آگیا ہے کہ ہم عدل کی بحالی کا پرچم اٹھائیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »