مریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران کے خلاف اقتصادی پابندیاں مزید سخت کرنے کا حکم دے دیا     No IMG     خورشید شاہ کو نیب نے اسلام آباد سے گرفتار کرلیا     No IMG     لاہور, بھائیوں نے جائیداد کے تنازع پر بہن کو قتل کردیا     No IMG     مسئلہ کشمیر پر پاکستانی قیادت کے موقف میں کوئی لچک نہیں, وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی     No IMG     شہباز شریف کا چوہدری شجاعت حسین سے ٹیلیفونک رابطہ     No IMG     پاک فضائیہ کے سربراہ ائیر چیف مارشل مجاہد انور خان کی چیئر مین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی سے ملاقات     No IMG     وزیراعظم کا نوٹس، ڈی پی او قصور معطل     No IMG     پاکستان کا مقبوضہ کشمیر سے متعلق بھارتی سپریم کورٹ کے فیصلے کا خیر مقدم     No IMG     اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو نے انتخابات سے 2 روز قبل مقبوضہ مغربی کنارے پر نئی یہودی بستیوں کی تعمیر کی منظوری دیدی     No IMG     احتساب عدالت نے اڈیالہ جیل میں قید آصف زرداری سے فیملی ممبرز اور قانونی ٹیم کی ہفتے میں دو دن ملاقات کی درخواست مسترد     No IMG     سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کے تایا انتقال کرگئے     No IMG     سعودی عرب کے قومی دن کے موقع پر 13 ریجنز میں ہونے والی تقریبات مفت ہوں گ     No IMG     مریم نواز کی پارٹی عہدے سے نااہلی سے متعلق کیس کا فیصلہ محفوظ کر لیا جو کل 11 بجے سنایا جائے گا     No IMG     بھارتی سپریم کورٹ نے نریندر مودی حکومت کو مقبوضہ کشمیر میں حالات معمول پر لانے کا حکم دیا     No IMG     وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان اور بھارت میں روایتی جنگ ہوئی تواختتام ایٹمی جنگ پر ہوگا۔     No IMG    

برطانوی ملکہ الزبتھ ثانی نے بریگزٹ سے متعلق ملکی پارلیمان کے منظور کردہ ایک نئے قانون کے لیے اپنی رضا مندی ظاہر کر دی
تاریخ :   09-09-2019

لندن (ورلڈفاسٹ نیوزفاریو–09 ستمبر 2019) برطانوی دارالحکومت لندن سے پیر نو ستمبر کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق پارلیمان کے ایوان بالا یا دارالامراء کے اسپیکر نے آج بتایا کہ ملکہ الزبتھ ثانی نے ہاؤس آف کامنز اور ہاؤس آف لارڈز کے منظور کردہ اس قانون کی حمایت کرتے ہوئے اپنی رضا مندی ظاہر کر دی ہے، جس کے بعد ملکی مقننہ کا یہ فیصلہ قانون بن گیا ہے۔
یوں وزیر اعظم بورس جانسن کے لیے اب یہ نا ممکن ہو گیا ہے کہ وہ اس سال اکتیس اکتوبر کو برطانیہ کے یورپی یونین کے ساتھ کسی ڈیل کے بغیر ہی بریگزٹ کے اپنے ارادوں پر عمل کر سکیں۔ اس سے قبل بورس جانسن نے کئی مرتبہ کہا تھا کہ اگر یونین نے لندن حکومت کے ساتھ کوئی نیا معاہدہ کر لیا تو اچھا ہو گا، ورنہ ان کی حکومت اس بات کو یقینی بنائے گی کہ برطانیہ ‘نو ڈیل بریگزٹ‘ یا ‘ہارڈ بریگزٹ‘ کی صورت میں یونین سے نکل جائے۔ اب لیکن قدامت پسند وزیر اعظم جانسن ایسا نہیں کر سکیں گے۔
بورس جانسن کو اس نئے قانون کے علاوہ بھی آج ہی دو دیگر انتہائی اہم معاملات کا سامنا بھی تھا۔ ایک ان کی آئرلینڈ کے وزیر اعظم سے ملاقات تھی، جس میں بریگزٹ اور ‘بیک سٹاپ‘ پر بات چیت کی جانا تھی۔
دوسری برطانوی پارلیمان کے ایوان زیریں میں یونے والی وہ بحث ہے، جس کے اختتام پر یہ فیصلہ کیا جانا ہے کہ آیا برطانیہ میں قبل از وقت عام انتخابات کرائے جانا چاہییں۔
جانسن کی ان کے آئرش ہم منصب کے ساتھ ملاقات کا نتیجہ یہ نکلا کہ برطانیہ اور آئرلینڈ کی درمیانی سرحد کی آئندہ نگرانی سے متعلق ممکنات کے بارے میں دونوں رہنماؤں کے باہمی اختلافات دور نہ ہو سکے۔ جہاں تک قبل از وقت عام انتخابات کے انعقاد کے ممکنہ فیصلے کا سوال ہے تو آخری خبریں آنے تک پارلیمانی بحث جاری تھی۔
اسی دوران وزیر اعظم بورس جانسن نے اتنا ضرور کہا کہ ملکہ کی طرف سے ‘نو ڈیل بریگزٹ‘ کو روکنے سے متعلق کی گئی پارلیمانی قانون سازی کی منظوری کے بعد اب اگر وہ یونین کے ساتھ کسی نئی ڈیل کے لیے بات چیت کریں گے، تو ان کے ‘ہاتھ بندھے ہوئے ہوں گے‘۔
اس کے علاوہ جانسن نے یہ بھی کہا کہ اب اکتیس اکتوبر کو کوئی ‘نو ڈیل بریگزٹ‘ تو ممکن نہیں، لیکن اگر تب تک یونین کے ساتھ کوئی نیا بریگزٹ معاہدہ بھی طے نہ ہو سکا، تو اس کی ذمے داری جزوی طور پر خود اُن پر بھی عائد ہو گی۔

Print Friendly, PDF & Email
برطانوی حکومت نے پارلیمان کو پانچ ہفتوں کے لیے معطل کر دینے کا اعلان
وزیراعظم عمران خان نے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالیوں پر تحقیقاتی کمیشن بنانے کامطالبہ کردیا
Translate News »