چیف جسٹس کے اعزاز میں فُل کورٹ ریفرنس کاایک جج نے بائیکاٹ کردیا، جانتے ہیں وہ معزز جج کون ہیں ؟     No IMG     الیکشن کمیشن آف پاکستان نے گوشوارے جمع نہ کروانے پر 322 ارکان کی رکنیت معطل     No IMG     حکومت کا غیر قانونی موبائل فونز ضبط کرنے کا فیصلہ     No IMG     امریکہ نے پریس ٹی وی کی اینکر پرسن کو بغیر کسی جرم کے گرفتار کرلیا     No IMG     سندھ میں آئینی تبدیلی لائیں گے، فواد چودھری     No IMG     کسی کی خواہش پرسابق آصف زرداری کو گرفتار نہیں کرسکتے، نیب     No IMG     نئے پاکستان میں تبدیلی آگئی تبدیلی آگئی، اب لاہور ایئرپورٹ پر شراب دستیاب ہوگی     No IMG     برطانوی وزیراعظم ٹریزامےکیخلاف تحریکِ عدم اعتماد ناکام ہوگئی     No IMG     وزیراعظم کی رہائش گاہ پر وفاقی کابینہ کا ہنگامی اجلاس طلب     No IMG     گاڑیوں کی درآمد پر ٹیکس اب غیر ملکی کرنسی میں ادا کرنا ہوگا, وزیر خزانہ     No IMG     تائيوان, کے معاملے ميں مداخلت برداشت نہيں کی جائے گی, چين     No IMG     امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ترکی کی معیشت کو تباہ کرنے کے بیان سے یوٹرن لیتے ہوئے کہا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان معاشی ترقی کے وسیع مواقع ہی     No IMG     وزیراعظم سے سابق امریکی سفیر کیمرون منٹر کی ملاقات     No IMG     آپ لوگ کام نہیں کر سکتے چیف جسٹس نے اسد عمرکو دو ٹوک الفاظ میں کیا کہہ ڈالا     No IMG     شادی والے گھر میں آگ لگنے سے دلہن سمیت 4 خواتین جاں بحق     No IMG    

اٹلی نے مہاجرین کی آمد روکنے کے لیے بارڈر کنٹرول شروع
تاریخ :   12-07-2018

اٹلی  (ورلڈفاسٹ نیوزفاریو) حکومت نے ملک کے شمال مشرقی علاقے فریولی وینیسیا جولیا میں مہاجرین کی آمد روکنے کے لیے بارڈر کنٹرول شروع کر دیا ہے اور اس مقصد کے لیے سرحدوں پر تعینات سکیورٹی اہلکاروں کی تعداد بھی بڑھا دی گئی ہے۔
روم حکومت نے موسم گرما میں ملک کا رخ کرنے والے مہاجرین کی تعداد میں اضافے کے سبب رواں ہفتے پیر کے روز بارڈر کنٹرول سے متعلق نئے قوانین کا اطلاق کیا تھا۔ ان قوانین کے تحت اب اٹلی نے ملک کی شمال مشرقی سرحدوں پر بارڈر کنٹرول شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

مہاجرین کی آمد روکنے کے لیے نئے اقدامات کے بارے میں فیصلہ فریولی وینیسیا جولیا کے شہر تریئستے میں اطالوی پولیس کے اعلیٰ افسروں کی ایک میٹنگ میں کیا گیا۔ اطالوی نیوز ایجنسی آنسا کے مطابق اب ان علاقوں میں پولیس چوکیاں چوبیس گھنٹے کام کریں گی اور پولیس اہلکار غیر قانونی تارکین وطن کی مدد کرنے والے افراد اور ان کی گاڑیوں کو روک کر ان کی تلاشی لیں گے۔
ان اقدامات کا مقصد یونان سے بلقان ریاستوں سے گزرتے ہوئے وسطی اور شمالی یورپی ممالک کا رخ کرنے والے غیر قانونی تارکین وطن کو روکنا ہے۔ فریولی کے گورنر میسمیلیانو فیدریجا کا کہنا تھا، ’’وزیر داخلہ ماتیو سالوینی کے ساتھ کامیاب گفتگو، سلووینیا کے ساتھ اچھے تعلقات اور سکیورٹی اداروں کے بروقت تعاون کی بدولت ہم سرحدوں پر کنٹرول یقینی بنا پائے ہیں۔‘‘
مہاجرین کی آمد روکنے کے لیے شروع کیے گئے اس خصوصی آپریشن کے لیے میلان اور بلونیا سمیت ملک کے دیگر علاقوں سے بھی سکیورٹی اہلکار شمال مشرقی اٹلی میں تعینات کیے گئے ہیں۔

تاہم اپوزیشن کی جماعتوں نے ان حکومتی اقدامات پر تنقید کی ہے۔ اپوزیشن کی ڈیموکریٹک پارٹی نے بارڈر کنٹرول کے فیصلے کو ’اشتہاری مہم‘ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ ان طریقوں سے غیر قانونی مہاجرت نہیں روکی جا سکتی۔

سمندری راستوں سے آمد روکنے کے لیے سخت اقدامات

زمینی راستوں کے علاوہ روم حکومت نے بحیرہ روم کے سمندری راستوں کے ذریعے غیر قانونی مہاجرت روکنے کے لیے اقدامات بھی مزید سخت کر دیے ہیں۔

بدھ کے روز اطالوی وزیر داخلہ ماتیو سالوینی نے اعلان کیا کہ تارکین وطن کو سمندر سے ریسکیو کرنے والے امدادی بحری جہازوں کو ’گارنٹی‘ کے بغیر اٹلی کی حدود میں لنگر انداز ہونے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ گزشتہ ماہ اٹلی نے ایک فرانسیسی امدادی بحری جہاز کو ملکی بندرگاہوں پر لنگر انداز ہونے سے روک دیا تھا۔ رواں ہفتے مہاجرین کو ریسکیو کرنے والے ایک اطالوی بحری جہاز کو بھی لنگر انداز ہونے کی اجازت نہیں دی گئی۔

اطالوی میڈیا کے مطابق اس بحری جہاز پر سینکڑوں مہاجرین سوار ہیں اور اسے بدھ کی شام یا جمعرات کی صبح سسلی کی بندرگاہ پر پہنچنا تھا۔ سالوینی نے مہاجرین کو ریسکیو کرنے والی ان این جی اوز پر ’انسانوں کے اسمگلروں کی معاونت‘ کا الزام عائد کرتے ہیں۔ ان امدادی بحری جہازوں کو لنگر انداز ہونے کی اجازت نہ دینے کے بارے میں ان کا کہنا تھا، ’’میں کسی بحری جہاز کو اس وقت تک اجازت نہیں دوں گا جب تک اطالوی عوام کی سکیورٹی یقینی بنانے کے لیے ایسی یقین دہانی کرائی جائے کہ ان جہازوں پر زبردستی قبضہ کرنے والے ایسے افراد کو، جو حقیقی مہاجر نہیں ہیں، جیل میں ڈالا جائے گا اور انہیں جلد از جلد واپس ان کے وطنوں کی جانب بھیج دیا جائے گا۔‘‘

Print Friendly, PDF & Email
عمران خان کی جیب سے برآمد ہونے والی کوکین کی تصاویر بھی شائع
یہودی آباد کاروں نے ایک اور اشتعال انگیزی کا مظاہرہ کرتے ہوئے مسجد ’الابراہیمی‘ کےاندر خیمے لگا لیے
Translate News »