آشیانہ ہاؤسنگ اسکینڈل میں اپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی شہباز شریف پر فرد جُرم عائد کر دی گئی     No IMG     محکمہ موسمیات کی پیش گوئی 19سے 26فروری تک ملک بھر میں بارشوں کی نیا سلسلہ شروع ہونے والا ہے     No IMG     وزیراعظم عمران خان کا سعودی عرب میں مقیم پاکستانیوں کیلئے بڑا مطالبہ     No IMG     حکمرانوں کے تمام حلقے کشمیر کے معاملے پر خاموش ہیں, مولانا فضل الرحمان     No IMG     پاکستان, میں 20ارب ڈالرز کی سرمایہ کاری کا پہلا مرحلہ مکمل ہوگیا: سعودی ولی عہد     No IMG     لاہور قلندرز 78 رنز پر ڈھیر     No IMG     ابو ظہبی میں ہتھیاروں کے بین الاقوامی میلے کا آغاز     No IMG     برطانوی ہوائی کمپنی (Flybmi) دیوالیہ، سینکڑوں مسافروں کو پریشانی     No IMG     یورپ میں قانونی طریقے سے داخل ہونے والے افراد کی طرف سے سیاسی پناہ کی درخواستیں دیے جانے کا رجحان بڑھ رہا ہے     No IMG     ٹرین کے ٹائلٹ میں پستول، سینکڑوں مسافر اتار لیے گئے     No IMG     یورپی یونین ,کے پاسپورٹوں کا کاروبار ’ایک خطرناک پیش رفت     No IMG     بھارت نے کشمیری حریت رہنماؤں کو دی گئی سیکیورٹی اورتمام سرکاری سہولتیں واپس لے لی     No IMG     پی ایس ایل کے چھٹے میچ میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے اسلام آباد یونائیٹڈ کو 7وکٹوں سے شکست دےدی     No IMG     وزیرخارجہ کا ایرانی ہم منصب کو ٹیلیفون     No IMG     سعودی ولی عہد کا پاکستان میں تاریخی اور پُرتپاک استقبال     No IMG    

آرمی چیف نے امریکی وزیر دفاع کو باور کرایا کہ ڈو مور کی آواز وں سے دنیا یہ سمجھتی ہے کہ شاید پاکستان کچھ کر نہیں رہا یا کچھ کرنا نہیں چاہتا، پاکستان نے اپنے حصے سے زیادہ کام کیا
تاریخ :   05-12-2017

راولپنڈی(ورلڈ فاسٹ نیوز فار یو)  پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل آصف غفور نے کہاہے کہ آرمی چیف نے امریکی وزیر دفاع کو ملاقات میں باور کرایا کہ جب بھی ڈو مور کی آوازیں آتی ہیں تو دنیا یہ سمجھتی ہے کہ شاید پاکستان کچھ کر نہیں رہا یا کچھ کرنا نہیں چاہتا ، پاکستان کی جو صلاحیت ہے دہشتگردی کے خلاف اس سے بڑھ کر ہم نے کام کیا ہے ، ہم یہ سمجھتے ہیں کہ ہم نے اپنے حصے کا کام کر لیا ہے اب افغانستان کو اپنے حصے کا کام کرنا ہے ،افغانستان کے مسائل کا ذمہ دار پاکستان نہیں، آرمی چیف نے کہا کہ پاکستان سے دہشتگردوں کی مدد کی حمایت کا جو دعوی کیا جاتا ہے وہ ان لوگوں سے ان کو مدد ہو سکتی ہے جو افغان مہاجرین میں مل کر رہتے ہیں ، ان کو ڈھونڈنا مشکل ہے ، اس مسئلے کا حل یہی ہے کہ افغان مہاجرین کی وطن واپسی ہونی چاہیے، افغانستان بھارت کے زیر اثر ہے اور پاکستان کے خلاف استعمال کیا جا رہا ہے،ملاقات میں اتفاق کیا گیا کہ پاک امریکہ دونوں طرف کے تحفظات کو دور کیا جائے گا ۔وہ پیر کو نجی ٹی وی پروگرام میں گفتگو کر رہے تھے ۔ میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ امریکی وزیر دفاع سے آرمی چیف کی جی ایچ کیو میں 2 گھنٹے سے زائد ملاقات ہوئی جس میں ڈی جی آئی ایس آئی بھی موجود تھے ۔ آرمی چیف نے جیمز میٹس کو باور کرایا کہ دونوں ملکوں کے تعلقات کی ایک لمبی تاریخ ہے جس میں دونوں ملکوں نے ایک دوسرے کا ساتھ دیا ہے ۔ اس کی تائید جیمز میٹس نے بھی کی ۔اس موقع پر آرمی چیف نے کہا کہ جب بھی ڈو مور کی آوازیں آتی ہیں تو دنیا یہ سمجھتی ہے کہ شاید پاکستان کچھ کر نہیں رہا یا کچھ کرنا نہیں چاہتا ۔ پاکستان کی جو صلاحیت ہے دہشتگردی کے خلاف اس سے بڑھ کر ہم نے کام کیا ہے ۔ ہم یہ سمجھتے ہیں کہ ہم نے اپنے حصے کا کام کر لیا ہے اب افغانستان کو اپنے حصے کا کام کرنا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ آرمی چیف نے امریکی وزیر دفاع کو باور کروایا کہ افغانستان کے مسائل کا ذمہ دار پاکستان نہیں ہے ہم نے پاکستان کے علاقے صاف کر لیے ہیں ۔امریکی وزیر دفاع کہا کہ افغانستان میں دھماکے ہوں تو وہ الزام لگاتے ہیں کہ حملہ آور پاکستان سے آئے تھے جس پر آرمی چیف نے ان الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں اب دہشتگردوں کی کوئی محفوظ پناہ گاہیں نہیں ہیں ۔ پاکستان میں 2.7 ملین افغان مہاجرین جو کہ 37 سال سے پاکستان میں رہتے ہیں 1.5 ملین رجسٹرڈ ہیں جو کیمپس میں رہتے ہیں اور بقیہ رجسٹرڈ نہیں ہیں ۔ڈی جی آئی ایس آئی نے کہا کہ وزیر دفاع جیمز میٹس سے افغانستان میں ٹی ٹی پی کے سربراہ ملا فضل اللہ کے متعلق کہا گیا کہ اس کے خلاف کارروائی کیوں نہیں ہوئی وہ لوگ پاکستان میں دہشتگردی کے ذمہ دار ہیں ۔ افغانستان سے دہشتگردوں کی محفوظ پناہ گاہیں ختم کرنے کی ضرورت ہے ۔ ملاقات میں آرمی چیف نے کہا کہ پاکستان سے دہشتگردوں کی مدد کی حمایت کا جو دعوی کیا جاتا ہے وہ ان لوگوں سے ان کو مدد ہو سکتی ہے جو افغان مہاجرین میں مل کر رہتے ہیں ۔ان کو ڈھونڈنا مشکل ہے ۔ اس مسئلے کا حل یہی ہے کہ افغان مہاجرین کی وطن واپسی ہونی چاہیے ۔ جب یہ سب چلے جائیں گے تو پھر یہ کہا جا سکتا ہے کہ پاکستان سے دہشتگردوں کی مدد ہو رہی ہے یا نہیں ۔ آرمی چیف نے کہا کہ ہم بارڈر پر بارڈ بھی اسی لیے لگا رہے ہیں تاکہ بارڈر کا کوئی غیر قانونی استعمال نہ ہو سکے ۔ ملاقات میں آرمی چیف نے کہا کہ افغانستان بھارت کے زیر اثر ہے اور پاکستان کے خلاف استعمال کیا جا رہا ہے ۔ملاقات میں اتفاق کیا گیا کہ پاک امریکہ دونوں طرف کے تحفظات کو دور کیا جائے گا ۔ میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ مل بیٹھ کر بات چیت ہمیشہ اچھی رہتی ہے ۔ میرے جائزے کے مطابق آج کی ملاقات کے مثبت نتائج ہونگے ۔ امریکی حکام افغان امن کے لئے پاکستان کا کردار چاہتے ہیں آرمی چیف نے بھی کہا کہ افغان امن پاکستان سے زیادہ کسی ملک کے حق میں نہیں ۔ انہوں نے کہا کہ پاک امریکہ تعلقات میں بہتری کی بہت امید ہے ۔

Print Friendly, PDF & Email
بنکاک سے اسلام آباد آنے والی نجی ائیر لائن کی پرواز حادثے سے بال بال بچ گئی طیارے کو شدید نقصان پہنچا
دہلی کی تہاڑ جیل میں کشمیری قیدیوں پر ہونے والے حملے پر شدید تشویش کا اظہار کیا ہے، سید علی گیلانی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Translate News »