گاڑیوں کی درآمد پر ٹیکس اب غیر ملکی کرنسی میں ادا کرنا ہوگا, وزیر خزانہ     No IMG     تائيوان, کے معاملے ميں مداخلت برداشت نہيں کی جائے گی, چين     No IMG     امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ترکی کی معیشت کو تباہ کرنے کے بیان سے یوٹرن لیتے ہوئے کہا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان معاشی ترقی کے وسیع مواقع ہی     No IMG     وزیراعظم سے سابق امریکی سفیر کیمرون منٹر کی ملاقات     No IMG     آپ لوگ کام نہیں کر سکتے چیف جسٹس نے اسد عمرکو دو ٹوک الفاظ میں کیا کہہ ڈالا     No IMG     شادی والے گھر میں آگ لگنے سے دلہن سمیت 4 خواتین جاں بحق     No IMG     قومی ترقی میں بھرپور کردار ادا کریں گے،آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ     No IMG     اپوزیشن ,جماعتوں نے منی بجٹ مسترد کردیا     No IMG     وزیراعظم عمران خان کو سونے کی کلاشنکوف کا تحفہ مل گیا     No IMG     سعودی لڑکی رھف کا فرار ہونے کے بعد پہلا انٹرویو     No IMG     بنگلہ دیش,گارمنٹس ملازمین کا تنخواہوں میں اضافہ نہ ہونے پر مظاہرہ     No IMG     بھارتی فوج مغربی سرحد کیساتھ دہشتگردانہ کارروائیوں کیخلاف سخت ایکشن لینے سے نہیں ہچکچائے گی۔     No IMG     حکومت نے ایک ہفتے میں ہم سے 113 ارب روپے قرض لیاہے، پاکستانی اسٹیٹ بینک     No IMG     وزیراعظم کی اپوزیشن پر شدید تنقید     No IMG     چین کی عدالت نے منشیات کی اسمگلنگ کے الزام میں کینیڈا کے شہری کی 15 سال قید کی سزا کو پھانسی میں تبدیل کردیا     No IMG    

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے ملک کی بڑ ی ٹیکنالوجی فرم گوگل پر یورپی یونین کے بھاری جرمانے کی مذمت کردی
تاریخ :   19-07-2018

واشنگٹن( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے ملک کی بڑ ی ٹیکنالوجی فرم گوگل پر یورپی یونین کے بھاری جرمانے کی مذمت کردی ہے اور خبردار کیا ہے کہ وہ یورپ کو امریکا سے مزید فائدہ نہیں اٹھانے دیں گے۔

صدر ٹرمپ نے جمعرات کو ایک ٹویٹ میں لکھا ہے:’’ میں آپ کو بتاتا ہوں ۔یورپی یونین نے ہماری بڑی کمپنیوں میں سے ایک گوگل پر پانچ ارب ڈالرز جرمانہ عاید کردیا ہے۔انھوں نے حقیقی معنوں میں امریکا سے فائدہ اٹھایا ہے لیکن یہ معاملہ اب زیادہ دیر چلنے کا نہیں‘‘۔

یورپی یونین نے تین سال کی تحقیقات کے بعد یہ فیصلہ کیا ہے۔اس سے بین البر اعظمی تجارتی جنگ کے امکانات بھی بڑھ گئے ہیں کیونکہ صدر ٹرمپ اس سے پہلے پہلے یورپ کی اسٹیل اور ایلومینیم کی برآمدات پر محصولات عاید کرنے کا فیصلہ کرچکے ہیں ۔

یورپی یونین نے بدھ کو گوگل پر اس کے اینڈرائیڈ موبائل آپریٹنگ سسٹم کی خلاف ورزیوں پر ریکارڈ چار ارب تیس کروڑ یورو ( پانچ ارب ڈالرز) جرمانہ عاید کیا ہے۔یورپی کمیشن کی مسابقتی کمشنر مارگریتھ ویسٹاگر نے برسلز میں نیوز کانفرنس میں اس فیصلے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ گوگل نے تین بنیادی شعبوں میں اینڈرائیڈ مارکیٹ کی خلاف ورزی کا ارتکاب کیا ہے۔گوگل اپنے سرچ انجن اور کروم ایپلی کیشنز کو ایک آپریٹنگ سسٹم میں مجتمع کررہی ہے اور اس نے مبینہ طور پر موبائل فون بنانے والی کمپنیوں کو ایسی ڈیوائسز کی تیاری سے روک دیا ہے جن کے ذریعے اینڈرائیڈ کے مختلف ورژنز کو چلایا جاسکتا ہے۔ اس نے فون تیار کرنے والی بعض بڑی کمپنیوں اور موبائل نیٹ ورک آپریٹر کو اس مقصد کے لیے بھاری رقوم بھی دی ہیں کہ وہ صرف گوگل کی سرچ ایپ کو دستی فون سیٹ میں استعمال کریں۔

ڈنمارک سے تعلق رکھنے والی ویسٹاگر نے اپنے فیصلے میں گوگل کو حکم دیا تھا کہ وہ اپنی اس غلط روش کو 90 روز کے اندر مُوَثر انداز میں ختم کردے یا پھر اس کو روزانہ کی آمدن پر پانچ فی صد جرمانہ ادا کرنا ہوگا۔۔اس کا یہ مطلب ہے کہ اب گوگل کو فون ساز کمپنیوں کو دستی سیٹوں میں گوگل پلے اسٹور کی پیش کش کے لیے کروم اور گوگل سرچ کے پری انسٹال پر مجبور کرنے یا دباؤ ڈالنے کا سلسلہ بند کرنا ہوگا۔

گوگل کو فون ساز کمپنیوں کو اینڈرائیڈ کے مختلف ورژنز کو استعمال کرنے سے روکنے کی روش بھی ختم کرنا ہوگی ۔یورپی کمیشن نے اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ گوگل نے ایسا کوئی قابل اعتبار ٹھوس ثبوت پیش نہیں کیا ہے جس سے یہ پتا چلتا ہو کہ اینڈرائیڈ فنی نقائص سے متاثر ہوگا یا ایپلی کیشنز کی سپورٹ میں ناکام رہے گا۔

گوگل کے خلاف یہ فیصلہ یورپی کمیشن کے سربراہ ژاں کلاڈ جنکر کے امریکا کے دورے سے ایک ہفتے قبل سامنے آیا ہے۔ وہ امریکی صدر سے یورپی برآمدات پر محصولات اور دوسرے متنازعہ امور پر بات چیت کریں گے۔

گوگل کے سربراہ سندر پچائی نے اس فیصلے کے فوری بعد کہا تھا کہ اس کے خلاف اپیل دائر کی جائے گی۔انھوں نے ایک بلاگ میں لکھا کہ’’آج کا فیصلہ اینڈرائیڈ کی حمایت کرنے والے کاروباری ماڈل کو مسترد کرتا ہے، حالانکہ یہ ہر کسی کے لیے زیادہ انتخاب پیش کرتا ہے۔ہم اس فیصلے کے خلاف اپیل کرنا چاہتے ہیں’’۔

گوگل اسمارٹ فون اور ٹیبلٹس بنانے والی کمپنیوں کو اینڈرائیڈ مفت مہیا کرتی ہے اور وہ تلاش ( سرچ) کے نتائج کے ساتھ نمودار ہونے والے اشتہارات کی فروخت سے رقوم کماتی ہے۔یہ اس کا آمدن کا سب سے بڑا ذریعہ ہے۔ واضح رہے کہ مارکیٹ ریسرچ فرم اسٹریٹجی اینالٹکس کے مطابق اینڈرائیڈ سے دنیا کے 80 فی صد اسمارٹ فونز اور ٹیبلٹس چلتے ہیں۔

فوربس میگزین کے مطابق گوگل کی مادر کمپنی الفا بیٹ 2017ء میں دنیا میں انفارمیشن ٹیکنالوجی کی پانچویں بڑی کمپنی تھی اور اس کی عالمی آمدن کا حجم 111 ارب ڈالرز تھا۔اس کی آمدن میں گذشتہ چار سال کے دوران میں دُگنا اضافہ ہوا ہے۔

یورپی کمیشن گذشتہ تین سال سے اینڈرائیڈ کے خلاف جامع تحقیقات کررہا تھا۔اس کے حریفوں نے گوگل کے خلاف سوفٹ وئیر کی مارکیٹ میں برتری کے لیے غلط طور طریقے استعمال کر نے کی شکایت کی تھی۔گوگل کے خلاف سب سے پہلے مختلف کمپنیوں پر مشتمل گروپ فئیر سرچ نے 2013ء میں شکایت کی تھی ۔اس کے علاوہ نوکیا ، مائیکرو سوفٹ اور اوریکل نے بھی شکایت کی تھی۔

یورپی یونین نے گذشتہ سال گوگل پر سرچ کے نتائج میں الٹ پھیر پر دو ارب ستر کروڑ ڈالرز جرمانہ عاید کیا تھا۔یہ اس کی آن لائن خریداری خدمات کے تلاش کے نتائج میں رد وبدل پر کیا گیا تھا۔گوگل نے اس کے خلاف بھی اپیل دائر کی تھی مگر اس کا ابھی فیصلہ نہیں ہوا اور اب اس پراس سے دُگنا پانچ ارب ڈالرز جرمانہ عاید کردیا گیا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
احسن اقبال نے کرپشن کے الزامات پر پی ٹی آئی کے امیدوار ابرار الحق کو ایک ارب روپے کا ہتک عزت کا نوٹس
شجاع آباد پیپلز پارٹی کے کارکن سید تنویرالحسن گیلانی کی گاڑی پر حملہ
Translate News »