وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر سے پاک برطانیہ اور پاکستان سکاٹ لینڈ بزنس کونسل کے وفد کی ملاقات     No IMG     حکومت کو شدید مشکلات کا سامنا آئی ایم ایف نے بیل آوٹ پیکج کیلئے اپنی شرائط سخت کردیں     No IMG     آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا آرمی سروس کور سینٹر نوشہرہ کا دورہ     No IMG     جاپانی وزیراعظم شینزو آبے آسٹریلیا پہنچ گئے     No IMG     کیلیفورنیا ,کی جنگلاتی آگ ، ہلاکتوں کی تعداد 63 ہو گئی     No IMG     برطانوی وزیراعظم کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک اگلے ہفتے پیش ہو سکتی ہے     No IMG     ملائیشین ہائی کمشنر اکرام بن محمد ابراہیم کی وزیراعظم عمران خان سے ملاقات     No IMG     امریکی بلیک میلنگ کا مقصد حماس کی قیادت کو نشانہ بنانا ہے     No IMG     زمبابوے بس میں گیس سیلنڈر پھٹنے سے 42 افراد ہلاک جبکہ متعدد افراد زخمی ہوگئے     No IMG     زلفی بخاری کیس: ’دوستی پر معاملات نہیں چلیں گے‘ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار     No IMG     غزہ پرحملے, اسرائیل کو 40 گھنٹوں میں 33 ملین ڈالر کا نقصان     No IMG     تنخواہیں واپس لے لیں سپریم کورٹ کاحکم آتے ہی افسران سیدھے ہو گئے     No IMG     پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان ابوظہبی ٹیسٹ کا پہلا دن باؤلرز کے نام     No IMG     چودھری پرویز الٰہی اپنے ہی جال میں پھنس گئے     No IMG     ق لیگ نے پاکستان تحریک انصاف کیخلاف بغاوت کردی     No IMG    

احتساب عدالت نے شہباز شریف کا 10روزہ جسمانی ریمانڈ منظور
تاریخ :   06-10-2018

لاہور( ورلڈ فاسٹ نیوزفاریو ) لاہور کی احتساب عدالت نے آشیانہ ہاؤسنگ اسکیم کیس میں سابق وزیراعلیٰ پنجاب اور صدر مسلم لیگ (ن) شہباز شریف کو دس روزہ ریمانڈ پر نیب کے حوالے کردیا ہے۔تفصیلات کے مطابق نیب کی جانب سے سابق وزیراعلیٰ پنجاب کے پندرہ روزہ جسمانی ریمانڈ کی درخواست کی

گئی تھی، احتساب عدالت نے فریقین کے دلائل سننے کے بعد فیصلہ محفوظ کیا تھا،جسے تھوڑی دیر بعد سناتے ہوئے جج نجم الحسن نے شہباز شریف کو آشیانہ ہاؤسنگ اسکیم کیس میں نیب کے حوالے کیا
اس سے قبل آج سماعت کے آغاز پر کمرہ عدالت میں رش زیادہ ہونے پر احتساب عدالت کے جج نجم الحسن نے شہباز شریف اور وکلاء کو اپنے چیمبر میں بلالیا اور وہاں سماعت شروع کی،اس موقع پر پراسیکیوٹر نیب نے موقف اختیار کیا کہ شہباز شریف نے اختیارات سے تجاوز کیا اور آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکیم کا کنٹریکٹ لطیف اینڈ سنز سے منسوخ کرکے کاسا ڈویلپرز کو دیا، اُن کے اس غیر قانونی اقدام سے قومی خزانے کو کروڑوں روپےکا نقصان ہوا
احتساب عدالت کے جج کے روبروہ شہباز شریف نے تمام الزامات کی تردید کرتے ہوئے مؤقف اپنایا کہ مجھ پر لگائے گئے تمام الزامات بے بنیاد ہیں
دوران سماعت شہباز شریف نے موقف اختیار کیا کہ یہ مقدمہ سیاسی بنیادوں پر بنایا گیا ہے،میں نے ایک دھیلے، ایک پائی کی کرپشن نہیں کی اور نہ کوئی غیر قانونی کام نہیں کیا بلکہ اپنی ذاتی مداخلت سے کئی ارب بچائے اور قومی خزانے کو نقصان پہنچانے سے بچایا۔شہباز شریف کا مزید کہنا تھا کہ میں نے دن رات محنت کرکے عوام کی خدمت کی اور اس سب میں اپنی نیند اور صحت بھی خراب کرلی،سابق وزیراعلیٰ پنجاب نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ انہوں نے کرپشن کرنے والوں کو رنگے ہاتھوں پکڑا لیکن انہیں چھوڑ دیا گیا۔
دوران سماعت شہباز شریف کے وکیل امجد پرویز نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ چوہدری لطیف اینٹی کرپشن کے ایک کیس میں مفرور ہے جبکہ ایک کیس میں چوہدری لطیف کی کمپنی بلیک لسٹ ہے۔دونوں جانب کے دلائل سننے کے بعد احتساب عدالت نے شہباز شریف کو 10 روزہ جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے کردیا، جس کے بعد انہیں انتہائی سخت سیکیورٹی میں بکتربند گاڑی میں احتساب عدالت سے روانہ کردیا گیا

شہباز شریف کا طبی معائنہ اس سے قبل احتساب عدالت میں پیشی سے قبل شہباز شریف کا طبی معائنہ کیا گیا، ذرائع کے مطابق ڈاکٹرز نے طبی معائنے میں شہباز شریف کو مکمل فٹ قرار دیا جس کے بعد انہیں احتساب عدالت روانہ کیا گیا،شہباز شریف کو بکتر بند گاڑی میں احتساب عدالت لایا گیا تھا۔سیکیورٹی انتظاماتصدر مسلم لیگ ن اور اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کی احتساب عدالت میں پیشی کے موقع پر احتساب عدالت میں سیکیورٹی کے سخت انتظامات کئےگئے تھے،احتساب عدالت کے باہرچھ سو سے زائد افسران اور اہلکاروں کو تعینات کیا گیا تھا جبکہ احتساب عدالت کے اطراف کے راستوں کو رکاوٹیں لگاکر سیل کردیا گیا تھا۔شہبازشریف کی گرفتاری کے بعد ممکنہ احتجاج کے پیش نظر وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے پولیس حکام اور تمام ڈویژنل کمشنرز کو خصوصی احکامات جاری کیے تھے۔لیگی کارکنان کی احتساب عدالت آمددوسری جانب اپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی شہباز شریف سے اظہار یکجہتی کے لئے احتساب عدالت کے باہر مسلم لیگ (ن) کے کارکن بھی بڑی تعداد میں جمع تھی، جن کی جانب سے نعرے بازی کی گئی، اس موقع پر کارکنان نیب کی بکتر بند گاڑی پر چڑھ گئے تھے، جس پر پولیس نے لاٹھی چارج کرکے انہیں منتشر کیا ہے۔واضح رہے کہ سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف گذشتہ روز تیسری مرتبہ صاف پانی کمپنی اسکینڈل میں عدالت میں پیش ہوئے جہاں ان کے سامنے کیس میں حاصل کیے جانے والے ثبوت پیش کیے گئے۔نیب کے سامنے شہباز شریف کوئی تسلی بخش جواب نہیں دے سکے جس کے بعد انہیں حراست میں لے لیا گیا۔ شہباز شریف کی گرفتاری کے بعد ان کا پروٹوکول اور سیکیورٹی واپس روانہ ہوگئی۔سابق وزیر اعلیٰ پنجاب اور صدر مسلم لیگ (ن) شہباز شریف کو گرفتاری کے بعد حوالات منتقل کر دیا گیا ہے جہاں سے آج انہیں عدالت کے سامنے پیش کیا جائے گا۔نیب ترجمان کے مطابق شہباز شریف پر من پسند افراد کو ٹھیکے دیئے جانے کا الزام ہے۔ نیب آج شہباز شریف کو عدالت میں پیش کرے گا جبکہ عدالت سے شہباز شریف کے جسمانی ریمانڈ کی استدعا کرے گا۔قائد مسلم لیگ (ن) کا ردعملقائد مسلم لیگ (ن) نواز شریف نے شہباز شریف کی گرفتاری پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ ان کی گرفتاری ناصرف افسوسناک بلکہ مضحکہ خیز ہے۔ شہباز شریف نے بطور وزیراعلیٰ خدمت، امانت اور دیانت کی شاندار مثال قائم کی جبکہ عالمی اداروں نے شہباز شریف کی خدمات کا اعتراف کیا۔نواز شریف نے کہا کہ حکومت اپنی نااہلی کا ملبہ شہباز شریف پر نہ ڈالے، سب جانتے ہیں پی ٹی آئی کی حکومت بدترین انتقام کی ذمہ دار ہے۔ آج مخالفین جو سلوک کریں گے کل کو اس کیلئے تیار رہیں۔نیب کی جانب سے اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کی باضابطہ گرفتاری کیلئے اسپیکر قومی اسمبلی سے بھی رابطہ کیا گیا ہے۔ رولز کے تحت قومی اسمبلی کے ممبر کی گرفتاری کی صورت میں اسپیکر کو اطلاع دی جاتی ہے۔یہ ویڈیو دیکھنے کیلئے پلے کا بٹن دبائیےخورشید شاہ کا بیان خورشید شاہ نے شہبازشریف کی گرفتاری پر اپنے ردعمل میں کہا کہ شہبازشریف کی اس انداز میں گرفتاری پارلیمان کی توہین ہے۔ شہبازشریف قائد حزب اختلاف ہیں، اس طرح گرفتارنہیں کرنا چاہیے۔خورشید شاہ نے کہا کہ سیاسی قیادت کے تمام مقدمات پر پارلیمنٹ کو پہلے اعتماد میں لیا جائے۔ پارلیمانی کمیٹی میں تمام مقدمات کا جائزہ لیا جائے۔انہوں نے مزید کہا کہ اس طرح کی گرفتاریوں سے سیاسی انتقام کی بو آتی ہے۔ حکومت انتقامی کارروائیوں سے گریزکرے۔ 100 روزہ پروگرام کی ناکامی پرحکومت ایسے قدم اٹھا رہی ہے۔آشیانہ ہاؤسنگ اسکیم کیس کا پس منظرواضح رہےکہ نیب آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکیم، صاف پانی کیس، اور اربوں روپے کے گھپلوں کی تحقیقات کر رہا ہے، جس میں سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف سمیت دیگر نامزد ہیں،آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکیم میں لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے سابق ڈائریکٹر جنرل احد چیمہ اور سابق وزیراعظم نواز شریف کے قریبی ساتھی اور سابق پرنسپل سیکریٹری فواد حسن فواد پہلے ہی گرفتار کیے جاچکے ہیں۔نیب ذرائع نے دعویٰ کیا تھا کہ شہباز شریف کو لاہور ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے سابق ڈی جی فواد حسن فواد کے بیان کے بعد گرفتار کیا گیا ہے،اس سے پہلے آشیانہ ہاؤسنگ اسکیم کیس کی آخری پیشی پر شہباز شریف اور فواد حسن فواد کو آمنے سامنے بٹھایا گیا۔ نیب ذرائع نے دعویٰ کیا کہ اس موقع پر فواد حسن فواد نے کہا تھا کہ میاں صاحب آپ نے جیسے کہا میں ویسے کرتا رہا۔نیب کے مطابق شہباز شریف پر الزام ہے کہ انھوں نے بطور وزیراعلیٰ پنجاب آشیانہ اسکیم کے لیے لطیف اینڈ کمپنی کا ٹھیکہ غیر قانونی طور پر منسوخ کروا کے پیراگون کی پراکسی کمپنی ‘کاسا’ کو دلوا دیا۔نیب کا الزام ہے کہ شہباز شریف نے پی ایل ڈی سی پر دباؤ ڈال کر آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکیم کا تعمیراتی ٹھیکہ ایل ڈی اے کو دلوایا اور پھر یہی ٹھیکہ پی ایل ڈی سی کو واپس دلایا جس سے قومی خزانے کو 71 کروڑ روپے سے زائد کا نقصان ہوا۔نیب ذرائع کے مطابق شہباز شریف نے پی ایل ڈی سی پر دباؤ ڈال کر کنسلٹنسی کانٹریکٹ ایم ایس انجینئر کسلٹنسی کو 19کروڑ 20 لاکھ روپے میں دیا جبکہ نیسپاک کا تخمینہ 3 کروڑ روپے تھا۔

Print Friendly, PDF & Email
ایان علی کے ناقابل ضمانت وارنٹ جاری
وزیراعظم عمران خان اور آرمی چیف کوئٹہ پہنچ گئے
Translate News »