شمالی کوریا کا ایٹمی طاقت کے مظاہرے کا عزم     No IMG     عراق کے دارالحکومت بغداد میں خودکش حملے کے نتیجے میں 19 افراد جاں بحق     No IMG     جرمنی کے وزير خارجہ نے اعلان کیا ہے کہ یورپی یونین کے رکن ممالک مشترکہ ایٹمی معاہدے کی حمایت پر متحد اور متفق ہیں۔     No IMG     ایران کو شام میں فوجی بیس بنانے کی اجازت نہیں دیں گے,اسرائیل کے وزير اعظم     No IMG     مقبوضہ کشمیر، یاسین ملک کی مسلسل غیر قانونی نظر بندی کی سخت مذمت کرتے ہوئے عالمی ریڈ کراس کمیٹی سے اپیل     No IMG     سابق وزیراعظم نواز شریف نے چئیرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال کو توہین آمیز پریس ریلیز جاری کرنے پر قانونی نوٹس بھجوا دیا۔     No IMG     قونصل جنرل عائشہ فاروقی نے جیل میں ڈاکٹرعافیہ صدیقی سےملاقات     No IMG     پی ٹی آئی چئیرمین نے بڑا فیصلہ کر لیا ، اب پی ٹی آئی میں شمولت اختیار کرنا آسان نہ ہو گا     No IMG     پاکستان میں تھری اور فور جی صارفین کی تعداد 5 کروڑ46 لاکھ ہو گئی،     No IMG     سابق وزیراعظم نواز شریف نے احتساب عدالت میں اپنے نکالنے کی 4 بڑی وجوہات بتادیں     No IMG     حافظ آباد میں کپڑے کی فیکٹری میں آگ لگ گئی     No IMG     پی ٹی آئی کے اعلیٰ عہدے داروں کی پریم کہانی شروع ہو گئی     No IMG     امريکا نے 5 ايرانی اہلکاروں پر پابندی عائد کر دی     No IMG     موجودہ حکومت نے دہشت گردی ، عسکریت پسندی اور توانائی بحران کو حل کیا ، ملکی معیشت کو مستحکم کردیا, لیفٹیننٹ جنرل (ر) عبدالقیوم     No IMG     پی ٹی آئی گزشتہ 5 سالوں میں خیبرپختونخوا میں ڈلیور کرنے میں بری طرح ناکام ہوئی، مائزہ حمید     No IMG    

آزاد کشمیر

  • مقبوضہ کشمیر، یاسین ملک کی مسلسل غیر قانونی نظر بندی کی سخت مذمت کرتے ہوئے عالمی ریڈ کراس کمیٹی سے اپیل

    سرینگر( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو ) جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک نے آزادی پسند رہنما سرجان برکاتی کی مسلسل غیر قانونی نظر بندی کی سخت مذمت کرتے ہوئے عالمی ریڈ کراس کمیٹی سے اپیل کہ ہے کہ وہ نظر بند رہنما کی رہائی کے لیے کردار ادا کرے۔ کشمیر میڈیاسروس کے مطابق محمدیاسین ملک نے سرینگر میںجاری ایک بیان میں کہا کہ سرجان برکاتی2016سے جھوٹے مقدمات میں نظر بند ہیں اور ان پر لاگو کالا قانون پبلک سیفٹی ایکٹ ہائی کورٹ کی طرف سے کالعدم قراردیے جانے کے باوجود انہیں رہا نہیں کیا جارہا۔محمد یاسین ملک نے کہا کہ سرجان برکاتی ایک سفید پوش بڑے کنبے کے واحد کفیل ہیں اور ان کی نظر بندی کی وجہ سے ان کے اہلخانہ کو سخت مشکلات کا سامنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نظر بند رہنما کو چند روز قبل عدالتی احکامات پر سینٹرل جیل سرینگر سے رہا ئی کے بعد جیل کے احاطے سے ہی دوبارہ گرفتار کرکے کسی نامعلوم مقام پر منتقل کیا گیا اور تب سے ان کے بارے میںکوئی معلومات نہیں کہ وہ کہاں ہیں۔محمد یاسین ملک نے عالمی ریڈ کراس کمیٹی سے اپیل کی کہ وہ سرجا ن برکاتی کی طویل غیر قانونی نظر بندی کا نوٹس لیتے ہوئے انکی رہائی کیلئے کردار ادا کریں۔ دریں اثناء محمد یاسین ملک نے شہید بشیر احمد ڈار، شہیدمحمد مقبول ڈار، شہیدمولانا عبدالغنی شیدا ُ، شہیدغلام محمد اور شہیدعبدالعزیز کو ان کی شہادت کی برسی پر شاندار خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ شہداء کی قربانیاں کو ہرگز رائیگاں نہیں جانے دیاجائے گا۔انہوں نے کہا کہ شہداء کی عظیم قربانیوں کی وجہ سے ہی تنازعہ کشمیر عالمی سطح پر توجہ کا مرکز بن چکا ہے۔ ادھر ضلع کے ایک عوامی وفد نےسرینگر میں محمد یاسین ملک کے ساتھ ان کے دفتر پر ملاقات میں انہیں بھارتی فورسز کے مظالم سے آگاہ کیا۔ وفد کے ارکان نے کہا کہ قابض فورسز نے ضلع کے بدرو،مڈی بگ،یمبرچھ،کیموہ،کھڈونی اور دیگر بے گنا شہریوں کی بلاجواز گرفتاریوں، چھاپوں اور جبرو استبداد کی دیگر کارروائیوں کا سلسلہ تیز کرکے لوگوں کی زندگیاں اجیرن بنادی ہیں۔ محمد یاسین ملک نے بھارتی فورسز کے مظالم کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ حریت قیادت بے گنا ہ لوگوں پر جاری مظالم کو دنیا کے سامنے لانے کیلئے ہر ممکن اقدامات اُٹھائے گی۔

  • آزادکشمیرکاایک خوبصورت شہر ڈڈیال،جسکا پرانا نام اندرہل ہے

    آزادکشمیر ( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو ) ڈڈیال(اندرہل): پاکستان کے زیر انتظام کشمیر کے منقسم صوبہ جموں کی تحصیل میرپور اور موجودہ ڈویزن میرپور کاایک خوبصورت شہر ڈڈیال،جسکا پرانا نام اندرہل ہےجو کہ چھوٹی پہاڑیوں کے نیچےآباد ہونےکی وجہ سے اسے انگریزوں نے اندزاً ”انڈر ہِل یاانڈر ہیل” کے نام سے دیا جو کہ بعد میں اندرہل بن گیا۔ مشہورتاریخی مقامات میں بیلابہادرشاہ جو کہ مغلیہ دور تسلط میں دریائے جہلم پر واقع ایک لکڑمنڈی تھی،پرانے ڈڈیال شہر کے کھنڈرات جو کہ مارچ اور مئی جون میں دیکھے جا سکتے ہیں تب جھیل میں پانی کم ہو جاتا ہے۔مغلیہ طرز تعمیر کا ایک اور شاہکار جو کہ ڈڈیال شہر

     

     

     

     

     

     

     

     

     

     

    سے جنوب مغرب کی طرف مشہور قصبہ بھیلی بٹھار کے عقب میں اورمنگلا ڈیم کے پانچ کلومیٹر اندرایک پہاڑی پر واقع ہےجسکا نام ہے قلعہ رام کوٹ۔ دریاۓ جہلم دریاۓ پونچھ اور منگلہ جھیل کے درمیان واقع ہے – یہ ریاست جموں کشمیر کے گرم ترین شہروں میں سے ایک ہے یہاں جون جولائی میں درجہ حرارت 45 ڈگری تک بھی پہنچ جاتا ہے – ڈڈیال ( آزاد ) کشمیر کے بڑے شہروں میں سے ایک ہے اور اپنے شاپنگ سینٹرز , سپر سٹورز اور بڑے بڑے پلازوں کی وجہ سے مشہور ہے – ڈڈیال شہر کی آبادی ایک محتاط اندازے کے مطابق لگ بھگ 80 ہزار نفوس ہے – ڈڈیال ضلع میرپور کی ایک تحصیل ہے – بڑی تعداد میں ڈڈیال کے لوگ برطانیہ کے شہر برمنگھم میں آباد ہیں – برمنگھم میں کہاوت مشہور ہے ” برمنگھم پر آسمان سے سوئی بھی گرے تو وہ کسی ڈڈیا لی کو لگے گی – یعنی برمنگھم ڈڈیال والوں سے بھرا ہے – برمنگھم میں عالم راک ‘ سپارک ہل , سمال ہیتھ , موزلے , پیری بار , ڈڈلی،بوزلے گرین , سٹیچ فورڈ ،لوزلز،میں ڈڈیال کے لوگ کثرت سے آباد ہیں اسکے علاوہ لندن،ہائی ویکم،بریڈفورڈ،مانچسٹر،رادرم،سٹوک اون ٹرینٹ،ویمبلی،سلوویلز،یوکشائر،ہمبرسائییڈ،ہیلیفیکس،راچڈل،ویسٹمڈلینڈ،وغیرہ میں آباد ہیں قبریں اور اپنا آدھا شہر منگلہ جھیل کے نیچے دے دیا یےاور یہاں سے قریباً نو سو میگاواٹ
    سےزیادہ بجلی پیدا ہوتی ہے اور اتنی قربانیاں یعنی اپنے آبائواجداد کی قبروں سمیت گھربار اورزرخیز زرعی زمینوں اپنا قدیم شہر کھونے کےباوجود اور پاکستان اور کشمیر کے بڑے حصے کو روشن کرنے کےباوجود خود تاریکیوں میں ڈوبا ہوا ہے اندازًگرمیوں میں پندرہ گھنٹے تک لوڈشیڈنگ رہتی ہےاور سردیوں میں دس سے بارہ گھنٹے۔یہاں اس بات کا ذکر بھی ضروری ہے کہ منگلا ڈہم سے آزادکشمیر کا ضلع میرپور تقریباًسارا ہی متاثر ہوا ہے مگرتحصیل ڈڈیال سب سے زیادہ متاثر ہوئی ہے۔ ۱۹۶۵ کے متاثرین پرانی ڈڈیال کچھ پنجاب کے مختلف علاقوں جیسے گجرات،گجرنوالہ،سانگلہ ہل،جھنگ،جہلم،سیالکوٹ،راولپنڈی،نیومیرپور سٹی میں مائیگریٹ ہوگئے تھے۔ ڈڈیال میرپور سے 65 کوٹلی سے 55 اور پاکستانی پنجاب کے شہر راولپنڈی سے 70 کلو میٹر کے فاصلے پر ہے – ڈڈیال کا دریاے پونچھ والا پل پار کر کے ایک سڑک میرپور اور دوسری کوٹلی کو نکل جاتی ہے جبکہ مغرب میں دھان گلی کا پل پار کر کے کلر سیداں اور راولپنڈی روڈ ڈڈیال کو پنجاب سے ملاتی ہے – ڈڈیال نیلم پونچھ باغ کی طرح سرسبز اور بلند نہیں بلکہ ہموار اور پتھریلی خشک چٹانی مٹی پر مشتمل ہے . شہر کے اس پاس اور منگلہ جھیل کے پاس ہریالی نظر آتی ہے – یہ قدیم و جدید طرز تعمیر کا ایک حسین امتزاج ہے – ڈڈیال کی سات یونین کونسلیں اور اور شہر پر مشتمل ہے۔یہاں کی نمایاں شخصیات کرنل راجہ رنگ خان مرحوم آف کٹھاڑ مصراں جو کہ مہاراجہ ہری سنگ کے دور میں کشمییر فوج کے کرنل رہےاوراسی خاندان سے بریگیڈئیر دلاورمرحوم ساٹھ کی دھائی میں پاک فوج میں خدمات سرانجام دے چکے ہیں۔عالمی اعزاز یافتہ اتھلیٹ کیپٹن راجہ جلال خان مرحوم جنکاتعلق کھٹاڑ کےگائوں سانولہ پیراں سےتھا۔سابقہ چیف جسٹس آف آزادکشمیر یونس سرکھوی صاحب اور سابق چیف جسٹس ملک عبدلمجید صاحب کا تعلق بھی ڈڈیال سے ہے۔علی محمدچاچا سابقہ اٹارنی جنرل آف آزادکشمیرووزیرقانون کا تعلق بھی ڈڈیال کے علاقہ چتھروہ سے تھا۔پچاس کی دھائی میں انگلینڈ سے ملکہ کی طرف سے خصوصی اعزاز حاصل کرنے مرحوم حاجی چوہدری زمان صاحب کا تعلق بھی موہڑہ کنیال ڈڈیال سے تھا۔رہنما تحریک آزدی کشمیر مولانا عبداللّٰہ سیاکھوی صاحب،اور چوہدری اللّٰہ دتہ صاحب جنکو تحریک آزادی کشمیر کے ستون تصور کیا جاتا تھاانکےعلاوہ ایک اور قابل احترام شخصیت جنہوں نے اپنی تعلیم سرسید یونیورسٹی علی گھڑھ سے مکمل کی تھی اور دانشورانہ شخصیت کے مالک بھی تھے اور تحریک آزادی کشمیر میں بھی پیشپیش رہے وہ ہیں محمود ہاشمی صاحب آف پوٹھہ بنگش ڈڈیال۔ ڈڈیال چونکہ پنجاب کے پوٹھوہار ڈویژن کے ساتھ ملحق ہے اس وجہ سے وہاں کی ثقافت کافی مشترک ہےکھیلوں میں والی بال ،کبڈی،کرکٹ،نیزہ بازی اور بیل دوڑ وغیرہ مقبول ہیں۔موسیقی میں پوٹھوہاری گائیکی،ماہیے،ٹپے،اور دیگر جدید میوزک بھی سنا جاتا ہے۔ مشہور عالم دین اورکنزالھدیٰ کے سربراہ ثاقب شامی صاحب اور مشہور ثناٴخواں مصطفیٰ میلاد رضا قادری کا تعلق بھی ڈڈیال سے ہے۔ ڈڈیال شہر میں ہزراوں کی تعداد میں پاکستانی پنجاب خیبر پختونخواہ کے لوگ بھی اپنا روزگار کرتے ہیں – ڈڈیال کے گردونواح میں رٹہ، کٹھاڑ دلاور خان ،سورکھی،خادم آباد،سیاکھ،موہڑہ کنیال،اوناع، بہاری،ٹھارہ،جعفرآباد،آڑاہ جٹاں،۔ بھلوٹ بڑے قصبے ہیں . یہاں گندم اور مکئی کاشت کی جاتی ہے کینو لوکاٹ کیلا بھی پیدا ہوتا ہے مگر اسکی مقدار بہت کم ہے – ڈڈیال کے مشرق و جنوب میں منگلہ جھیل مغرب میں دریاۓ جہلم کے پار پنجاب کا پوٹھوہار ضلع راولپنڈی کی تحصیل کہوٹہ،کلرسیداں، گجرخان،اور شمال میں ضلع کوٹلی واقع ہے۔ ازقلم:محمد اسد یونس چوہدری

  • کشمیر کا مسئلہ اقتصادی پیکیج کا نہیں بلکہ ایک کروڑ 40 لاکھ لوگوں کے پیدائشی اور بنیادی حق، حق خودارادیت کا مسئلہ ہے,سید علی گیلانی

    سرینگر ۔  ( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو )کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی نے کہا ہے کہ تاریخ گواہ ہے آج تک دنیا میں کسی قوم کو اقتصادی ترقی اور مراعات کے عوض غلام نہیں بنایا جاسکا ہے اور جو لوگ ایسا سوچتے ہیں وہ یا تو تاریخ سے نابلد ہیں یا احمقوں کی دنیا میں رہتے ہیں۔کشمیر میڈیا

    سروس کے مطابق سید علی گیلانی نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہا کہ جموںو کشمیر کا مسئلہ اقتصادی پیکیج کا نہیں بلکہ ایک کروڑ 40 لاکھ لوگوں کے پیدائشی اور بنیادی حق، حق خودارادیت کا مسئلہ ہے جس کا وعدہبھارت کے حکمرانوں نے قومی اور بین الاقوامی سطح پر کشمیریوں کے ساتھ کیا ہے۔انہوں نے بھارتی وزیرِ اعظم نریندر مودی کے بیان پر کہ ہر مسئلے کا حل اقتصادی ترقی ہے ، تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر بھارت ہماری سڑکوں پر سونا چاندی بچھا دے اور ہیرے جواہرات کے محل تیار کرے ، جموںو کشمیر کے عوام تب بھی بھارت کے جبری قبضے کو تسلیم نہیں کریں گے۔انہوں نے کہابھارتی وزیر اعظم نے حقائق سے چشم پوشی کرکے تاریخ کو جھٹلانے کی ناکام کوشش کی ہے کیونکہ جتنی اقتصادی ترقی انگریزوں اور مغلوں کے دور میں ہوئی ہے، بھارت ستر سال بعد بھی آج انہی اقتصادی اور تعمیری شاہ کاروں کی وجہ سے جانا اور پہچاناجاتا ہے، اس کے باوجو د بھارت میں انگریزوں کے خلاف آزادی کی تحریک چلی۔حریت چیئرمین نے کہا کروڑوں روپے کے منصوبے شروع کرکے ہم پر احسان جتایا جارہا ہے اورغاصب طاقتوں کے مقامی حاشیہ بردار پھولے نہیں سمارہے ہیں۔ ہم ان بندگانِ شکم سیاستدانوں پر واضح کرنا چاہتے ہیں کہ یہ ڈرامے بھارت یہاں گزشتہ سات دہائیوں سے دہرارہا ہے اور ایسی مکارانہ چالوں سے حقائق تبدیل نہیں ہوا کرتے۔انہوںنے کہاکہ ہم اس ساری مشق کو فضول اور بے وقت کی راگنی سمجھ کر مسترد کرتے ہیں کیونکہ یہاں کے عوام کو جان ومال اور عزت وآبرو کا تحفظ ہی حاصل نہیں ہے۔جب کشمیریوں کے بنیادی حقوق کی بازیابی کی بات ہی نہیں ہورہی ہے اوران پر 10لاکھ بھارتی فوجیوں کی تلوار لٹک رہی ہے تو معاشی خوشحالی اور تعمیر وترقی کا پُرفریب نعرہ کوئی اہمیت نہیں رکھتا ۔ انہوں نے واضح کیاکہ نو جوانوں کا لہو اور کھربوں روپے مالیت کی املاک کی قربانی کسی اقتصادی بھیک کے لیے نہیں بلکہ اپنے غصب شدہ حقوق کی بازیابی کے لیے پیش کی گئی ہے۔انہوں نے کہا کہ بھارت کی ضد، ہٹ دھرمی، توسیع پسندانہ عزائم اور جابرانہ فوجی قبضے کی وجہ سے کشمیری عوام مسلسل عذاب و عتاب کا شکار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے قدرتی وسائل پر ناجائز قبضہ کرکے بھارت کشمیری عوام کو پانی،، بجلی اور دیگر بنیادی ضروریات کیلئے ہاتھ پھیلانے پر مجبورکررہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اعلیٰ تعلیم یافتہ اور اچھے روزگار کے باوجود کشمیری نوجوان بھارت سے آزادی حاصل کرنے کیلئے اپنا سب کچھ قربان کرنے پر تیار ہیں کیونکہ گزشتہ 70سال کا تلخ تجربہ ان کو یہ باور کرانے کیلئے کافی ہے کہ بھارت کی غلامی میں ہمارا دین و ایمان، تہذیب وثقافت، جان ومال اور عزت وآبروکچھ بھی محفوظ نہیںہے۔

  • بھارتی وزیر اعظم کا دورہ کشمیر مظالم پر پردہ ڈالنے اور عالمی رائے عامہ کو گمراہ کرنے کی کوشش ہے، یاسین ملک

    سرینگر ( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو )  مقبوضہ کشمیر میں جموںوکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک نے کہا ہے کہ ایک طرف کشمیریوں کو قتل اور زخمی کرنے، بینائی سے محروم کرنے اور سیاسی سرگرمیوں پر پابندی عائد کرکے جیلوں میں ڈالنے کا عمل جاری ہے اور دوسری طرف ان مظالم پرپردہ ڈالنے اور عالمی رائے عامہ کو گمراہ کرنے کیلئے بھارتی وزیراعظم کے دورئہ کشمیر کا اہتمام کیا جارہا ہے۔کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق محمد یاسین ملک نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہا کہ جموں وکشمیر کو جنگ کے میدان میں تبدیل کردیا گیا ہے جہاں روزانہ معصوم بچوں کا قتل عام کیا جارہا ہے۔انہوںنے کہا کہ فوجی طاقت کا استعمال کرکے وادی کشمیر میںقبرستان کی خاموشی بپا کی جارہی ہے۔یاسین ملک نے مثالی ہڑتال اور احتجاج پر کشمیریوں کو مبارک باد دیتے ہوئے کہاکہ مشترکہ مزاحمتی قیادت کے پرامن احتجاجکو روکنے کیلئے بھارتی فورسز اورپولیس کے اقدامات ان لوگوں کے لئے چشم کشا ہیں جو کشمیرمیں جاری جدوجہد آزادی کو عوامی تحریک نہیں مانتے۔بھاتی فورسز نے گزشتہ روز لالچوک کی طرف مارچ کرنے پرجموں وکشمیر لبریشن فرنٹ کے متعدد رہنمائوں اور کارکنوں کو گرفتار کرلیا جن میںمحمد صدیق شاہ، شیخ عبدالرشید، بشیر احمد کشمیری ،غلام محمد ڈار ، شیخ محمد اسلم، محمد حنیف ڈار، امتیاز احمد ڈار، فیاض احمد لون، امتیاز احمد گنائی،بشارت احمد بٹ اور دیگر شامل ہیں۔ محمد یاسین ملک نے پارٹی رہنما شہید اشفاق مجید وانی کو شاند ار خراج عقیدت پیش کیا ہے جو 1990ء میں 3رمضان المبارک کو بھارتی فورسز کے ہاتھوں شہید ہوئے تھے۔

  • نریندر مودی کا مقبوضہ کشمیر کا دورہ ایک فوجی آپریشن سے زیادہ کچھ نہیں تھا، کل جماعتی حریت کانفرنس ، سید علی گیلانی

    سرینگر( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو )  مقبوضہ کشمیر میں کل جماعتی حریت کانفرنس نے کہا ہے کہ بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کا مقبوضہ وادی کا دورہ درحقیقت ایک فوجی آپریشن سے زیادہ کچھ نہیں تھاکیونکہ ان کے دورے کے موقع پر یہاں کی پوری آبادی کو بندوق کی نوک پر یرغمال بنایا گیا۔ کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق کل جماعتی حریت کانفرنس کے ترجمان نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہا کہ بھارت ہمیشہ فوجی طاقت کے ذریعے محکوم کشمیریوں کو خوفزدہ کرنے کی کوشش کرتا رہا ہے اور جب بھی کوئی بھارتی حکمران جموں وکشمیر کا دورہ کرتا ہے تو نام نہاد سیکورٹی کے نام پریہاں قدغنوں اور پابندیوں کا سلسلہ تیز کیا جاتا ہے جس سے پہلے سے بھارتی ریاستی دہشت گردی کا شکار کشمیریوں کی مشکلات میں افاضہ ہوتا ہے۔ترجمان نے مشترکہ حریت قیادت کے لالچوک چلوپروگرام پرپابندی اور آزادی پسند راہنماؤں، کارکنوں اور عام نوجوانوں گرفتاری کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اظہارِرائے کی آزادی کے حق کو طاقت کے بل پر دبانابھارت کے جمہوری دعوئوں کی نفی کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کٹھ پتلی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے نئی دلی کے اپنے آقائوں کی خوشنوری کیلئے اپنی ہی قوم کے خلاف جنگ چھڑ رکھی ہے۔انہوں نے کہا کہ کٹھ پتلی حکمرانو ں نے محض اپنی کرسی کی خاطر اپنے ضمیر اور غیرت کو گروی رکھا ہوا ہے۔ ترجمان نے کہا کہ مقبوضہ علاقے میں عملاً مارشل لا نافذ ہے اور کٹھ پتلی حکمرانوں کے ’’گولی نہیں بولی‘‘ اور ’’نظریات کی لڑائی‘‘ جیسے نعرے زمین میں دفن ہوچکے ہیں۔ترجمان نے کل جماعتی حریت کانفرنس نے چیئرمین سید علی گیلانی ، محمد اشرف صحرائی، حاجی غلام نبی سمجھی، غلام احمد گلزار، محمد یوسف نقاش، محمد اشرف لایہ، بلال احمد صدیقی، محمد یاسین عطائی، عمر عادل ڈار، سید امتیاز حیدر بشیر احمد بٹ اور دیگر حریت رہنمائوں اور کارکنوں سمیت بڑی تعداد میں عام نوجوان کو گھروں ، تھانوں اور جیلوں میں نظر بند رکھنے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اوچھے ہتھکنڈوں سے کشمیریوںکو تحریک آزادی کے راستے سے ہرگز ہٹایا نہیں جاسکتا۔ترجمان نے کٹھ پتلی حکومت کو خبردار کیا کہ پُرامن سیاسی سرگرمیوں پر پابندیوں کے سنگین نتائج نکلیں گے جس کی ذمہ دار وہ خود ہو گی۔ دریں اثنا کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی نے سرینگر سے جاری ایک بیان میں ممتاز آزادی پسند رہنمائوں مولوی محمد فاروق ،خواجہ عبدالغنی لون اور شہدائے حول کو ان کی شہادت کی برسی پر شاندار خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے انکے درجات کی بلندئ کے لیے دُعا کی ہے۔انہوں نے کہا کہ شہداء کو خراج عقیدت پیش کرنے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ ہم خون سے سینچی ہوئی تحریکِ آزادی کو جاری رکھنے کے لیے ہمہ تن جدوجہد کریں اور کوئی بھی ایسا قدم نہ اٹھائیںجس سے عظیم اور بے مثال قربانیوں پر حرف آنے کا احتمال پیدا ہو۔ سید علی گیلانینے کہا کہ وہ مولوی محمد فاروق کے خاندان کی ان کاوشوں کے دل سے معترف ہیں جو انہوں نے جموں کشمیر میں اشاعت دین کے حوالے سے کی ہیں ۔ سید علی گیلانی نے کہا کہ مولوی محمد فاروق کے ساتھ انکی کئی ملاقاتیں ہوئی ہیں جبکہ خواجہ عبدالغنی لون کے ساتھ بھی انکے طویل مراسم رہے ہیں اور وہ عبدالغنی لون کی فطری صلاحیتوں اور جرأت کی ہمیشہ داد دیتے رہے ہیں۔

  • ترقیاتی اہداف کے حصول میں کسی قسم کی غفلت یا کوتاہی برداشت نہیں کی جائےگی,وزیراعظم آزاد کشمیر

    مظفرآباد( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو )   وزیراعظم آزاد حکومت ریاست جموں وکشمیرراجہ محمد فاروق حیدر خان نے کہا ہے کہ ترقیاتی اہداف کے حصول میں کسی قسم کی غفلت یا کوتاہی برداشت نہیں کی جائےگی۔ ناقص کارکردگی کےحامل افسران کو جواب دینا پڑے گا۔

    ان خیالات کا اظہار انہوں نے وزیر اعظم سیکرٹریٹ میں منعقدہ اعلیٰ سطحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیاجس میں مختلف محکمہ جات کےسیکرٹریز نے شرکت کی ۔ اجلاس میں وزیراعظم آزاد کشمیر کو بتایا گیا کہ ترقیاتی بجٹ کی آخری قسط حکومت آزاد کشمیر کو ایک ماہ قبل مل چکی ہے۔ آزاد کشمیر کی تاریخ میں پہلی مرتبہ آزاد کشمیر کو ترقیاتی بجٹ کی تمام اقساط بروقت ملی ہیں۔

    اجلاس سے خطاب کے دوران وزیر اعظم آزاد کشمیر نے کہا کہ وفاق کی طرف سے آزاد کشمیر کو ترقیاتی بجٹ بروقت مہیا کیا گیا۔ اس بجٹ کا درست اور بروقت استعمال محکموں کی ذمہ داری ہے اس حوالے سے کسی قسم کی غفلت یا کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی۔ وزیر اعظم نے تمام محکمہ جات کو ہدایت کی کہ وہ سرکاری اشیاء کی خریداری میں معیار کا خاص خیال رکھیں۔ اشیاء کی خریداری میں بھی معیار کو ملحوظ خاطر رکھا جائے۔

  • مقبوضہ کشمیر میں بھارتی پولیس نےمحمد یاسین ملک کو گرفتار کر لیا

    سرینگر ۔ ( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو ) مقبوضہ کشمیر میں بھارتی پولیس نے جموںوکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک کو سرینگر میں گرفتار کر لیا۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق محمد یاسین ملک کو سرینگر کے علاقے حیدرپورہ میں کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی کی رہائش گاہ پر مشترکہ حریت قیادت کے ایک اجلاس میں شرکت کے بعد واپس اپنے گھر جاتے ہوئے گرفتار کیا گیا۔ یاد رہے کہ سید علی گیلانی ، میر واعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک پر مشتمل مشترکہ حریت قیادت نے نہتے فلسطینیوں پر اسرائیلی جارحیت کے خلاف کل نما ز جمعہ کے بعد مقبوضہ علاقے میں احتجاجی مظاہروں کی کال دی ہے ۔

  • مقبوضہ کشمیر کی انتہائی سنگین صورتحال پر عالمی برادری کا خاموش تماشائی بنے رہنا انتہائی افسوسناک ہے,سردار مسعود خان

    اسلام آباد( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو ) صدر آزادجموں وکشمیر سردار مسعود خان نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر کی صورتحال انتہائی سنگین ہو چکی ہے جہاں پر قتل و غارت گری، ظلم و جبر اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں عروج پر ہیں لیکن اس کے باوجود بین الاقوامی مقتدر حلقوں ،عالمی برادری اور انسانی حقوق کی علمبردار تنظیموں کی جانب سے خاموش تماشائی بنے رہنا انتہائی افسوسناک ہے۔ان خیالات کا اظہار صدر آزادجموں وکشمیر نے بدھ کو سینئر وزیر حکومت چوہدری طارق فاروق سے ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔مقبوضہ کشمیر کے موجودہ ناگفتہ بہہ حالات پر بات کرتے ہوئے صدر آزاد جموں وکشمیرنے کہا کہ گزشتہ کئی دنوں سے بھارتی قابض افواج نے نام نہاد سکیورٹی و سرچ آپریشن کے نام پر معصوم و نہتے کشمیریوں کو دن دھاڑے شہید کرنے کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔بھارت سوچے سمجھے منصوبے کے تحت غلط بیانی کرتے ہوئے عالمی برادری کو یہ باور کروانے کی کوشش کر رہا ہے کہ وہ کشمیر میں دہشت گردوں کے خلاف ان آپریشنز کے تحت کارروائی کر رہا ہے حالانکہ حقیقت حال اس کے برعکس ہے اور بھارتی قابض افواج معصو م و غیر مسلح کشمیریوں کو اپنی دہشت گردی کا نشانہ بناتے ہوئے انہیں سر عام قتل کر رہی ہیں ۔ صدر آزاد کشمیر نے کہا کہ بھارت نے اپنے کرتوتوں پر پردہ ڈالنے کے لئے مقبوضہ کشمیر میں انٹر نیٹ اور دیگر ذرائع ابلاغ کی سروسز کو بند کر رکھا ہے تاکہ مظلوم کشمیریوں کی آہ وبکاہ عالمیدنیا تک نہ پہنچ سکے۔صدر آزاد جموں وکشمیر سردار مسعود خان نے کہا ہے کہ مظلوم و محکوم کشمیریوں کی آواز کو دنیا کے ایوانوں تک پہنچانا ہم سب کی بنیادی ذمہ داری ہے کیونکہ وہ مجبور و محصور ہیں جبکہ ہم آزاد اور خود مختار ہیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ یوں تو تارکین وطن کمیونٹی کشمیریوں کو حق خودارادیت دئیے جانے کے سلسلے میں اپنا بھر پور کردار ادا کر رہی ہے تاہم مقبوضہ کشمیر کی موجودہ خوفناک صورتحال کا تقاضا ہے کہ تارکین وطن اپنے اندر اتحاد پیدا کرتے ہوئے مزید فعال طریقے سے اپنے مظلوم کشمیر بہن بھائیوں کی آواز کو دنیا تک پہنچانے اور انہیں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق حق خودارادیت دئیے جانے کے لئے اپنے اثر ورسوخ کو بروئے کار لائیں ۔دونوں رہنمائوں نے بھارتی افواج کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں کشمیری نوجوانوں کی شہادت کی شدید مذمت کی اور عالمی برادری سے جموں وکشمیر کی تشویشناک صورتحال کا فوری نوٹس لینے اور اس کا سدباب کئے جانے کا مطالبہ کیا۔

  • ڈڈیال آزادکشمیرسے گجرانوالہ جانیوالی ہائی ایس گجرات میں حادثے کا شکار،4 مسافر جاں بحق، 8 شدید زخمی

    ڈڈیال آزادکشمیر ( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو )سےگجرانوالہ  جانیوالی ہائی ایس گجرات میں حادثے کا شکار،4 مسافر جاں بحق، 8 شدید زخمی۔ تفصیلات کے مطابق مسافر ہائی ایس نمبر

    LWC5721 جوکہ ڈڈیال آزادکشمیر سے مسافروں کو لے کر گجرانوالہ جارہی تھی کہ گجرات کے قریبی علاقہ دیوانہ میں تیز رفتاری کے باعث جی ٹی روڈ پر الٹ گئی اور سڑک کنارے کھڑی مال بردار ٹرک سے جا ٹکرائی حادثے میں چار مسافر جاں بحق جبکہ آٹھ زخمی ہوئے جنہیں ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔

  • مقبوضہ کشمیر میں جنگ بندی کی تجویز مسترد،آپریشن جاری رکھنے کا اعلان,بھارتی وزیر داخلہ

    نئی دہلی( ورلڈفاسٹ نیوزفاریو )  بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں جنگ بندی کی تجویز مسترد کرتے ہوئے آپریشن جاری رکھنے کا اعلان کر دیا، مقبوضہ کشمیر میں سرگرم آزادی تحریک کے عناصر سے کوئی نرمی نہیں برتی جائے گی۔۔بھارتی میڈیا کے مطابق بھارتی حکومت نے جنگ بندی کی تجویز کو

    یکسر مسترد کرتے ہوئے واضح کر دیا کہ کشمیر میں سرگرم جنگجوؤں سے کوئی نرمی نہیں برتی جائے گی۔بھارتیمرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ نے وزیر اعلیٰ کو بتایا کہ موجودہ صورتحال میں ایسا کوئی بھی فیصلہ لینا ٹھیک نہیں رہے گا جبکہ مرکزی وزیر دفاع نرملا سیتارمن نے دوٹوک الفاظ میں سیز فائر تجویز کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر میں ملی ٹنسی عسکریت پسندی کا خاتمہ کیے جانے تک جنگجو مخالف آپریشن جاری رہیں گے وزیر دفاع نرملاسیتارمن نے صحافیوں کیساتھ بات چیت کرتے ہوئے جنگ کی تجویز کو یکسر مسترد کرتے ہوئے واضح کیا کہ کشمیر میں فوج کی جانب سے ملی ٹنسی کا خاتمے کرنے کے لیے جاری عمل میں کوئی رکاوٹ نہیں ڈالی جائے گی انہوں نے کہا کہ فوج اور دیگر سیکورٹی ایجنسیاں جموں و کشمیر میں انتہاپسندی اور ملی ٹنسی کا خاتمے کرنے کے لیے کامیابی سے اپنی کارروائیاں انجام دے رہی ہیں کارروائیوں پر کوئی پابندی نہیں لگائی